سیرت نبویﷺ

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کاانداز گفتگو

محمد قمر الزماں ندوی 

            گفتگو کسی بھی شخص کی سیرت و کردار اور اخلاق و عادات کی آئینہ دار ہوتی ہے۔ شیخ سعدی ؒ نے اس حقیقت کو اپنے شعر میں یوں بیان فرمایا ہے    ؎            تامرد سخن نہ گفتہ باشد    عیب و ہنرش نہ ہفتہ باشد

            جب کوئی شخص گفتگو کرتاہے تب اس کے حسن و قبح سامنے آتے ہیں، ہر شخص کی شناخت اور اس کی پہچان اس کی گفتگو ہے، اس لیے ضروری ہے کہ انسان کی گفتگو صاف، واضح اور ہرشخص کے لیے قابل فہم ہونی چاہیے، حدیث شریف میں آتاہے کہ تاجدار مدینہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کاکلام ایک دوسرے سے الگ ہوتاتھا، آپ ؐ کے الفاظ گنے جاسکتے تھے اور زبانی یاد کیئے جاسکتے تھے، آپ گفتگو ٹھہر ٹھہر کے فرماتے تھے اس ٹھہراؤ میں خوبصورتی، رعنائی اور دلنوازی ہوتی تھی، تاکہ لوگ ایک ایک لفظ سن لیں اور یاد کرلیں، اور اگر کچھ پوچھنا ہوتو غور وفکر کرکے مجلس ہی میں پوچھ لیں، حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے الفاظ منتخب اور موزوں ترین ہوتے، گویا نگینوں کی طرح باہم جڑے ہوتے جس کو علٰحدہ نہیں کیاجاسکتا۔ آں حضور صلی اللہ علیہ وسلم کالہجہ دھیما ہوتاجس میں محبت و الفت رحمت وشفقت کی حلاوت اور شیرینی ہوتی، دوست تو دوست دشمن بھی آپ کی بات سننے کے بعد کاٹنے کی جرأت نہ کرتامخاطب کو پورے الفاظ سے گفتگو کرنے کا موقع دیتے اور پوری توجہ اور انہماک سے اس کی گفتگو سنتے اور پھر اطمینان سے اس کے سوال کے جواب دیتے، مختصر الفاظ میں تشفی بخش جواب دیتے طول و طویل کلام سے احتراز کرتے تاکہ سننے والا اکتانہ جائے۔

            آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی گفتگو متانت و سنجیدگی کااعلی نمونہ ہوتی گفتگو کے سلسلے میں آپ کا اصول تھاکہ اچھی گفتگو کرو ورنہ خاموش رہو، آپ ؐ کے پیش نظر ہمیشہ یہ آیت رہتی قولوا للناس حسنا لوگوں سے اچھی بات کہو، آپ ؐ ہمیشہ سنجیدہ اور بامقصد گفتگو فرماتے اور اسی کی لوگوں کوتلقین فرماتے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم صحابہ سے فرماتے املک علیک لسانک (گفتگو کرتے وقت اپنی زبان کوقابو میں رکھو) کیونکہ زبان کی بے باکیاں اعمال حسنہ کوبے وزن اور بے نور کر دیتی ہیں۔

            علامہ ابن قیم ؒ تحریر فرماتے ہیں :’’حضور ؐ کی گفتگو میں جاذبیت وکاملیت اور جامعیت ہوتی تھی، آپ نہایت سادہ اور آسان لیکن فصیح ترین زبان استعمال کرتے تھے، گفتگو نہایت واضح اور دل میں اترجانے والی ہوتی تھی اس میں کسی طرح کاابہام نہ ہوتا اور نہ ہی مشکل الفاظ اور بھاری بھرکم تراکیب ہوتی تھیں۔ ‘‘(زاد المعاد)

            خود آں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک موقع پر فرمایا انا افصح العرب (میں عربوں میں فصیح ترین ہوں) یعنی عرب میں ندرت کلام کاباد شاہ ہوں، ایک موقع پر خلیفہ ثانی حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ نے آں حضور ﷺ سے عرض کیا میں نے آپ سے زیادہ فصیح کوئی شخص نہیں دیکھا تو آپ ؐ نے ارشاد فرمایا۔ میرے فصیح ترین ہونے میں کیاچیز رکاوٹ ہے جب کہ میں قریش کا فرد فرید اور رکن رکین ہوں اور میں نے اپنا بچپن بنو سعد کی آغوش میں گزار ا ہے۔ (طبقات ابن سعد)

            آں حضور ؐ کی گفتگو میں ادب کی چاشنی، الفاظ کی خوبی، مثال کی دلچسپی ہوتی تھیں، آپ کے اقوال حیرت انگیز ادبیت  او رمعنویت کے حامل ہوتے، ایک موقع پر حضرت علی کرم اللہ وجہ نے آں حضور صلی اللہ علیہ وسلم سے آپ ؐ کے مسلک زندگی کے بارے میں سوال کیا، آں حضور ﷺ نے جوجواب دیا وہ حکمت و دانائی، علم و معرفت کا عظیم سرمایہ اور معرفت خداوندی کامنفرد شاہکار ہے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ’’اے علی ! عرفان میرا سرمایہ ہے، عقل میرے دین کی اصل ہے، محبت میری بنیاد ہے، شوق میری سواری ہے، ذکر الٰہی میرامونس ہے، ا عتماد میرا خزانہ ہے، حزن میرا رفیق ہے، علم میرا ہتھیار ہے، صبر میرا لباس ہے، رضائے الٰہی میری غنیمت ہے، عجز میرا فخر ہے، زہد میرا روزگار ہے، یقین میری قوت ہے، صدق میری سفارش ہے، جہاد میرا کردار ہے، طاعت میری پناہ ہے، اور میری آنکھوں کی ٹھنڈک نماز میں ہے ‘‘(بحوالہ نوائے ہادی سیرت رسول نمبر)

