تاریخ اسلامتاریخ ہندسائنس و ٹکنالوجی

کیا مغلیہ سلطنت اور سلطنت عثمانیہ کے دوران مسلم دنیا میں کوئی سائنسی ترقی نہیں ہوئی؟

مغل اور عثمانی سلطنت میں بے مثال آسمانی کرہ یا Celestial globe، شیمپو، پہلے سٹیم انجن، لغاری حسن چلبی کی طرف سے پہلی راکٹ پرواز کی ایجاد اور دنیا کے پہلے سرجری اٹلس اور دنیا کی قدیم ترین ایئر فورس میں سے ایک کا قیام.

ڈاکٹر احید حسن

1600ء کے بعد اسلامی دنیا میں سائنس اور ٹیکنالوجی میں ترقی کی شرح سست رہی لیکن یہ عرصہ ایسا نہ تھا کہ جس میں کوئی چیز ایجاد نہ کی گئ ہو بلکہ کچھ قابل قدر چیزیں اس دور میں بھی ایجاد کی گئیں۔

افغانوں اور مغلوں کے دور میں ہندوستان نے صنعت وحرفت میں بہت زیادہ ترقی کی۔ ابنِ بطوطہ اپنے سفرنامہ میں لکھتا تھا کہ ’’صلیبی جنگوں کے زمانہ سے ہندوستان کی تجارت وینس اور جینوا کی راہ سے یورپ کے ملکوں سے ہورہی ہے۔ ہندوستان کے لوگ خوشحال ہیں۔‘‘ محمد تغلق نے دہلی میں سوتی کپڑے کا ایک کارخانہ قائم کیا تھاجس میں پانچ ہزار کا ریگر کام کرتے تھے۔ مار کوپولو ہمیں بتاتا ہے کہ ’’راس امید اور شنگھائی کی تمام درمیانی بندرگاہوں میں ہندوستان کا بنا ہوا کپڑا افراط سے فروخت ہوتا ہے۔‘‘ مہذب دنیا میں ڈھاکہ اور مرشد آباد کی ململ کا استعمال عظمت اور برتری کا ثبوت تھا۔ یورپ کے ہر ملک میں ان دوشہروں کی ململ اور چکن بہت زیادہ مقبول تھی۔ ہندوستان سے سوتی اور اُونی کپڑے شال دوشالے ،ململیں اور چھینٹیں برآمد کی جاتی تھیں۔ ریشم ،کمخواب اور زربفت کے لئے احمد آباد دنیا بھر میں مشہور تھا۔ اٹھارھویں صدی میں ہندوستانی کپڑوں کی انگلستان میں اتنی مانگ ہو گئی تھی کہ اسے بند کرنے کے لئے حکومت کو بھاری ٹیکس لگانے پڑے تھے۔ پارچہ بانی کے علاوہ لوہے کے کام میں بھی ہندوستان بہت زیادہ ترقی کر چکا تھا۔ لوہے سے تیار شدہ اشیا ہندوستان سے باہر بھی بھیجی جاتی تھیں۔ اورنگ زیب کے عہد میں ملتان میں جہازوں کے لئے لوہے کے لنگر ڈھالے جاتے تھے۔ جہاز سازی میں بنگال نے بہت ترقی کرلی تھی۔ ٭…٭…٭

حالانکہ نظریاتی فلکیات یعنی Theoretical astronomy  کے لئے کم توجہ کم رہی، مغل شہنشاہوں نے مشاہداتی فلکیات یا Observational astronomy میں پیش رفت کی اور تقریبا سو کے قریب فلکیاتی زیج کے مسودے مرتب کیے۔ ہمایون نے دہلی کے قریب فلکیاتی مشاہدات کے لیے ایک ذاتی رصدگاہ بنائی ,جہانگیر اور شاہ جہان بھی رصد گاہوں کی تعمیر کا ارادہ رکھتے تھے لیکن ایسا کرنے سے قاصر رہے.  ,مغل فلکیاتی مشاہدات میں استعمال ہونے والے فلکیاتی آلات اور مشاہداتی تراکیب بنیادی طور پر اسلامی فلکیات سے حاصل کی گئی تھیں. 17 ویں صدی میں، مغل سلطنت نے اسلامی اور ہندی فلکیات کے  درمیان ایک اشتراک دیکھا، جہاں اسلامی مشاہداتی آلات ہندی شماریاتی تراکیب یا Computational techniques کے ساتھ مل رہے تھے.

