کھڑکیاں

کھڑکیاں کھلی چھوڑ کر تم مجھ  پہ  یہ ظلم  نہ کرو اب تم سےبس یہی التجا ہے کہ پردہ گرا کر  رکھنا