صحتہندوستان

یہ 60 اموات سوال ہیں، پر کہاں پوچھیں یہ سوال؟

تحریر: دیپکا شرما۔ ترجمہ: محمد اسعد فلاحی

گورکھپور کے ہسپتال میں 30 بچوں کی موت کے واقعہ پر چاروں اور غصہ ہے. اس واقعہ نے اچانک مجھے ممبئی کے كے ایم ہسپتال کا وہ واقعہ یاد دلایا، جہاں ایک بچے کی موت ہونے پر پورے ہسپتال میں ہنگامہ پیدا ہو گیا تھا. چھٹیوں کے سیزن میں جب ایک خاندان اپنے بیمار بچے کو لے کر ہسپتال پہنچا تو رات میں آئے اس ‘ایمرجنسی کیس’ کو اسپتال میں موجود رہائش ڈاکٹروں نے ویسے ہی ٹریٹ کیا جیسے رات کے ‘ایمرجنسی کیس’ ہینڈل کئے جاتے ہیں . صبح تک اس بچے کی موت ہو گئی. مشتعل اہل خانہ نے ان ڈیوٹی ڈاکٹر اور عملے کی پٹائی کر دی. ایسے میں ہسپتال کے ڈاکٹروں نے صبح سے ہی اپنی غیر معینہ ہڑتال کا اعلان کر دیا. صبح ہم صحافیوں کی برادری کا ہر جاندار وہاں پہنچ چکا تھا اور ہر کوئی واقعہ کے سچایی کی اپنی چھان بین کر رہا تھا.

اس ایونٹ میں ہر کسی کا اپنا سچ تھا. جیسے رشتہ داروں کو .. کہ انہیں صحیح علاج نہیں ملا. ڈاکٹروں کا .. کہ وہ ہسپتال میں محفوظ نہیں ہیں . اور ایک حقیقی ان مریضوں کا بھی تھا جو اس واقعہ کے بعد ہوئی ہڑتال میں اب ہسپتالوں کی اس افراتفری کے بھاجن بننے لگے ہیں. اس ایونٹ کو پڑھتے ہوئے اگر آپ ممبئی کو بھول جائیں اور اس واقعے میں اپنے شہر کے ہسپتال کی تصویر فٹ کریں تو سرکاری اسپتالوں کی حالت تقریبا ہر ریاست، ضلع، یا تحصیل میں ایسی ہی ہے. جی ہاں ، دیہات کی بات اس لئے نہیں کر رہی، کیونکہ وہاں تک تو ابھی ہسپتال ہی نہیں پہنچے.

نومبر 2014 میں چھتیس گڑھ میں بلاسپور کے سرکاری نسبندی کیمپ میں 137 خواتین کا آپریشن ہوا. اس میں 13 خواتین سمیت 18 لوگوں کی موت ہو گئی تھی. چند سال پہلے کولکتہ کے بی سی رائے بچوں کے ہسپتال میں 5 دن میں 35 بچوں کی موت کی خبر سامنے آئی. مہاراشٹر کا میلگھاٹ تو غذائی قلت سے جوجھتے بچوں اور ماؤں کی موت کا گڑھ بن چکا ہے. ملک کے تقریبا ہر حصے سے ایسی ہی واقعات گاہے بگاہے ہوتے رہتے ہیں اور ان پر ہم صرف غم کا اظہار کرتے رہے ہیں .