مغل سلطنت کے زوال کے دوران، امبر کے ہندو بادشاہ جے سنگھ دوم نے مغل فلکیات کا کام جاری رکھا.  ,18 ویں صدی کے آغاز میں  انہوں نے الغ بیگ کے سمرقند کے فلکیاتی مشاہدات کے مقابلہ کے لئے کئ بڑی رصد گاہیں تعمیر کیں جن کو یانترا مندیر کا نام دیا گیا تاکہ سدھانتا اور اسلامی زیج سلطانی کے مشاہدات کو بہتر بنایا جا سکے،  اور صدیوں میں ابتدائی ہندو موافقت اور زیج سلطانی کے اسلامی مشاہدوں کو بہتر بنانے کے لئے. اس کے استعمال شدہ  آلات  اسلامی فلکیات سے متاثر تھے، جبکہ کمپیوٹنگ کی تکنیکوں کو ہندی فلکیات سے اخذ کیا گیا تھا.

شیخ دین محمد نے مغل کیمیا یعنی کیمسٹری کے بارے میں بہت کچھ سیکھا اور شیمپو پیدا کرنے کے لئے مختلف الکلیوں اور صابن پیدا کرنے کے لئے استعمال ہونے والی تکنیکوں کو سمجھا. یہ انسان حقیقت میں شیمپو کا موجد تھا۔برطانیہ میں، اس کو کو کنگز جارج چہارم اور ولیم چہارم  دونوں کے شیمپونگ سرجن کے طور پر مقرر کیا گیا تھا.

مغل بھارت میں ایجاد کی جانے والی سب سے زیادہ قابل قدر فلکیاتی ایجاد ایک بے مثال آسمانی کرہ یا Celestial globe تھا.  ,یہ 998 ھ (1589-90 عیسوی) میں کشمیر میں علی کشمیری بن لقمان کی طرف سے ایجاد کیا گیا تھا، اور بعد میں مغل سلطنت کے دوران لاہور اور کشمیر میں بیس دیگر اس طرح کی گلوب تیار کی گئیں.  ,1980 کے دہائیوں میں اپنی دوبارہ دریافت سے پہلے، جدید  یہ محسوس ہوتا تھا کہ جدید ماہرین فلزیات یا میٹلرجی کے نزدیک بے جوڑ فلکیاتی کروں کی ایجاد  تکنیکی طور پر ناممکن تھی.
عثمانی سلطنت کی تاریخ کے دوران، عثمانیوں نے دیگر ثقافتوں کے ساتھ ساتھ اصل نسخے سے کتابوں کے ترجمہ کے ساتھ مکمل لائبریریوں کا ایک بڑا مجموعہ تعمیر کیا. 15 ویں صدی میں مقامی اور غیر ملکی نسخوں کے لئے اس خواہش کا ایک بڑا حصہ پیدا ہوا. سلطان محمد دوم نے ایک جارجیائی شخص کوحکم دیا کہ عثمانی تعلیمی اداروں کے لئے بطلیموس کے جغرافیائی کتاب کا ترجمہ کرے۔ ایک اور مثال علی القشجی تھا جو  سمر قند سے تعلق رکھنے والا ماہر فلکیات،ریاضی دان اور ماہر فزکس یا طبیعیات تھا ۔ وہ دو مدرسوں میں پروفیسر بن گیا تھا اور عثمان سلطنت اور ان کے طالب علموں کو اپنے تحریروں سے متاثر  کیا تھا، اگرچہ اس نے صرف دو یا تین سال موت سے پہلے استنبول میں گزارے ۔

