مفتی محمد صادق حسین قاسمی

مفتی محمد صادق حسین قاسمی

غریبِ شہر تو فاقے سے مرگیا

ہم کم از کم اپنی دعوتوں میں بچا ہوا کھانا ضائع کرنے کے بجائے غریبوں میں تقسیم کریں، اپنے گھر میں بچاکر سڑادینے یا نالیوں میں پھینک دینے کے بجائے غریبوں تک پہنچائیں، اس کی وجہ سے جہاں ہماراکھاناضائع نہیں ہوگا، ہمیں ثواب ملے گا وہیں کتنے گھروں میں کچھ راحت آئے گی،فاقہ زدہ چہرہ پر زندگی کی بہارآئے گی اوربھوک مٹے گی، بالخصوص ایسے گھروں کو تلاش کریں جہاں مرد نہ ہو اور بیوہ عورت اپنے بچوں کی پرورش کرنے میں لگی ہو،یا ایسے معذور مرد جو کام کاج سے بالکل محروم ہوں تو یقینا اس سے عظیم خدمت بھی انجام پائے گی،

مزید پڑھیں >>

مفکر ملت عبدالرحیم قریشی ؒ

    بورڈ کے موجودہ ترجمان حضرت مولانا خلیل الرحمن سجادنعمانی لکھتے ہیں :محترم قریشی صاحب عمائدین حیدرآباد کی اس نسل سے رکھتے تھے جو دینی وعصری علوم کی جامع ہوا کرتی تھی، وہ ایڈوکیٹ بھی تھے اور ملی حمیت اورسیاسی شعور بھی بھرپوررکھتے تھے اور انہی گوناگوں صفات اور متنوع قسم کی صلاحیتوں کی وجہ سے وہ بورڈ کے انتہائی اہم ستون شمارکئے جاتے تھے، پیرانہ سالی، اورمختلف امراض وعوارض میں مبتلاہونے کے باوجود سخت محنت کے ساتھ اپنی ذمہ داریاں اداکرتے تھے۔

مزید پڑھیں >>

مت جوڑو آتنک واد کا نام مدرسوں سے!

   ملک کے جو حالات چل رہے ہیں، ان سے ہر باخبر شہری اور بالخصوص مسلمان واقف ہے، کس طرح منصوبہ بندی کے ساتھ اسلام اور مسلمانوں کے خلاف سازش کی جارہی ہے وہ ہر ایک پر عیاں ہے۔ شریعت میں مداخلت اور اسلامی تعلیمات پر نکتہ چینی وانگشت نمائی کے موقعے تلاش کئے جارہے ہیں، مسلم پرسنل لامیں دخل دینے کی کوشش کی جارہی ہے، فتوی کو لے کرمنفی تبصرہ کے ذریعہ ایک ہنگامہ برپاکیا جارہا ہے، اوراسلامی احکام کو توڑمروڑکرپیش کیاجارہا ہے، طلاق ِ ثلاثہ کوبہانہ بناکر باضابطہ شرعی احکام وتعلیمات پر قد غن لگانے کی فکر کی جارہی ہے۔ کمزورطبقات کے ساتھ ظلم وزیادتی ہورہی ہے اور مسلمانوں کو ہراساں کرنے اورملک ووطن کے امن وسکون کو ختم کرنے کے لئے شرپسندعناصراورفرقہ پرست طاقتیں پوری کوششوں میں لگی ہوئی ہیں۔

مزید پڑھیں >>

ملک میں بڑھتی ہوئی شرپسندی ایک لمحۂ فکریہ

    ہماراملک جہاں بہت سارے مسائل درپیش ہیں، بے روزگاری،مہنگائی نے پریشان کر رکھا ہے، اورملک کے باشندوں کی بہت ساری ضرورتیں حل طلب ہیں،ان تمام کو پس ِ پشت ڈال کر ایک خاص ماحول کوپروان چڑھانے اور ایک مخصوص نظریہ اور سوچ کی ترویج واشاعت میں فرقہ پرست تنظیمیں لگی ہوئی ہیں۔ملک کی ترقی اور کامیابی کے لئے ضروری ہے کہ اس کے شہریوں کو امن وسکون فراہم کیا جائے،مسائل ومشکلات کو دورکرنے کی کوشش وفکر کی جائے، ملک کی نیک نامی اور بین الاقوامی شہرت وپذیرائی کے لئے ملک کو پرامن بنانااور ایک کو تحفظ فراہم کرنا ضروری ہے ورنہ ملک بھی بدنام ہوگا،لوگ بھی پریشان رہیں گے اور ہر طرح کا امن وسکون غارت ہوگا،ایک دوسرے کے خلاف غیض وغضب کی چنگاریاں بھڑکتے رہیں گی۔

