سیرت نبویﷺ

حضورﷺ کی عائلی زندگی پر ایک نظر

تحریر: خالد مسعو۔ ترتیب: عبدالعزیز

دشمنانِ اسلام نے حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی پاکیزہ و مطہر زندگی پر کیچڑ اچھالنے کی بہت کوششیں کی ہیں اور آپ کے سامنے یہود اور منافقین نے جو بے اصل پروپیگنڈا کیا اور آپ کی اخلاقی دھاک کو نقصان پہنچانے کی غرض سے جو افسانے تراشے، ان کو نئے نئے اسلوبوں سے بیان کرکے اس دور کے مخالفین نے آپؐ کی ذات پر ناروا حملے کئے ہیں ۔ حضورؐ کی حیات مبارکہ کے حقائق خود ہی دشمنوں کے بیانات کے باطل ہونے کا منہ بولتا ثبوت ہیں ۔ ان حقائق کو ذہن میں مستحضر رکھنے کی ضرورت ہے۔

 (1 رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی ابتدائی زندگی نہایت پاکیزہ اور تعمیری کاموں سے بھرپور رہی۔ اسی لئے مکہ کے معاشرہ نے آپ کو پختہ خیالات و کردار کا حامل اور ایک راست باز و دیانت دار نوجوان کی حیثیت سے عزت و وقار دیا۔ پچیس سالہ زندگی میں آپ کے کردار پر کوئی حرف نہیں آیا۔ 25 برس کی عمر میں آپ نے شادی کا سوچا تک نہیں جبکہ اگر آپ ایسا کرتے تو عرب معاشرہ میں یہ ایک نارمل رویہ ہوتا۔ ان 25 برسوں کی متاہلانہ زندگی کی یاد بعد کے دور میں بھی حضورؐ کیلئے ایک سرمایہ رہی۔ پچاس سال کی عمر تک اس طرح کا رویہ کسی دل پھینک یا جنس زدہ کا نہیں ہوتا۔

(2 پچاس برس کی عمر میں گھر در کی ذمہ داریوں کیلئے آپ کو دوسری گھر والی کی ضرورت محسوس ہوئی تو آپ نے اپنی عمر ہی کی خاتون سے نکاح کیا جن کی خوبی دین پر استقامت اور اس کیلئے جانثاری کا جذبہ تھی۔ ان کے سابق شوہر کا انتقال ہوچکا تھا۔

(3 چون برس کی عمر میں ایک جوان باکرہ خاتون سے آپ نے نکاح کیا۔ ان کی خصوصیت یہ تھی کہ وہ حضورؐ کے ایک سرد و گرم حالات میں قابل اعتماد ساتھی، بچپن کے مخلص دوست، معاشرہ کے با عمل و باکردار فرد کی صاحبزادی تھیں جو خود حضور صلی اللہ علیہ وسلم سے رشتہ کے تعلق کی خواہش رکھتے تھے۔ حضورؐ نے اپنے دیرینہ دست، جس کے آپ احسان مند بھی تھے، کی قدر افزائی اور ان کی دینی خدمات کی پذیرائی کیلئے یہ رشتہ قبول کیا۔ اور تجربہ سے معلوم ہوا کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے مشن کو آگے بڑھانے اور خواتین میں اس کو مقبول بنانے میں جو خدمات حضور کی ان زوجہ محترمہ نے سر انجام دیں ان کی گرد کو کوئی دوسری خاتون نہ پہنچ سکیں ۔

 (4 غزوۂ احد میں مسلمانوں کا جانی نقصان بہت زیادہ ہوا۔ معاشرہ میں مجاہدین کی بیوگان اور ان کی یتیم اولادوں کی نگہداشت ایک ملی مسئلہ کے طور پر سامنے آئی۔ قرآن مجید نے مسلم معاشرہ کو توجہ دلائی کہ وہ دو دو، تین تین، چار چار بیوگان سے نکاح کرکے اس مسئلہ کو حل کریں ۔ حضورؐ نے اس ہدایت کے مطابق یکے بعد دیگرے تین نکاح ایسی خواتین سے کئے جو آپ کے قریبی اعزہ کی بیویاں رہی تھیں اور ان کے شوہر غزوۂ احد میں شہادت پاچکے تھے۔ ان نکاحوں میں بڑا عامل بیوگان اور ان کے بچوں کی کفالت اور مسلمانوں کیلئے اس خدمت کی ایک عملی مثال قائم کرنا تھا۔

