راحت علی صدیقی قاسمی

راحت علی صدیقی قاسمی

جب ضمیر بیدار ہو

اگر تحقیقات میں یہ دعاوی درست پائے جاتے ہیں ، تو یہ بہت بڑا المیہ ہے، جو ملک کے وقار کو مجروح کرتا ہے، عدلیہ کی حرمت کو پامال کرتا ہے، لوگوں کے بھروسے کو زخمی کرتا ہے، انصاف پانے کی خواہش کو چکنا چور کرتا ہے، سب سے بڑا سوال یہ ہے کہ اس معاملہ کے سامنے آتے ہی وزیر اعظم نریندر مودی کے سکریٹری چیف جسٹس سے ملاقات کے لئے پہنچے، البتہ ملاقات نہیں ہو سکی اور سوال کئے جانے پر انہوں نے نئے سال کی مبارک باد دینے کی بات کہی، یہ کیفیت سوالات کو جنم دیتی ہے۔ 12دن بعد نئے سال کی مبارک باد چہ معنی دارد؟ کیا تعلق ہے وزیر اعظم اور چیف جسٹس کا؟

مزید پڑھیں >>

انور جلال پوری: روشنائی کاسفیر!

جن لوگوں نے انہیں دیکھا ان کی تقریریں سنیں وہ ان جملوں کی تائید کریں گے، البتہ ان کی تقریر کا جو انداز اور تائثر تھا اسے پورے طور سمجھانے کے لئے دامنِ الفاظ تنگ ہے، جن لوگوں نے سنا ہوگا، وہ یقیناً جانتے ہیں، کئی مرتبہ مشاہدہ ہوا، مشاعرہ کی فضا بگڑ رہی ہے، سامعین ہوش کھو بیٹھے ہیں، قوی احساس ہورہا ہیکہ مشاعرہ منزل مقصود حاصل نہیں کرپائیگا، نظام درہم برہم ہوجائیگا، انتظامیہ کو لاٹھیاں اٹھانے کی ضرورت محسوس ہورہی ہے، فوراً انور جلال پوری کھڑے ہوئے، اور سامعین کو ساکت و جامد کردیا، زبان سے ہوتا لفظوں کا وار اس ہیجان انگیز کیفیت کو شکست فاش دے دیتا،

مزید پڑھیں >>

مسیحا ہڑتال پر

 عالم آب و گل میں سینکڑوں ایسے واقعات ہیں جہاں دلتوں کے حقوق پامال ہوئے، انہیں چتا کے لئے دو گز زمین میسر نہ ہوسکی، لیکن آپ کو ایسا کوئی طبیب نظر نہیں آئے گا جس نے علاج کرنے سے یہ کہہ کر انکار کر دیا ہو کہ مریض اچھوت ہے میں علاج نہیں کروںگا۔ ہر شخص کا علاج کیا، ان خوبیوں کے حامل پیشے اور پیشہ وروں کی عزت ہونا یقینی ہے، لیکن وقت کے بدلاؤ نے اس عظیم پیشہ سے وابستہ افراد کے طرز زندگی کو بھی متاثر کردیا ہے، ان کے اعمال میں بھی تبدیلی ہوچکی ہے، واقعات اس کی شہادت دیتے ہیں، زندہ بچے کو کچرے کے ڈبہ میں پھینک دینا، حاملہ عورتوں کے پیٹ چاک کرنا، بلا ضرورت جانچ کرانا، گراں قیمت پر دوائیں بیچنا، لیباریٹری سے اپنا حصہ مانگنا،دواؤں پر کمیشن وصول کرنا، یہ سارے اعمال اطباء میں آئی تبدیلی اور بگاڑ کا مظہر ہیں۔

مزید پڑھیں >>

جمہوریت کا مستقبل

یہ پہلو بھی غور کرنے کا ہے، کہیں ایسا نہ ہو، جمہوریت کا جسم باقی رہے اس میں روح نہ ہو، اس کا لاشہ سڑ جائے، ملک قبائلی نظام سے بھی بدتر صورت حال کا مشاہدہ کرے، اس کے علاوہ ملک کے ہر شہری کو غور کرنا چاہیے کہ وہ نفرت کے کڑوے زہر کو خوشی خوشی کیوں پی رہا ہے؟ بے بنیاد باتوں پر کیوں یقین کررہا ہے؟

مزید پڑھیں >>

سید محمد ازہر شاہ قیصرؒ

مولانا نسیم اختر شاہ قیصر علم و کمال تحریر میں بڑے شاہ جی کا عکس محسوس ہوتے ہیں،  ان اوصاف کی حامل شخصیت کے یوم وفات نے قلب میں ان کی یادوں کو تازہ کردیا، آنکھوں کو نم اور قلب کو متحرک کیا، اس کے نتیجہ میں چند جملے ضبط تحریر میں آئے، ان کی شخصیت کے تعارف اور کمالات کے احاطے کے لئے بہت سے صفحات درکار ہیں۔