            اس تمہید کے بعد آئیے ایک طائرانہ نظر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی گفتگو اور کلام کے ادبی محاسن پر یا بالفاظ دیگر احادیث نبوی ؐ کے ادبی محاسن پرڈالتے چلیں۔

تشبیہ و تمثیل :ہر قسم کی مادی تعلیم اور روحانی تربیت کی تکمیل تشیبہ و تمثیل سے ہی ہوتی ہے، تشبیہ و تمثیل ہرزبان میں تعبیر و تفہیم اور اظہار وبیان کاایک موثر اور خوبصورت ذریعہ رہاہے، یہی وجہ ہے کہ دنیا کاکوئی لٹریچر خواہ وہ انسانی ہویا آسمانی اس سے خالی نہ رہ سکا اور نہ یہ ہونا ممکن تھا، کلام الٰہی کے بعد سب سے زیادہ اہم کلام کلام رسول ہے، آ پؐ نے اپنے کلام میں بھی کثرت سے اس ذریعہ تفہیم کواختیار فرمایا ہے، چند تمثیلات و تشبیہات پیش کیے جاتے ہیں۔

1۔ ان احدکم مرآۃ اخیہ فان رأی بہ أذی  فلیمطہ عنہ۔ تم میں سے ایک دوسرے کاآئینہ ہے اگراس میں کوئی برائی دیکھے تو دور کردے۔

2۔ کن فی الدنیا کانک غریب او عابر سبیل (بخاری) دنیامیں اس طرح رہو کہ گویا تم مسافر یاراہ روہو۔

3۔ مثل ابی بکر کمثل الغیث اینما حل نفع۔ ابوبکر ؓ کی مثال بادل کی سی ہے کہ جہاں برستاہے نفع دیتاہے۔

4۔ امتی کالغیث لایعلم اولہ خیرام آخرہ۔ میری امت کی مثال بارش کی سی ہے جس کے بارے میں یہ علم نہیں ہوتا کہ اس کا ابتدائی حصہ بہتر ہے یا آخری حصہ۔

5۔ الناس معادن کمعادن الذھب و الفضۃ خیارھم فی الجاہلیۃ خیارھم فی الاسلام اذا فقھوا۔ لوگ سونے چاندی کی مانند کانیں ہیں جولوگ ان میں سے زمانہ ٔ جاہلیت میں بہتر تھے۔ جب انہوں نے اسلام کوسمجھ لیا تو وہ وہی اسلام میں بھی بہتر ٹھہرے۔

6۔ اصحابی کالنجوم بایھم اقتدیتم اھتدیتم۔ میرے أصحاب ؓ ستاروں کی مانند ہیں ان میں سے جس کی بھی تم پیروی کروگے ہدایت پاجاؤ گے۔

7۔ علم لا ینتفع بہ ککنز لاینفق بہ۔ وہ علم جس سے کوئی نفع نہ ہو اس کی مثال اس خزانے کی ہے جس میں سے کچھ خرچ نہ کیاجائے۔

8۔ أھل بیتی کسفینۃ نوح من رکب فیھانجا ومن تخلف عنھا ھلک۔ میرے اہل بیت کی مثال سفینہ ٔ نوح ؑ کی ہے جواس میں سوار ہوگیا وہ پار ہوگیا جوپیچھے رہ گیا وہ ہلاک ہوگیا۔

9۔ لاتجعلو نی کقدح الراکب۔ مجھے سوار کے پیالے کی سی حیثیت مت دو۔ یعنی جس طرح ایک شتر سوار اپنا پیالہ کجاوے کے پپچھے باندھتا ہے، اس طرح میرا ذکر آخرمیں نہ کرو، کیونکہ اس سے تمہاری بے رخی اور بے اعتنائی کا اظہار ہوتاہے، جوایمان کے خلاف بات ہے۔

10۔ مامثلی فیکم الا النذیرالعریان۔ تمہارے اندر میری مثال ایسی ہے جیسے ننگا ڈرانے والا ہو۔

             عربوں کے ہاں یہ دستور تھاکہ جب کوئی بڑا خطرہ درپیش ہوتاتو ایک شخص پہاڑی پرچڑھ کرکپڑے اتار کر قوم کو بلاتا تو لوگ اس کی بات سننے کے لیے جمع ہوجاتے اور وہ انھیں خطرے سے آگاہ کردیتا، آں حضور ؐ کی مراد یہ ہے کہ میں بھی تمہیں ایک بہت بڑے خطرے سے آگاہ کررہاہوں اللہ تعالیٰ کے انکار اور نافرمانی کی وجہ سے تم دوزخ میں پڑنے والے ہو، اس سے بچ جاؤ۔