مزید پڑھیں >>

سالِ نو کی آمد: خوشی ومسرت کی نہیں احتساب کی ضرورت

ضرورت ہے اس بات کی کہ سال ِ نو کا آغاز غیر شرعی طریقہ پر کرنے سے گریز کیا  جائے،اور اس موقع پر جو خلاف ِ شریعت کا م انجام دئے جا تے ہیں،اور فضول و لا یعنی امور اختیا ر کئے جا تے، جو نا شا ئستگی اور بد اخلاقی کے مظاہرے ہو تے ہیں، عیسائیوں کے طریقہ کے مطابق جو نیو ائیر کا استقبال کیا جا تا ہے،کیک کاٹ کر اور مبارک بادیا ں دے کر جو اپنی تہذیب کا مذاق اڑایا جا تا ہے اسی طرح شور و شغب اور خدا کے غضب کو دعوت دینے والی جو حرکتیں کی جا تی ہیں،ان تمام چیزوں سے مکمل اجتناب، اور اپنے نو نہانوں کو ان تمام سے روکا جا ئے، اسلامی تعلیمات سے اپنی اولادکو آگاہ کریں،اور اسلامی سالِ نو کا تعارف،اور ماہ وسال کی یہ انقلاب انگیز تبدیلی سے حاصل ہو نے پیغامات سے واقف کر ائیں،ورنہ ہماری آنے والی نسلیں دین کی تعلیمات سے بے بہرہ ہو کر، عیسائی تہذیب و کلچر کی دلدادہ بن کر، اور مغربی طریقہ ٔ زندگی ہی میں کامیابی تصور کر کے پروان چڑھے گی۔

مزید پڑھیں >>

سر زمینِ ’القدس‘ کی صدا

جب سے امریکی صدرٹرمپ نے ’’القدس‘‘ یعنی بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت قراردیا ہے پوری دنیا میں غم وغصہ کی لہر جاری ہے، ٹرمپ کے اس فیصلے سے جہاں بین الاقوامی اصول کی خلاف ورزی ہوئی ہے، ظالمانہ وجابرانہ اختیار کا استعمال کرکے امن پسند دنیا میں نفرت کی فضاقائم ہوئی، وہیں عالمِ اسلام کے مسلمانوں کے دلوں کے تار کو چھیڑدیاہے اور مسلمانانِ عالم کو بے چین وبے قرارکردیا ہے، بیت المقدس کی محبت کی دبی ہوئی چنگاریوں کو بھڑکادیا ہے۔ٹرمپ اسلام دشمنی اور مسلمانوں کے خلاف زہر اگلنے میں ویسے تو مشہور ہے، جن کے بہت سے فیصلے خود ان کے لئے ذلت ورسوائی کاذریعہ بنے ہیں۔

مزید پڑھیں >>

شیخ الہند مولانا محمود حسن ؒ:ایک عہد سازاور انقلابی شخصیت

  حضرت شیخ الہند ؒکو یہ اعزاز حاصل ہے کہ آپ عالمی شہرت یافتہ اورعظیم دینی درسگاہ دارالعلوم دیوبند کے پہلے طالب ِ علم ہیں۔ چناں چہ 15محرم 1283ھ مطابق30مئی 1866ء بروز پنجشنبہ، چھتے کی قدیم مسجد کے کھلے صحن میں انار کے ایک چھوٹے سے درخت کے سائے میں نہایت سادگی کے ساتھ کسی رسمی تقریب یانمائش کے بغیر دارالعلوم کا افتتاح عمل میں آیا۔

مزید پڑھیں >>

یہ بھی ایذا رسانی ہے!

بلاشبہ یہ بھی ایک دینی تقاضا ہے کہ آپ ﷺکے پیغام کواور آپﷺ کے مقصدِ بعثت کو دنیاتک پہونچا یا جا ئے اور مختلف جلسوں اور اجتماعات کے ذریعہ اس کو عام کیا جائے لیکن اس کے لئے طریقہ بھی وہی ہو نا ضروری ہے جس سے آپﷺکی تعلیمات پر کسی قسم کی بھی زد نہ پڑے اور ہمارے کام غیر وں کو اسلام سے بد ظن کرنے سبب نہ ہو۔ اس کے لئے مناسب ہے کہ مساجد میں یا پھر وسیع ہالوں میں اس کا انتظام کیاجائے اس میں ایک پہلو یہ بھی ہوگا اس سے ہمارے سیرت کے جلسوں کی بے توقیری بھی نہیں ہوگی، اور موضوع کی شان کا پاس و لحاظ بھی ہوگا۔     

مزید پڑھیں >>

حضرت مولانا محمد اسلم صاحب قاسمی ؒ کی رحلت

    حضرت مولانا ؒ کی علالت اور بیماری کی خبریں وقتا فوقتاسننے اور پڑھنے کو ملتی تھی اور حسب ِ توفیق دعائے صحت کا اہتمام بھی کیا جاتا رہا لیکن انتقال پُرملال کی خبر صاعقہ اثرنے ایک عظیم شخصیت سے محرومی کے احساس سے مغموم کردیا ہے بلکہ علم سے رشتہ رکھنے والا ہر انسان اس عظیم المرتبت شخصیت کے سانحہ ٔ ارتحال سے رنجیدہ ہے، مدتوں بعد ایسے لوگ پیدا ہوتے ہیں اوریادگار نقوش صفحہ ٔ ہستی پر ثبت کر جاتے ہیں۔

مزید پڑھیں >>

حیات ِ ٹیپو سلطان شہیدؒ کے تابندہ نقوش

    ٹیپو بچپن سے بڑے ذہین اور تیز دماغ والے تھے ،آپ کے والد حیدر علی نے اپنی خصوصی نگرانی میں ماہر اساتذہ کے ذریعہ آپ کو تعلیم دلوائی اور تربیت کا خاص انتظام فرما۔تقریبا 5سال کی عمرسے19تک ٹیپو نے مختلف علوم وفنون سیکھے۔زمانہ کے لحاظ سے شہسواری ،تیر اندازی ،سپہ گری کی تربیت بھی دی گئی۔

مزید پڑھیں >>