(5 رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے جنگ احد کے شہداء کی بیوگان سے نکاح کرکے بیک وقت چار ازواج کی حد پوری کرلی تو اس کے بعد زید بن حارثہ کے زینب بنت حجش کو طلاق دینے کا واقعہ پیش آیا۔ اس واقعہ کو اللہ رب العزت نے دو غلط تصورات کی اصلاح کا ذریعہ بنایا تا کہ کارِ نبوت کی تکمیل رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی عملی مثال سے ہو۔ ایک غلط تصور منہ بولے بیٹے کی حیثیت کے بارے میں تھا، دوسرا ایسے بیٹے کی مطلقہ یا بیوہ کے سے منہ بولے باپ کے نکاح کا معاملہ۔ عرب منہ بولے بیٹے کے حقوق حقیقی پر بیٹے کی طرح کے سمجھتے تھے اور اس کی بیوی کو حقیقی بہو کا درجہ دیتے تھے۔ قرآن نے اس تصور کو خلاف حقیقت قرار دیا اور فیصلہ کیا کہ جب منہ بولے بیٹے کو اپنی بیوی سے سروکار نہ رہے اور اس کو طلاق دیدے تو منہ بولا باپ اس سے شادی کرسکتا ہے ور اس میں کوئی قباحت نہیں ۔ اللہ رب العزت نے اس معاشرتی اصلاح کیلئے خود رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو عملی مثال قائم کرنے کا حکم دیا اور اس عمل میں حائل چار شادیوں کے حکم میں صرف آپ کیلئے گنجائش پیدا کر دی تاکہ آپ یہ نکاح بھی کریں اور اس کے بعد ان خواتین کو بھی حبالۂ عقد میں لے آئیں جو لونڈی بن کر ملکیت میں آئیں ؛ نیز اگر کوئی خاتون رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے عقد کرنے کی خواہش مند ہو اور آپؐ مناسب سمجھیں تو اس کو قید نکاح میں لاسکتے ہیں ۔

(6 اس خصوصی استثنائی حکم کے تحت آپؐ نے زینب بنت حجش سے نکاح کیا، اس کے بعد بنو مصطلق اور بنو نضیر کے سرداروں کی بیٹیوں سے، جو غزوات میں لونڈی بن کر آئی تھیں ، ان کو آزاد کرکے نکاح کئے اور میمونہ بنت الحارث کو زوجیت میں قبول کیا۔ یہ آخری نکاح 59 برس کی عمر میں ہوا۔ اور میمونہؓ تعلیمات نبویؐ کو پھیلانے کا اہم ذریعہ بنیں ۔

 اس تفصیل سے معلوم ہوا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی پوری زندگی نہایت پاکیزہ اور مطہر گزری۔ پچاس سال کی عمر تک کا زمانہ، جس میں جنسی ہیجان ہوتا ہے، آپؐ نے ایک بیوی کے ساتھ گزارا۔ اسی دوران میں آپؐ رسول مبعوث ہوئے اور آپ کی تمام تر توجہ کار نبوت کی تکمیل کی جانب مبذول ہوگئی۔ اس میں آپ کی مصروفیات کی نوعیت ایسی تھی جس میں دنیاوی امور بالکل ثانوی حیثیت میں باقی رہے؛ چنانچہ نکاحوں میں بھی دین و ملت کے مصالح اصل کے طور پر ملحوظ رہے۔

ازواج مطہراتؓ کی ذمہ داریاں : حکمرانوں اور مملکت کے سربراہوں کی زندگی کی یہ خصوصیت ہوتی ہے کہ دنیا اپنی تمام تر رعنائیوں کے ساتھ ان کے قدموں میں ڈھیر ہوتی ہے۔ وہ جیسے چاہتے ہیں اس سے فائدہ اٹھاتے ہیں ۔ ان کی بیگمات نہایت پُر آسائش زندگی گزارتی ہیں ۔ ان کی خدمت و سہولت کیلئے نعمتوں کی فراوانی اور خدمت گار خواتین کی کثرت ہوتی ہے۔ اقتدار کا نشہ ان کے پاؤں زمین پر نہیں ٹکنے دیتا۔ اللہ کے نبیوں اور رسولوں کا معاملہ بالکل مختلف ہوتا ہے۔ وہ کبھی دنیا کو خاطر میں نہیں لاتے تھے، ان کا مطمح نظر صرف آخرت ہوتی ہے۔ ان کی زندگی اللہ کے احکام کی تعمیل اور اس کا پیغام انسانوں تک پہنچانے سے عبارت ہوتی ہے۔ ان کی بیویوں میں بھی انہی کی زندگیوں کا عکس ہونا ضروری ہوتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ قرآن میں ازواج مطہرات کو نہایت اہتمام سے ان کی ذمہ داریاں بتائی گئیں ۔ ان