نازش ہما قاسمی

نازش ہما قاسمی

جمہوریت خطرے میں ہے

ہمیں برسوں پرانی  گنگا جمنی تہذیب کی حفاظت کرنی ہوگی، ججوں کے خدشات کو سمجھنا ہوگا، جمہوریت کی بقا کے لیے فرقہ پرستوں سے لوہا لینا ہوگا،تبھی ہم اپنے ملک میں جمہوریت کوبچاسکیں گے اوراس ملک کی صدیوں پرانی گنگاجمنی تہذیب کی حفاظت کرسکیں گے۔

مزید پڑھیں >>

وسیم رضوی: یہاں کی خاک سے انساں بنائے جاتے ہیں! 

شیعہ عالم دین مولانا کلب جواد نے درست تبصرہ کیا ہے کہ آخر جو شخص چاروں طرف سے کرپشن میں گھرا ہوا ہے، جس پر کرپشن کے بے شمار الزامات ہیں ، حکومت نے ایسے شخص کو بے لگام کیوں چھوڑ رکھا ہے؟ کیوں اس کے خلاف کاروائی نہیں ہوتی ہے؟ اب اگر اسے گرفتار نہیں کیا گیا تو ہم لکھنؤ کی سڑکوں پر آکر احتجاج کریں گے۔، مختار عباس نقوی اور ظفر سریش والا نے بھی وسیم رضوی کے بیان کی مذمت کی ہے، مرکزی اقلیتی وزیر مختار عباس نقوی نے تو اسے پاگل قرار دیتے ہوئے سوال کیا ہے کہ میں بھی مدرسے کا پڑھا ہوا ہوں کیا میں دہشت گرد ہوں ۔؟

مزید پڑھیں >>

دلتوں سے سبق لینے کی ضرورت! 

ہندوستان میں دو قومیں آزادی کے بعد سے زیادہ آزمائشوں میں مبتلا رہی ہیں، ہر جگہ ان کا استحصال کیا گیا انہیں اذیت دی گئی، انہیں دبایا گیا، ان کے حقوق پر ڈاکہ ڈالاگیا۔ ایک ’مسلمان ‘اور دوسرے ’دلت‘دلتوں پر مظالم کاسلسلہ تو برسہا برس سے جاری ہے۔ لیکن مودی حکومت کے تین سالہ دور اقتدار میں یہ دونوں قومیں کچھ زیادہ ہی پریشان حال رہیں۔ جہاں ایک طرف حکومتی سرپرستی میں گئو رکشک مسلمانوں کو ہلاک کر رہے ہیں، وہیں دلتوں کو بھی پریشان کیا ہے، ان کی عزت و آبرو سے کھلواڑ کیا ہے، انہیں بھی انسانی زمرے سے خارج کرتے ہوئے جانوروں جیسا سلوک کیاگیاہے۔

مزید پڑھیں >>

مسلم خواتین سے یہ کیسی ہمدردی ہے؟

یاد رکھیں ! اگر باطل علماء سے عوام کا رشتہ توڑنے میں کامیاب ہوگئے تو مزید ذلتیں ہماری منتظر رہیں گی اور ہم اس وقت چپ ہی رہیں گے، ہمارے اندر حالات کو موڑنے کی طاقت نہیں ہوگی۔ کیوں کہ ہمارے پاس نہ قائد ہوگا نا رہنما، اس لیے آپ ہم نادانستہ طور پر ایسی حرکتوں سے گریز کریں ، علماء میں لاکھ برائیاں صحیح پر اپنے گریبان میں جھانک کر دیکھنا ہم سے وہ ہزار گنا بہتر ہوں گے۔

مزید پڑھیں >>

مقابلہ تو دل ناتواں نے خوب کیا

گجرات الیکشن اپنے اختتام کو پہنچ گیا۔۔۔بی جے پی کی شرمناک جیت ہوئی اور کانگریس ہار کر بھی جیت گئی۔ بی جے پی ۱۸۲ سیٹوں میں سے ۹۹ سیٹوں پر سمٹ گئی اور راہل گاندھی ناٹ آئوٹ ۷۷ رہے، باقی سیٹیں دیگر پارٹیوں کو ملیں۔ اس الیکشن سے سیکولر پسند عوام کو بہت ساری امیدیں وابستہ تھیں، لوگوں کو ایگزٹ پول پر یقین نہیں تھا کہ بی جے پی جیت جائے گی اور چھٹی مرتبہ اپنی حکومت وہاں بنائیں گی، لوگ راہل گاندھی، ہاردک پٹیل اور جگنیش میوانی کی قیادت پر یقین کرتے ہوئے اسے بی جے پی کے پالے سے دور رکھناچاہتے تھے، لیکن ای وی ایم کی مہربانی، لیڈران کی اشتعال انگیزی، ایس پی بی ایس پی کا ایم آئی ایم والا رول اور دیگر اہم وجوہات نے الیکشن کو ہندو مسلم  بناکر بی جے پی کو کراری جیت سے ہمکنار کرایا۔