مزید پڑھیں >>

راہل گاندھی کی صدارت دو دھاری تلوار

4؍دسمبر کو ان کی صدارت کا اعلان ہونا تقریباً طے مانا جارہا ہے، گجرات اسمبلی انتخابات میں ان کی صدارت جان ڈال سکتی ہے، وہ کارکنان میں جوش بھر سکتے ہیں، کانگریس کی ڈوبتی کشتی کے کھویا ثابت ہوسکتے ہیں، ایسے دعوی کئے جارہے ہیں، قصیدہ خوانی کا دور شروع ہو چکا ہے، حالانکہ ذہن میں چند سوالات ہیں، جو راہل کی قائدانہ صلاحیتوں کو مشکوک کرتے ہیں ۔

مزید پڑھیں >>

شعبۂ اردو، سی سی ایس یو کے ٹاپر کو گورنر اتر پردیش کے ہاتھوں گولڈ میڈل

چو دھری چرن سنگھ یونیورسٹی، میرٹھ کے29ویں کنووکیشن کا انعقاد نیتا جی سبھاش چندر بوس آڈیٹوریم میں ہوا۔ جس کی صدارت اتر پردیش گورنر محترم رام نائک نے کی اور مہمان خصوصی کے طور پر جے این یو کے شیخ الجامعہ محترم جگدیش کمار نے شر کت کی۔ اس مو قع پر عزت مآب گورنر نے شعبہ اردو کے دو طالب علم یونیورسٹی کے ایم فل 2016-17ء کے ٹا پر وصی حیدر کو سابق صدر جمہوریہ ڈاکٹر شنکر دیال شرما کے نام سے جاری ڈاکٹر شنکر دیال شرما ایواڈ سے نوازا گیا۔

مزید پڑھیں >>

خانوادۂ قاسمی کی روایتوں کا امین: حضرت مولانا اسلم قاسمی

آپ کی جدائی نے خانوادہ قاسمی ہی نہیں پورے ہندوستان کو سوگوار کیا ہے، کل جس کی تقریر سے سکون پاتے تھے، سالوں جن کی تقریرسنیں، مسکراتے دیکھا، مجلسوں کی زینت دوبالا کرتے دیکھا، ان کے درس کے تذکروں سے زبان تھکتی نہیں تھی، آج ان پر اپنے ہاتھوں سے مٹی ڈالنا یقیناباعث تکلیف ہے، ان کی جدائی عرصہ تک علمی دنیا محسوس کی جاتی رہے گی، مگر نظام خداوندی کا انسان پابند ہے اور خدا نے اعلان کر دیا ہے، مدت متعینہ کے بعد تاخیر نہیں ہوتی۔

مزید پڑھیں >>

حضرت ابو ذر غفاریؒ

  قبیلہ غفار کا بانکا، سجیلا، بہادر نوجوان رملہ بنت ربیعہ کا لعل اس کا اسم گرامی جندب ہے۔ کنیت ابوذر۔ قبیلہ غفار کا باشندہ، آسمان شہرت پر ابوذر ہی نقش ہے، جس کے رگ و پے میں شجاعت و بہادری دلیری و چستی پیوست ہے، چاق و چوبند ہے۔ قبیلے کی روایتوں کا پاس دار ہے بزرگوں کے طرز عمل کا پیرو ہے، قوم کی خوشی کا باعث ہے۔ قبیلہ کے ہر فرد بشر کی آنکھ کا تارا ہے۔ ہر شخص اس کی بہادری کی داد دیتا ہے۔

مزید پڑھیں >>

کیا انکاؤنٹر جرائم کو ختم کرنے کا طریقہ ہے؟

پیلی بھیت میں 10 سکھوں کا انکاؤنٹر اور47 سپاہیوں کو اس میں سزا ہونا، اس طرح کے اور بھی واقعات اس روئے زمین پر ہوئے یا اس سے بھی بڑھ کر جہاں پولیس والوں نے اپنے ہی ساتھی کو مار ڈالا اور اسے انکاؤنٹر ثابت کرنے میں چند معصوموں کو ابدی نیند سلا دیا، اس صورت حال میں کیا پولیس والوں کو انکاؤنٹر کرنے اور کسی شخص کو سزائے موت دینے کا حق ہونا چاہئے یا نہیں ؟ آپ غور کیجئے آپ کا ذہن جواب یقیناً پیش کرے گا، کیا ہر انکاؤنٹر کی جانچ ہونی چاہئے؟ اترپردیش میں ہوئے 420انکاؤٹر چونکاتے ہیں یا نہیں ؟

مزید پڑھیں >>