11۔ العائد فی ھبتہ کا لعائد فی قیئہ۔ کوئی چیز تحفہ دے کر واپس لینے والا ایسا ہے جیسے قئے کرکے پھر اس کو چاٹ لینے والا۔

12۔ الناس کابل مآئۃ لا تجد فیھا راحلۃ۔ لوگوں کی مثال ان سو اونٹوں کی ہے جن میں سواری کے لائق ایک بھی نہ ہو یعنی عام لوگوں مین نیک و خدا پرست آدمی ایک بھی نہیں ملتا۔

13۔ مثل الجلیس الصالح کالعطار۔ ان اصابک من طیبہ و ان اصابک من ریحہ و مثل الجلیس السوء کمثل کیر الحدید، ان اصابک من لھبہ و الا اصابک من شررہ۔ نیکوکار ہمنشین کی مثال ایسی ہے جیسے عطار کہ اگر تمہیں اس کی خوشبو مل جائے۔ تو بہت خوب، ورنہ اس کی مہک تو آئے گی۔ اور برے ہمنشین کی مثال لوہار کی بھٹی کی سی ہیکہ اگر اس کی آگ کی لپٹ آئے تو جھلسادے ورنہ اس کی چنگا ریاں تو تم پر پڑیں گی۔ (وغیرہ)

تجزیاتی کلام :آں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم کاطرز گفتگو یہ بھی ہوتاتھا کہ کسی بات پر ہمہ پہلو گفتگو فرماتے اور ایسا منطقی تجزیہ فرماتے کہ کوئی پہلو اس سے باہر نہ جاسکے، جیسے آپ ؐ نے ایک موقع پرارشادفرمایا، لیس لک من مالک الا مااکلت فأفنیت أو لبست فا بلیت أو تصدقت فامضیت (مسلم شریف۔ 2/407)تمہارا مال صرف وہی ہے جوتم نے کھاکر فنا کردیا یاپہن کربوسیدہ کردیا یاصدقہ کرکے آگے بھیج دیا۔

            یہ گفتگو نہایت موثر اور عقل کواپیل کرنے والی ہوتی ہے کہ صاحب عقل و انصاف کے لیے اس کو قبول کئے بغیر چارہ نہیں

نمبر وار کلا م :گفتگو کودلچسپ، موثر اور یاد رکھنے میں سہل و آسان بنانے کا ایک طریقہ یہ بھی ہے کہ مختلف باتیں کہنی ہوں تو ترتیب وار کی جائیں اور پہلے اسکی تعداد شمار کرادی جائے مثلا مجھے تین باتیں کہنی ہیں، آں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی گفتگو میں بھی یہ طریقہ آپ کو بکثرت ملے گا، جیسے ایک موقع پرآپ ؐ نے فرمایا :’’ثنتان لاتردان، الدعاء عند النداء، عند البأ س حین یلحم بعضم بعضا ‘‘(دوچیز رد نہیں ہوتیں، وہ دعاء جو اذان کے وقت کی جائے اور جو جنگ کی شدت کے وقت کی جائے) ایک دوسرے موقع پرآپ ؐ نے فرمایا :’’ ثلاث من کن فیہ وجد بھن طعم الایمان۔ من کا ن اللہ ورسولہ أحب الیہ مماسوا ھماومن احب عبدا لایحبہ الا اللہ ومن یکرہ أن یعود فی الکفر بعد ان انقذہ اللہ منہ کما یکر ہ ان یلقی فی النار‘‘(جس میں تین باتیں ہوں وہ ایمان کے ذائقہ سے محظوظ  ہوگا۔ اس کو اللہ اور اسکا رسول ان کے ماسوا سب سے زیادہ محبوب ہو، جوکسی بندہ خدا سے اللہ ہی کے لیے محبت کرے۔ اور کفر میں لوٹنے کو ناپسند کرتا ہوجیسے وہ آگ میں ڈالے جانے کو ناپسند کرتاہے)

استفہامیہ انداز کلام :استفہام کے معنی استفسار اور سوال کے ہیں، آپ ؐ نے متعدد اور بے شمار مواقع پر استفہامیہ انداز کلام کو اختیار فرمایا۔ آں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم کامعمول مبارک تھاکہ کسی اہم بات کی طرف متوجہ کرنے کے لیے پہلے استفہامیہ انداز اختیار کرتے اور ایسا سوال کرتے کہ ہرشخص گو ش برآواز ہوجائے اور اگلی بات سننے کی خواہش دل میں چٹکیاں لینے لگے پھر آپ ؐ ارشاد فرماتے۔

            دوتین نمونے پیش کیے جاتے ہیں ایک موقع پر آپ ؐ نے فرمایا : أیکم مال وارثہ احب الیہ من مالہ ؟ تم میں سے کس کو اپنے مال کے مقابلہ اپنے وارث کامال محبوب ہے ؟ صحابہ ؓ نے عرض کیا یارسول اللہ ؐ ! مامنا احد الا مالہ احب الیہ من وراثہ۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ! ہم میں سے ہرشخص کواس کے وارث کے مال سے اپنا مال زیادہ محبوب ہے۔