مزید پڑھیں >>

گجرات الیکشن: کیا بی جے پی پھر بازی مار لے گی؟ 

گجرات الیکشن کی جیت یہ ثابت کرے گی کہ ۲۰۱۹ میں ملک کی باگ و ڈور کس کے ہاتھ میں جانے والی ہے اگر بی جے پی کامیاب ہوجاتی ہے اور کانگریس ناکام تو یہ المیہ سے کم نہیں ہوگا لیکن اگر ناکامی کے بعد کانگریس تمام اپوزیشن کا اتحاد کرکے مخلص ہوکر جمہوریت کی بقا اور ظلم کی چکی میں پسنے والی ڈیجیٹل انڈیا کے غلام عوام کی دادرسی کے لیے مکمل طور پر اٹھ کر لڑے گی تو ہوسکتا ہے سابق وزیر اعظم ہند اٹل بہاری کی حکومت کے بعد دس سال تک کانگریس کی حکومت قائم ہوگئی تھی اسی طرح نریندر مودی کے پانچ سالہ دور اقتدار کے بعد کانگریس پھر آجائے۔

مزید پڑھیں >>

قدس کو مرکز ٹھہرایا فطرت کے بیماروں نے!

یاد رکھیں اقصی یہ صرف اہل فلسطین کا مسئلہ نہیں ہے بلکہ پوری دنیا میں بسنے والے ہرکلمہ گو مسلمان پر ضروری ہے کہ اقصیٰ کی حفاظت کیلئے سعی کرے، خصوصاً اہل عرب جو مکمل طور پر اسلامی ممالک کہلاتے ہیں ان کی ذمہ داری ہے کہ بحیثیت مسلم قائد ہونے کہ اہل فلسطین کو ظالموں کے شکنجہ سے بچائے اور اقصی کی حفاظت کی خاطر ایوبی کا عزم پیدا کر کے دنیائے ظلم و ستم پر حملہ آور ہو، بصورت دیگر وہ دن دور نہیں جب ہم اقصیٰ کا نام تو سنیں گے لیکن اقصیٰ کا نام ونشان ختم ہو چکا ہوگا اور اسکی جگہ ہیکل سلیمانی ہوگا اور اقصیٰ کے آنسوؤں کے سیلاب میں ہم تمام غرق ہو جائیں گے، اور گناہ گارہوں گے۔

مزید پڑھیں >>

لوجہاد کے نام پر فرقہ پرستی 

این آئی اے کو رپورٹ پیش کرنے کے احکامات جاری کیے جاتے ہیں ۔۔۔۔سلام اس مجاہدہ صفت بچی ہادیہ کو، خدا اسے استقامت دے اور دین پر قائم رکھے۔ اس نے اپنے ماں باپ، فرقہ پرست بھگوا اور یوگا تنظیمیوں کے ڈرانے دھمکانے کے باوجود بھی سپریم کورٹ میں ببانگ دہل اور علی الاعلان اسلام کی حقانیت کا اظہار کیا بھگوا طاقتوں کا اتحاد اس کے حوصلے کو توڑ نہیں سکا۔ وہ سینہ سپر ہوگئ حالات سے مقابلہ کرنے کے لیے ایڑی چوٹی کا زور صرف کردیا، جذبات و احساسات کے تلاطم خیز طوفان کے باوجود ہادیہ ثابت قدم ہے۔

مزید پڑھیں >>

رانی پدماوتی: آخر اتنا ہنگامہ کیوں؟

اگر کسی مسلم رہنما یا صحافی کی طرف سے اکثرہتی فرقے کی مقدس شخصیات کے بارے میں کہا گیا ہوتا تو ملک جل رہا ہوتا اقلیتوں کی املاک تباہ ہوچکی ہوتیں لیکن نہیں اتنا سب کچھ  ہونے کے باوجود بھی مسلمان خاموش پھر بھی مجرم مارے وہی جائیں جرم بھی ان کا عمر، اخلاق، جنید، پہلو خان کے اہل خانہ انصاف کو ترس رہے ہیں اپنے ہی ملک میں بے گانے ہیں لیکن ان کی دادرسی کرنے والا کوئی نہیں عدلیہ کی جانب ٹکٹکی باندھے دیکھ رہے ہیں شاید وہاں سے انصاف مل جائے لیکن حالیہ سہراب الدین معاملے سے یہ امید بھی ختم ہوتی جارہی ہے کہ کہیں منصف ججوں کو بھی ان کے پیشرو کی طرح کاشوں کے سودا گر موت کی نیند نہ سلادے۔

مزید پڑھیں >>

رام مندر کا حربہ اور بی جے پی

روی شنکر کا یہ کہنا کہ بابری مسجد تنازعہ کے حل کے لیے ہم نے بورڈ کے ممبران سے بھی گفت و شنید کی ہے اور پھر امام بخاری کا بورڈ کی خاموشی پر سوال اٹھانا یہ سب اس بات کی طرف اشارہ کرتا ہے کہ ہندوستانی مسلمان عنقریب کسی بڑی سازش کے شکار ہونے والے ہیں، مسلمانوں کو بابری مسجد قضیے میں الجھاکر کوئی ایسی پالیسی تیار کرلی جائے گی جس کا انہیں وہم و گمان بھی نہیں ہوگا۔۔!

مزید پڑھیں >>