بی آر ڈی میڈیکل کالج میں جان گنوانے والے بچوں میں زیادہ تر انسیفیلاٹس (جاپانی بخار) میں مبتلا تھے. انسیفیلاٹس سے پوروانچل میں ہر سال 100 سے زیادہ بچوں کی موت ہوتی ہے. یعنی یہ اموات کم از کم اس علاقے کے لئے تو ‘بریکنگ نیوز’ نہیں ہے. اس بیماری کی زد میں 1 سے 14 سال اور 65 سال سے اوپر کی عمر کے لوگ زد میں آتے ہیں اور یہاں غور کرنے والی بات یہ ہے کہ اس بیماری کا كوپ بھاجن بننے والی سب سے بڑی آبادی (1 سے 14 سال کے بچے) ووٹر نہیں ہے، لہذا کسی بھی انتخابات میں ان کا مرنا ‘انتخابی ایشو’ نہیں بن پاتا. ‘جاپانی بخار’ کا سب سے زیادہ پھیلنا اس علاقے میں اگست، ستمبر اور اکتوبر مہینوں میں ہی ہوتا ہے.

گورکھپور کے ہسپتالوں میں آکسیجن کی کمی کی وجہ سے 5 دن میں ہوئی 60 بچوں کی موت کا واقعہ پر ملک كھول اٹھا ہے. ہر کوئی حکومت سے سوال پوچھنا چاہتا ہے. اس لچر نظام میں مکمل تبدیلی چاہتا ہے. سوالات، الزام، غصے اور جذبات کے درمیان اصلیت یہ ہے کہ ان بچوں کی موت میں میرا، آپ کا، ہم سب کا ہاتھ ہے. ہم نے اپنے آپ سے، ایک دوسرے سے سوال پوچھنے کے سب سے اہم حق کو چھین لیا ہے. کبھی ‘گائے’، تو کبھی ‘روادار-عدم برداشت’ کی بحث تو کبھی پاکستان سے جنگ کرنے کی تیاری میں ہم اتنے مصروف ہو گئے ہیں کہ ملک میں ضروری اور بنیادی سوالات کی جگہ صرف حاشیہ پر بچی ہے.

ہم سب ‘چلنے والی خبر’ اور تم سب ‘پڑھنے والی خبر’ کے اس مارکیٹ میں ایسے پھنستے جا رہے ہیں کہ حقیقی سوالات کے لئے کسی کے پاس کوئی جگہ نہیں بچی ہے. اب یہ کیا جا سکتا ہے کہ ایک طرف آکسیجن کی اس کمی کے لئے موجودہ مرکزی حکومت یا ریاستی حکومت کو کوس لیں ، اور اگر آپ اس کلاس کا حصہ ہیں ، جو حکومت کی تنقید کو ہی ‘غداری’ کے زمرے میں رکھتا ہے، تو ایسے میں ‘سوشل ميڈياي خاموشی’ اختیار کر لینا بہت اچھا ہے. لیکن انتظامات کے درمیان آکسیجن کی کمی صرف گورکھپور میں نہیں ہے، ملک کے ہر محکمے میں ہے اور عام لوگ اس آکسیجن کی کمی سے ہر روز تڑپ رہے ہیں … بس مر نہیں رہے. کیونکہ مرنے کے لئے تو ہم جنگ کرتے ہیں .

اب اس واقعہ کے بعد جانچ کمیٹی بیٹھے گی، کچھ ڈاکٹر معطل ہوں گے، کچھ وزراء کو پھٹکار لگے گی اور ایسے ہی ‘ضروری کارروائی’ کو انجام دے دیا جائے گا. لیکن پھر کچھ گھنٹوں بعد ہم #Sarahah، ‘ڈھنچیك پوجا’، ‘بلیو وہیل’، ‘پوكیمون’، ‘پاکستان’، ‘چین’ جیسے ‘قومی مسائل’ میں بزی ہو جائیں گے اور بھول جائیں گے کہ مر گئے کچھ بچے، جنہوں نے ابھی تک کوئی سوال نہیں  کیے، وہ بھی دفن ہو جائیں گے. سارے سوال بھی انہی کے ساتھ دفن ہو جائیں گے، جیسے اس سے پہلے ہوئے ہیں ہر بار … شاید بار بار.

مزید دکھائیں

محمد اسعد فلاحی

معاون تصنیفی اکیڈمی، مرکز جماعت اسلامی ہند

متعلقہ

Close