            پھر آپ ؐ نے وہ بات فرمائی جوکسی پیغمبر اور رسول ہی کی زبان سے نکل سکتی ہے۔ ’’فان مالہ ما قدم ومال وارثہ ماأخر۔ ‘‘جس مال کو اس نے (اللہ کی زبان میں) پہلے خرچ کرلیاوہ اس کا ہے اور جوچھوڑگیا وہ اس کے وارث کاہے۔

            ایک موقع پر آپ ؐ نے حضرت ابو ذر غفاریؓ کوطلب فرمایا اور پوچھا :’’أتری ٰ أحدا ؟ ‘‘کیاتم نے احد پہاڑ کودیکھا یاکیاتم احد پہاڑ کودیکھتے ہو؟

            حضرت ابو ذر غفاری نے عرض کیا میں دیکھ رہاہوں، آ پ ؐ نے فرمایا: مایسرنی ان لی مثلہ ذھبا انفقہ کلہ الا تلثۃ دنانیر۔ مجھے اس سے خوشی نہیں ہوگی کہ میرے پاس اس کے برابر سونا ہواور اس میں سے تین دینا ربھی بچ رہیں۔

 معنی اور لفظ میں صوتی ہم آہنگی (مطابقت):کسی معنی کے اظہار کے لیے ایسے لفظ کا استعمال کہ خود آواز اور تلفظ ہی اس کی کیفیت کوظاہر کردے یہ بھی زبان وبیان کے محاسن اور کمالات میں سے ہے، صرف ایک نمونہ پیش کرتے ہیں ورنہ احادیث کے ذخیرے میں متعدد مثالیں موجود ہیں۔ مثلا اٹک اٹک کرقرآن پڑھنے کی مشقت کو آپ ؐ نے اس طرح ظاہر فرمایا۔ و الّذی یقرأ القرآن و یتتعتع فیہ و ھو علیہ شاق لہ اجران، یتعتع کالفظ خو د زبان حال سے اس مشقت کابیان و اظہار ہے۔

کلام نبوی ؐ میں مجاز اور کنایہ :ادب کی اہم صنف مجاز اور کنایہ ہے، جس کا مفہوم یہ ہے کہ لفظ یاجملہ کے حقیقی معنیٰ کے بجائے لوازم معنیٰ مراد لیے جائیں، کلا م نبوی میں یہ بکثرت استعمال ہواہے ہرچندکہ فصحائے عرب ’’مجاز ‘‘ کے استعمال میں یدطولیٰ رکھتے تھے۔ اور ان کو اس خصوصیت پر بڑا ناز تھا، لیکن پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وسلم کی مجازی تراکیب کے سامنے وہ شرمندہ و سر فگندہ تھے۔ ذیل میں چند ایسے ارشادات پیش کررہاہوں جواپنے مجازی معنوں میں استعمال ہوئے ہیں۔

ھدنۃ علی دخن                              صلح دھوئیں پرہے۔

کل ارض سمائھا                           ہرزمین اس کے تنومندوں کے ساتھ ہے۔

یاخیل اللہ ارکبی                            اے اللہ کے سوا رو ! سوار ہوجاؤ!

لاینطح فیھا عنزان                         اس میں دو رائیں نہیں ہوسکتی۔

رویدک رفقا بالقواریر                     ان آبگینوں کے ساتھ نرمی سے کام لو۔

الآن حمی الو طیس                        (اب تنور بھڑکا ہے)یعنی معرکہ  ٔ کار زار اب گرم ہے

کل الصید فی جوف الفراء                سب شکار جنگلی گدھے کے پیٹ میں۔ یعنی ہاتھی کے پاؤں میں سب کاپاؤں

نادر اور اچھوتے الفاظ کاانتخاب :مختلف معانی اور مفاہیم اور ان کے لیے موزوں سے موزوں تر الفاظ ومرکبات کے انتخاب میں بھی آپ ﷺ یدطولی رکھتے تھے، بسااوقات آپ ؐ نے ایسے الفاظ، مرکبات او ر جملے استعمال فرمائے ہیں جن سے عام طورپر عربوں کے کان ناآشنا تھے، ایسے جملے اور کلمات کااستعمال ’’بیان ‘‘ کی ان خوبیوں میں سے ہے جن کی بلاغت میں نظیر نہیں ملتی۔

            ایک بار ابو تمیمہ الھجمی ؒ حاضر خدمت ہوئے تو آپ ؐ نے ان کو جونصائح فرمائیں ان میں ایک جملہ یہ بھی ارشاد فرمایا ’’ایاک و المخیلۃ ‘‘انھوں نے عرض کیا یارسو ل اللہ ’’مخیلۃ ‘‘کیاہے ؟ ہم قوم عرب سے ہیں لیکن ہم یہ لفظ نہیں سمجھ سکے توآپ ؐ نے ارشاد فرمایا کہ ’’مخیلۃ ازارکا زمین پرگھسٹاناہے، گو یا یہ تکبر کی علامت ہے، اس کے بعد یہ لفظ ’’مخیلہ ‘‘تکبر کے معنی میں استعمال ہونے لگا اور حضور ؐ نے اس کو متعدد بار استعمال فرمایا۔