1577 ء میں تقی الدین نے استنبول کی رصد گاہ تعمیر کی، جہاں انہوں نے 1580 تک مشاہدات کیے. انہوں نے سورج کے مدار کا انحراف یعنی eccentricity of the Sun’s orbit  اور چاند کی سالانہ اوج مدار قمر یا Apogee کو شمار کیا.    ,انہوں نے 1551 ء میں عثمانی مصر میں بھاپ سے چلنے والا پہلا انجن یعنی سٹیم انجن ایجاد کیا جو بعد میں ریلوے کی ایجاد کا پیش خیمہ ثابت ہوا۔
1660 ء میں عثمانی سلطنت کے ابراہیم افندی نے نوئیل دورت کی فرانسیسی فلکیاتی تسنیف (1637 میں لکھی گئی تھی)، کاعربی میں ترجمہ کیا.    ,شیرافدین صابونکوغلو۔۔Şerafeddin Sabuncuoğlu۔۔ نے دنیا کا پہلا علم جراحی یا سرجری کا اٹلس مرتب کیا جو کہ اسلامی دنیا سے آخری اہم طبی انسائیکلوپیڈیا تھا. اگرچہ اس کا کام زیادہ تر ابو ابو قاسم الزہراوی کی تصنیف التصریف  پر مبنی تھا، صباقوکوگلو نے اپنی طرف سے کئ جدتیں اس فن میں  متعارف کرائی. پہلی بار خواتین خاتون سرجنوں کو بھی نمائش دی گئی تھیں.
ایک گھڑی جو اقلیوں یعنی  منٹوں میں وقت بتاتی تھی عثمانی گھڑی ساز، میشور شیح دید۔۔Meshur Sheyh Dede۔۔  نے 1702 میں ایحاد کی.

19 ویں صدی میں اسحاک افندی۔۔۔Ishak Efendi۔۔ نے عثمانی اور وسیع مسلم دنیا میں مغربی سائنسی نظریات اور ترقی کو مناسب ترکی اور عربی سائنسی اصطلاحات کے انعقاد کے ساتھ اپنے مغربی سائنسی کتابوں کے ترجمہ کے ساتھ متعارف کرایا .
عثمانیہ فضائیہ کی بنیاد جون 1909ء میں رکھی گئی اس طرح یہ دنیا کی قدیم ترین جنگی ہوا بازی کے اداروں میں سے ایک ہے۔ اس کا قیام اس وقت عمل میں آیا جب سلطنت عثمانیہ نے اپنے دو ترک ہوا بازوں کو پیرس میں منعقدہ بین الاقوامی ہوا بازی کانفرنس شرکت کے لیے بھیجا۔ فضائی جنگ کی بڑھتی ہوئی اہمیت کے پیش نظر عثمانی حکومت نے اپنے عسکری ہوا بازی کے منصوبے کو منظم کرنے کا فیصلہ کیا۔ اس مقصد کے لیے 1910ء کے آخر میں متعدد افسران کو تربیت کے لیے یورپ بھیجا گیا جنہوں نے وہاں جنگی ہوا بازی کی تربیت حاصل کی۔ رہائش کی ناقص سہولیات کے باعث تعلیم کا یہ منصوبہ ختم ہو گیا اور زیر تربیت اہلکار 1911ء کے اوائل میں ترکی واپس آ گئے۔ فضائیہ کے قیام کے لیے حکومتی رہنمائی کے خاتمے کے باوجود اس وقت کے عثمانی وزیر دفاع محمد شوکت پاشا نے عسکری فضائی منصوبے کے خیال کو عملی جامہ پہنانے کی کوششیں جاری رکھیں اور دو افسران کو فرانس تربیت کے لیے بھیجا۔ ان ہوا بازوں کی تربیت فروری 1921ء میں مکمل ہوئی اور اسی سال مزید ترک افسران کو فرانس بھیجا گیا۔ سلطنت عثمانیہ نے 3 جولائی 1912ء کو استنبول میں فضائی اکادمی کے قیام کے ذریعے اپنے ہوا بازوں اور طیاروں کی تیاری اور اپنے افسران کی تربیت کا آغاز کیا۔ ترک ہوا بازوں کی نا تجربہ کاری کے باعث بلقان جنگوں کے پہلے مرحلے (1912ء) میں متعدد جہازوں کا نقصان اٹھانا پڑا تاہم دوسرے مرحلے (1913ء) میں انہیں کئی کامیابیاں ملیں۔ بلقان جنگوں کے خاتمے کے بعد فضائیہ کو جدید خطوط پر استوار کرنے کے عمل کا آغاز کیا گیا اور نئے طیارے خریدے گئے۔ جون 1914ء میں استنبول میں ہی نئی عسکری اکادمی "بحری ہوا بازی اکادمی” کا قیام عمل میں آیا۔ لیکن پہلی جنگ عظیم کے آغاز کے ساتھ ہی یہ عمل رک گیا البتہ 1915ء میں چند جرمن افسران سلطنت میں آئے اور چند ترک افسران تربیت کے لیے جرمنی گئے تھے۔ پہلی جنگ عظیم کے دوران عثمانی فضائیہ کئی محاذوں پر لڑی جن میں مغرب میں گلیسیا، مشرق میں قفقاز اور جنوب میں یمن کے علاقے تک شامل تھے۔ عثمانی فضائیہ کو از سر نو منظم کرنے کی کوششیں جاری تھیں کہ 1918ء میں پہلی جنگ عظیم کے خاتمے اور استنبول پر اتحادیوں کے قبضے کے ساتھ ہی ان کا خاتمہ ہو گیا۔

