خیرالدین اعظم

کہاں لے کر مجھے جائیگی اب یہ گردش دوراں نہ رہبر ھے، نہ رستہ ھے، نہ منزل کی نشانی ھے خیرالدین اعظم
Close