            ایک موقع پر آں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت علی ؓ کے روبرو ’’مات حتف انفہ ‘‘ (وہ اپنی ناک کی موت مرگیا)(فطری اور طبعی) ارشاد فرمایا تو حضرت علی ؓ نے فرمایا کہ یارسول اللہ ! میں نے ایسا جملہ سناہے کہ اس سے قبل کسی عرب کی زبان سے نہیں سنا، حضرت علی فرماتے ہیں کہ جب میں نے آپ ؐ سے اس کے معنی دریافت کئیے تو معلوم ہواکہ اس کے معنی ہیں کہ ’’وہ اپنی ناک کی موت مرگیا‘‘ اردوزبان میں بھی ناک رگڑ کرمرجانا مستعمل ہے، اس سے حضور ؐ کی مراد یہ تھی کہ ایک مسلمان کوشہید کی موت مرنا پسند کرنا چاہئے نہ یہ کہ وہ بستر پر پڑے پڑے دم توڑدے۔

            اسی طرح غزوہ ٔ اوطاس میں جب مسلمانوں نے کافروں پر پلٹ کرحملہ کیااور ان کے کشتوں کے پشتے لگنے لگے اس وقت رسول عربی صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا۔ ’’الآن حمٰی الوطیس ‘‘ تنور اب گرم ہوگیا یعنی اب گھمسان کارن پڑاہے۔ الغرض عربوں کی لغت دانی، الفاظ کی تراش وخراش یعنی اشتقاق کی صناعیاں آں حضرت ؐ کے حسین و دلکش لغات اور مشتقات کی جامعیت سے بھر پو رکلمات کے سامنے بالکل ماند پڑگئی تھیں۔

فصل ووصل :عربی زبان میں دوجملوں کوکسی حرف عطف کے ذریعہ مربوط کرنے یا بغیر حرف عطف کے ذکر کرنے کے مستقل قواعد ہیں جو ادب کی اصطلاح میں ’’فصل ووصل ‘‘ کے نام سے جانے جاتے ہیں، ان کی رعایت کلام میں ایک لطف پیدا کرتی ہے کلام نبوی ؐ میں اس کا بڑا خوبصورت استعمال موجود ہے۔ مثلا آپ ؐ نے فرمایا اد الامانۃ لمن ائتمنک ولا تخن من خانک۔ امانت وخیانت ایک دوسرے کی ضد ہیں اور امانت کی ادائیگی اور خیانت سے اجتناب ایک دوسرے کے لوازم میں ہیں۔

کلام نبوی ؐ میں لفظی مناسبت :زبان و ادب کی خوبیوں اور رعنائیوں میں سے ایک یہ بھی ہے کہ دو ایسے الفاظ استعمال کیئے جائیں جوتلفظ میں یکسانیت یاقربت رکھتے ہوں اور معنی و مقصود میں ایک دوسرے سے مختلف، لیکن ایسی لفظی مناسبت میں بے ساختگی اور برجستگی شرط ہے۔ آں حضرت ؐ کی گفتگو میں اس طرح کے خوبصورت، برجستہ فقرے کثرت سے ملتے ہیں، بطور مثال چند فقرے پیش کئے جاتے ہیں :

عصیۃ عصت اللہ ورسولہ                قبیلہ ’’عصیہ ‘‘ نے اللہ و رسول کی معصیت و نافرمانی کی۔

غفار غفر اللہ لھا                            ’’غفار ‘‘ قبیلہ کی اللہ تعالیٰ مغرفت فرمائے

اسلم سالمھا اللہ                              ’’بنو اسلم ‘‘ کواللہ تعالیٰ سلامت رکھے۔

اسلم تسلم                                     اسلام قبول کرو نجات پاؤ گے۔

الخیل معقود بنو اصیھا الخیر            گھوڑے کی پیشانی سے ’’خیر ‘‘ وابستہ ہے۔

لایکون ذو جہین وجیھا عنداللہ           ’’دو رخا‘‘ اللہ کے نزدیک وجیہ (بامراد وکامیاب)نہیں ہوسکتا۔

رعایت سجع و نغمگیں کیفیت :آں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی گفتگو کی ایک خصوصیت یہ بھی تھی کہ آپ ؐ نے متعدد اور بے شمار مواقع پرایسے فقرے اور جملے استعمال فرمائے جسمیں رعایت سجع کاجلوہ نمایاں ہے۔ ادب اور زبان کی اصطلاح میں سجع کہتے ہیں فقروں کی ایسی ترتیب جس کے آخری حروف میں یکسانیت ہواور ان فقروں میں ایک طرح کا آہنگ ہو۔ اگر مسجع کی رعایت میں تکلف اور تصنع کادخل ہوتو اہل ذوق کے لیے اس سے زیادہ گراں خاطر کچھ اور کلام نہیں، لیکن اگر اس میں بے تکلفی، بے ساختگی اور برجستگی ہوتو پھر اس کی لذت اور حلاوت کاکیاکہنا۔ آپ ؐ کے تمام نصائح میں بھی اور دعاؤں میں بھی یہ رنگ خوب نمایاں ہے۔ چند فقرے اور جملے بطور نمونہ پیش ہیں