  19 ویں صدی کے آغاز میں مصر نے محمد علی پاشا کے تحت مصر میں صنعتی مینوفیکچررز کے لئے بھاپ انجن کا استعمال شروع کیا جس میں لوہے کا کام، ٹیکسٹائل مینوفیکچررز، کاغذ ملوں اور ہولنگ ملیں۔۔ hulling mills۔۔بھاپ کی طاقت کی سے چلائی جانا شروع ہوئیں.   ,اقتصادی تجزیہ کار جین باٹو نے دلائل دیتے ہوئے کہا ہے کہ مصر میں ضروری اقتصادی حالات  کی منظوری کے لۓ 19 ویں صدی میں اس کے بھاپ انجنوں کے لئے ممکنہ توانائی کے وسائل کے طور پر تیل کے استعمال کے لیے موجود تھے.

حوالہ جات:

1:Sharma, Virendra Nath (1995), Sawai Jai Singh and His Astronomy, Motilal Banarsidass Publ., pp. 8–9, ISBN 81-208-1256-5
2: Baber, Zaheer (1996), The Science of Empire: Scientific Knowledge, Civilization, and Colonial Rule in India, State University of New York Press, pp. 82–9, ISBN 0-7914-2919-9
3:Teltscher, Kate (2000). "The Shampooing Surgeon and the Persian Prince: Two Indians in Early Nineteenth-century Britain”. Interventions: International Journal of Postcolonial Studies, 1469-929X. 2 (3): 409–23. doi:10.1080/13698010020019226.
4:Savage-Smith, Emilie (1985), Islamicate Celestial Globes: Their History, Construction, and Use, Smithsonian Institution Press, Washington, D.C.
5:Ágoston and Alan Masters, Gábor and Bruce (2009). Encyclopedia of the Ottoman Empire. Infobase Publishing. p. 583. ISBN 978-1-4381-1025-7.
6:Ragep, F. J. (2005). "Ali Qushji and Regiomontanus: eccentric transformations and Copernican Revolutions”. Journal for the History of Astronomy. Science History Publications Ltd. 36 (125): 359–371. Bibcode:2005JHA….36..359R.
7: Sevim Tekeli (1997). "Taqi al-Din”. Encyclopaedia of the history of science, technology and medicine in non-western cultures. Encyclopaedia of the History of Science. Kluwer. Bibcode:2008ehst.book…..S. ISBN 0-7923-4066-3.
8: El-Rouayheb, Khaled (2015). Islamic Intellectual History in the Seventeenth Century: Scholarly Currents in the Ottoman Empire and the Maghreb. Cambridge University Press. pp. 18–9. ISBN 978-1-107-04296-4.
9: Ahmad Y Hassan (1976), Taqi al-Din and Arabic Mechanical Engineering, p. 34–35, Institute for the History of Arabic Science, University of Aleppo
10: Ben-Zaken, Avner (2004). "The Heavens of the Sky and the Heavens of the Heart: the Ottoman Cultural Context for the Introduction of Post-Copernican Astronomy”. The British Journal for the History of Science. Cambridge University Press. 37: 1–28. doi:10.1017/S0007087403005302.
11: Bademci, G. (2006). "First illustrations of female Neurosurgeons in the fifteenth century by Serefeddin Sabuncuoglu”. Neurocirugía. 17 (2): 162–5. doi:10.4321/S1130-14732006000200012.
12:Horton, Paul (July–August 1977). "Topkapi’s Turkish Timepieces”. Saudi Aramco World: 10–13. Retrieved 12 July 2008.
13: Jean Batou (1991). Between Development and Underdevelopment: The Precocious Attempts at Industrialization of the Periphery, 1800-1870. Librairie Droz. pp. 193–196. ISBN 9782600042932.
14:http://m.dunya.com.pk/index.php/special-feature/2017-05-14/18543

مزید دکھائیں

ایک تبصرہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ

Close