            ایک خطبے (تقریر) میں آپ ؐ نے فرمایا :  ایھاالناس ! افشوا السلام و اطعموا الطعام وصلوا باللیل والناس نیام تدخلوا الجنۃ بسلام لوگو! اسلام کوعام کرو، کھانا کھلاؤ، شب کے وقت جب لوگ سوئے ہوں نماز پڑھو، اس طرح تم سلامتی کے ساتھ جنت میں داخل ہوسکو گے۔

            ایک موقع پر آپ ؐ نے ارشاد فرمایا :المومن غر کریم والفاجر خب لئیم۔ مومن شریف و سادہ اور فاجر شخص کمینہ ودھوکہ باز ہوتا ہے۔ بعض مواقع پر تو آپ ؐ کے کلام میں یہ رعایت سجع اتنی خوبصورت ہے کہ گویا تأثیر میں شاعر ی مثلا یہ حدیث کلمتان حبیبتان الی الرحمٰن خفیفتان علی اللسان، ثقیلتان فی المیزان، سبحان اللہ و بحمدہ سبحان اللہ العظیم۔ دو کلمے ہیں اللہ کومحبوب، زبان پر ہلکے پھلکے، میزان عمل میں بھاری۔ سبحان اللہ و بحمدہ سبحان اللہ العظیم۔

دلچسپ آغاز کلام: اللہ تعالیٰ نے تاجدارمدینہ کوآغازکلام کا بھی ایک خاص سلیقہ و دیعت فرمایاتھا، اگر اس نقطہ ٔ نظر اور پہلو سے کلام نبوی صلی اللہ علیہ وسلم کامطالعہ کیاجائے تویہ بھی بلاغت نبوی ؐ کاایک مستقل باب اور عنوان ثابت ہوگا۔ متعدد روایات میں اس طرز پر گفتگو شروع فرماتے کہ مخاطب ہمہ تن گوش ہوجائے۔ کہ آگے کیا بات کہی جانے والی ہے۔ مثلا ایک موقع پر آپ ؐ نے فرمایا : عجبا لأمر المومن، ان أمرہ کلہ خیراہل ایمان کامعاملہ بھی عجیب ہے، ا ن کاہر معاملہ خیر ہے، ولیس ذالک لاحد الاللمومن۔ ان اصابتہ سراء شکر، فکان خیرا لہ وان اصابتہ ضراء صبر، فکان خیرا لہ۔ راحت میسر ہواور شکر گذار ہوتویہ بھی اس کے لیے بہتر، اگر تکلیف سے دو چار ہواور صبر کرے تو یہ بھی اس کے لیے بہتر۔

اس حدیث میں آپ ؐ کایہ ارشاد فرمانا کہ ’’باعث تعجب ہے مومن کا معاملہ ‘‘ کس قدر دلچسپ اور قلب و دماغ اور ذہن و فکر کومتوجہ کرنے والا اور خوابیدہ اذھان کوچونکا دینے والا ہے۔

کلام نبوی ؐ میں ’’التفات ‘‘کی جھلک :بلاغت کی اصطلاح اور قواعد میں ’’التفات ‘‘بھی ہے یعنی تخاطب میں ایسی تبدیلی کہ مقصد بھی حاصل ہوجائے اور منشاء بھی فوت نہ ہونے پائے۔ عربی زبان میں اس انداز تخاطب کوپسند کیاجاتا ہے اور بہتر طرز کلام مانا جاتاہے، آں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی گفتگو اور کلام میں اس حسن تکلم کی پوری پوری رعایت موجود ہے خاص کر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے دعاؤں میں اکثر ’’التفات ‘‘ سے کام لیا ہے بطور نمونہ دومثالیں پیش خدمت ہے۔

            آں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم جب رکوع میں جاتے تو اس طرح دعاء فرماتے۔ اللھم لک رکعت و بک آمنت ولک اسلمت، و علیک توکلت، انت ربی خشع سمعی و بصری، و لحمی ودمی وعظامی للہ رب العالمین۔ خداوندامیں آپ کے سامنے جھکتاہوں، آپ پر ایمان رکھتاہوں، چوکھٹ یارپر جبین نیازخم ہے اور اسی پر بھروسہ ہے، آپ ہی میرے پرور دگار ہیں، آنکھ، کان، گوشت، خون اور ہڈیاں خدائے پروردگار عالم کے سامنے سجدہ ریز ہیں۔

            اس دعا میں ابتداء صیغہ ٔ خطاب سے اللہ رب العزت کاذکر کیاگیا، پھر اختتام دعا پر اللہ رب العزت کانام نامی ذکر کیاگیا، اسی طرح آں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم جب گھر سے باہر تشریف لاتے تو عموما یہ دعا پڑھتے۔ بسم اللہ توکلت علی اللہ۔ اللھم انا نعوذ بک من ان نضل او نضل او نظلم او نظلم او نجھل او یجھل علینا۔ اللہ کے نام سے، اللہ ہی پر بھروسہ ہے، الٰہا! میں لغزش اور بے سمتی کاشکار ہونے سے آپ سے پناہ چاہتاہوں۔ اس بات سے بھی کہ میں ظلم کرو ں یامجھ پرظلم کیاجائے، میں جہالت کاثبوت دوں یا میرے ساتھ جاہلانہ رویہ اختیار کیاجائے۔

            اس میں دعا اللہ رب العزت کے اسم پاک سے شروع ہوئی ہے، پھر بندہ خطاب کے صیغے سے اللہ کے حضور مناجات کرتاہے کبھی معروف کاصیغہ استعمال کرتاہے تو کبھی مجھول کا نضل اور یضل میں ایک حرف کی تبدیلی سے عبارت میں جولطافت پیداہوئی ہے وہ سب سے سوا ہے۔

مقابلہ :حسن کلام کا ایک طریقہ ’’مقابلہ ‘‘بھی ہے، بلاغت کے اعتبار سے مقابلہ کہتے ہیں کہ پہلے ایک بات ذکر کی جائے اور پھراس کے مقابلہ میں ایسی بات ذکرکی جائے جواس کے مقابل ہو، اس انداز کلام سے ایک خاص قسم کی تاکید، ہم آہنگی اور رعنائی وخوبصورتی پیدا ہوتی ہے، آپ ؐ کے کلام اور گفتگو میں یہ انداز اور طریقہ کثرت سے پایا جاتاہے، صرف ایک نمونہ ملاحظہ کیجئے۔ آں حضرت ؐ نے حضرت عائشہ ؓ سے فرمایا :

            علیک بالرفق یاعائشۃ فانہ ماکان فی شئی الا زانہ ولا تنزع من شئی الاشانہ عائشہ ! نرمی اختیار کرو کہ جس میں یہ وصف پایا جاتا ہے اس کو آراستہ کرتا ہے اور جو اس سے محروم ہواس کو عیب داربناتا ہے۔ (مستفاد ادب اسلامی ایک مطالعہ)

ایجاز واختصار کلام نبوی ؐ میں :ادب کے محاسن میں سے یہ بھی ہے کہ نہایت ہی اختصار کے ساتھ کم الفاظ میں زیادہ بات کہہ دی جائے یعنی جو گفتگو مختصر اور بامعنی ہوتی ہے اسے ایجاز کے اسلوب سے جانا جاتا ہے، اس کے بالمقابل کلام میں طوالت اور دراز نفسی ایک عیب ہے نہ کہ ہنر، ایسا کلام کہ سننے اور پڑھنے والے کے ذہن میں اس کی منزل مقصود متعین ہی نہ ہونے پائے۔ اور وہ الفا ظ کے بیابان میں اپنے آپ کو ایک گم کشتہ راہ مسافر تصور کرنے لگے۔

            آنحضرت ﷺ کی گفتگو او رکلام ماقل و دل کی تصویر ہوتی آپ کا کلام بلاغت نظام کی کیفیت سے معمور نظر آتا جس کے رنگ رنگ سے معنی ٹپکتا ہے اسی کو آپ ؐ نے ارشاد فرمایا أوتیت جوامع الکلم مجھکو مختصر اور پر معنی کلام کی توفیق خاص سے نوازا گیاہے۔ اوپر جواحادیث رسول اور دعاء رسول ذکر کی کی گئی ہیں وہ سبھی اس طرز کلا م کانمونہ ہیں۔

ضرب المثل او ر محاورے کلام رسول ؐ میں :ضرب المثل اور محاورے کلام کی خوبیوں اور محاسن میں سے ہیں ضرب المثل اور محاورے کی مقبولیت اور اثر انگیزی سے انکار نہیں کیا جاسکتا۔ آپ ؐ کے کلام میں بھی اس طرح کے مقبول عام فقرے محاورے اور اختراعی تعبیرات بہت زیادہ ہیں طوالت کے خوف سے صرف چندمحاورے اور اختراعی تعبیرات پیش کیے جاتے ہیں۔

1۔ المرء مع من احب                      آدمی جسے چاہے گا اس کے ساتھ حشر ہوگا۔

2۔ الدین النصیحۃ۔              دین خیرخواہی سے عبارت ہے۔

3۔ حوالیھا یُدندن                            اس کے اقرباء بڑ بڑا رہے ہیں یعنی اظہار ناراضگی کررہے ہیں۔

4۔ اعقل و توکل                             پہلے اونٹ کاگھٹنا باندھوپھر اللہ پر تؤکل کرو یعنی ہرمعاملہ میں پہلے

                                                اپنی طرف سے کوشش کرنی چاہئے پھر اللہ پر بھروسہ کرنا چاہئے۔

5۔ حوالینا ولاعلینا                         ہمارے گردو پیش ہولیکن ہم پرنہ ہو آں حضور ﷺ نے یہ الفاظ غیر

                                                متوقع بار ش کودور ہٹانے کے لئے دعائیہ انداز میں ارشاد فر مائے تھے۔

6۔ الا ٓن حمی الوطیس                     اب تنور بھڑکا ہے یعنی معرکۂ کار زار اب گرم ہے۔

7۔ ھدنۃ علی دخن وجماعۃ علی اقذاء   نیچے لڑائی کادھواں سلگ رہاہے اور اوپر صلح کی اوس،

                                                دلوں میں دشمنی کی کسک ہے او ربظاہر اصلاح کی رٹ۔ یعنی

                                                منہ میں رام رام بغل میں چھری۔

8۔ لاینتطح فیھا عنزان                     اس میں دوبکریوں کی کوئی لڑائی نہیں ہے یعنی اس معاملہ میں کسی

                                                کومجال اختلاف نہیں ہے۔

9۔ کل الصید فی جوف الفراء            ہاتھی کے پاؤں میں سب کا پاؤں

10۔ المرء بالقرین                          انسان دوست سے پہچانا جاتاہے۔

11۔ من جد وجد۔                           جس نے کوشش کی وہ کامیاب ہوا۔

12۔ من ضحک ضحک                  جودوسروں پر ہنستاہے دنیا اس پر ہنسے گی۔

13۔ رفقا بالقواریر                         آبگینوں کو ٹھیس نہ پہونچاؤ یعنی عورتوں پر شفقت اور رحمدلی کامعاملہ کرو۔

14۔ مات فلان حتف انفہ                  وہ فطری اور طبعی موت مرا۔

15۔ ایاکم وخضراء العمن                چمکتا جونظر آتا ہے وہ سب سونا نہیں ہوتا۔

16۔ ان المنبت لاارضا قطع ولا ظہرا یعنی ہرطر ف سبزہ ہی سبزہ ہے، دونوں ہاتھ میں لڈو۔

17۔ لایلدغ المومن من جحرمرتین۔     مومن ایک سوراخ سے دوبارہ نہیں ڈساجاتا۔

18۔ الید العلیا خیر من الید السفلی        دینے والا ہاتھ لینے والے ہاتھ سے بہتر ہے۔

19۔ اذا لم تستحی فاصنع مااشئت       بے حیا باش ہر چہ خواہی کن۔

20۔ لیس الخبر کالمعاینۃ                  سنی ہوئی بات دیکھی ہوئی بات کی طرح نہیں ہے، شنیدہ کے بود

                                                مانند دیدہ (نقوش سیرت رسول ؐ نمبر جلد۔ 8)

            الغرض تاجدار مدینہ رسول عربی اور بنی امی ؐ کی گفتگو اور کلام ان مضامین و معانی کاحامل ہوتاتھا جوانتہائی حکیمانہ عاقلانہ اور الہامات نبوت اور وحی الٰہی سے مأخوذ ہوتے تھے۔ آپ ؐ کے کلام وبیان کے یہ تمام محاسن کسبی نہیں تھے بلکہ وہبی اور توفیقی تھے اورزبان دانی کے یہ تمام کما لات آں حضرت ؐ کی ذات والا صفات میں ایک معجزہ بن کر نمایاں ہوئے تھے اور اس موہبت عظمی کی عطا کے لیے اللہ تعالیٰ نے آپ ؐ کی ذات والا کو انتخاب فرمالیاتھا۔ سابقہ اوراق میں بنی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے کلام کی انہی خوبیوں اورمحاسن کومیں نے مثالوں کے ساتھ پیش کیاہے۔

            مضمون کے اختتام پر مجھے اس بات کاشدید احساس ہے کہ ان چند صفحات میں آ ں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے    کلام وگفتگو، دعا وخطاب (تقریر) کے تمام اور ہمہ جہت ادبی محاسن اور رعنائی کواجاگر نہ کرسکا۔

            البتہ اہل ذوق حضرات سے گذارش او ردرخواست ہے کہ حضور ﷺ کے کلام اور احادیث نبوی کے فنی اور ادبی محاسن کوسمجھنے کے لیے درج ذیل کتابوں کی طرف رجوع کریں۔ جوبطور مراجع ومصادر نیچے لکھے جارہے ہیں۔

مراجع ومصادر

1۔ وحی الرسالۃ، احمد حسن زیات۔

2۔ الحدیث النبوی ؐ، مصطفی زرقاء۔

3۔ الحیاۃ الادبیۃ بعد ظہر الاسلام، الدکتور محمد عبد المنعم خفا جی۔

4۔ ادب الحدیث النبوی ؐ۔ الدکتور بکری شیخ امین۔

5۔ الحدیث النبوی مصطلحاتہ، بلاغتہ وکتبہ، محمد علی الصباغ۔

6۔ التصویر الفنی فی الحدیث النبوی ۔ محمد علی الصباغ۔

7۔ الحدیث النبوی الشریف من الوجھۃ البلاغیۃ۔ الدکتور کمال عزا لدین۔

8۔ فصاحت نبوی ؐ۔ ڈاکٹر ظہور احمد اظہر۔

9۔ سرور کونینؐ کی فصاحت۔ شمش بریلوی۔

10۔ ادب اسلامی ایک مطالعہ (مرتب رضوان القاسمی ؒ خالد سیف اللہ رحمانی)

11۔ نقوش رسول نمبر (لاہور) جلد مرتب ومدیر محمد طفیل۔

12۔ کاروان ادب سہہ ماہی نمبر (حدیث نبوی ؐ کی ادبی خصوصیات) ناشر رابطہ ادب اسلامی لکھنؤ۔

13۔ زاد المعاد۔ علامہ ابن قیم الجوزیہ۔

14۔ ماھنامہ نوائے ہادی (سیرت رسول ؐ نمبر) کانپور مدیر محمد اخلاق ندوی۔

مزید دکھائیں

محمد قمر الزماں ندوی

جنرل سکریٹری :مولانا علاء الدین ایجوکیشنل سوسائٹی، جھارکھنڈ

متعلقہ

Close