سیرت نبویﷺ

فادرس ڈے پر ایک خصوصی تحریر- ایک مشفق باپ: حضرت محمد ﷺ

ذکی الرحمن فلاحی مدنی
بیٹیوں کے مشفق باپ:حضرت محمدﷺ 
امِ ایمن برکہ نامی خاتون بڑی تیزی کے ساتھ مکہ کے بازاروں سے گزر رہی ہیں۔ خوشی وفرحت سے ان کا چہرا تمتمایا ہواہے۔اچانک وہ ایک خاتون سلیمہ خزاعیہ سے ٹکرا جاتی ہیں۔سلیمہ خزاعیہ ناراض ہوکر امِ ایمن پر چیختی ہیں:
۔امِ ایمن!کیا ہوگیا ہے؟تم اتنی تیزی سے کہاں بھاگی جارہی ہو؟
۔میں ’’الصادق الامین‘‘ محمدؐ کو خوش خبری دینے جارہی ہوں کہ ان کی اہلیہ حضرت خدیجہؓ الطاہرہ نے چوتھی بیٹی کو جنم دیا ہے۔
۔(مارے حیرت واستعجاب کے سلیمہ خزاعیہ کا منھ کھلا کا کھلا رہ جاتا ہے)کیا تم انہیں چوتھی بیٹی کی خبردینے والی ہو؟
۔ جی ہاں!
۔(تھوڑا قریب آکر رازدارانہ انداز میں)امِ ایمن !مجھے سچی بات نہیں بتاؤگی؟
۔کس بارے میں؟
۔یہی کہ تمہارے مالک حضرت محمدؐکااپنی چوتھی بیٹی کی خبر سن کر کیا ردِ عمل ہوگا۔
۔(ہنستے ہوئے)تمہارے اس سوال نے مجھے وہ دن یاد دلا دیا جب حضرت خدیجہؓ نے اپنی پہلی بیٹی زینب کو جنم دیا تھا اورمجھ سے کہا گیا تھا کہ یہ خبر محمدؐ کو سناآؤں۔میں خوف وہراس اور اندیشوں میں گرفتار آپﷺ کی خدمت میں حاضر ہوئی تو مجھے توقع تھی کہ اس معصوم نومولود کا مقدر اور لوگوں کی بچیوں کی طرح ایک گہرے گڈھے میں زندہ دفن ہونا ہے۔ لیکن سلیمہ!وہاں میں نے جو معاملہ دیکھا اس نے مجھے حیرت میں ڈال دیا۔
۔کیا ہوا تھا؟
۔ارے جیسے ہی محمدؐ نے سنا کہ ان کی زوجۂ محترمہؓ نے بیٹی کو جنم دیا ہے ان کا چہرا کھِل اٹھا اور مارے خوشی کے تقریباً دوڑکر انھوں نے بیٹی کو گلے سے لگا لیا۔مجھے تو ایسا لگ رہاتھا کہ گویا انھیں اس بچی کی شکل میں سعادت کی کنجی ہاتھ آگئی ہے۔ انھوں نے بچی کو چوما،سینے سے لگاکر بھینچا اور بچی کی والدہ کو مبارک باد دی۔پھر پہلا کام یہی کیا کہ قربانی کے جانوروں8 کو ذبح کر کے اچھا خاصہ عقیقہ کا دستر خوان بچھا دیا۔جی ہاں محمدؐ کا ردِ عمل کچھ ایسا ہی تھا۔‘‘
امِ ایمن برکہ نے اتنا کہہ کر دوبارہ اپنی راہ لی،جب کہ سلیمہ خزاعیہ چہرا نیچے کیے گہری سوچ میں پڑ گئیں۔وہ سوچ رہی تھیں کہ انھیں تین بار اپنی چھوٹی چھوٹی بچیوں کی موت کا غم اٹھانا پڑا ہے،کیونکہ ان کے شوہر کو لڑکیاں پسند نہیں اور وہ ہمیشہ نوزائیدہ بچی کو زندہ درگور کردیتا ہے۔اس کی سنگ دلی اور قساوت اس درجہ پہونچی ہوئی ہے کہ دفن ہوتے ہوئے جگر کے ٹکڑوں کے رونے چلانے سے بھی وہ نہیں پسیجتا اور خود سلیمہ کی ہزار منتوں اور فریادوں کو خاطر میں نہیں لاتا۔یہ قساوت صرف ایک انہی کے شوہر کے ساتھ خاص نہیں،بلکہ اس وقت کے عرب معاشرے میں زیادہ تر باپوں کا حال یہی تھا۔اس معاشرہ میں لڑکیوں کو زندہ درگور کرنا ایک فیشن سابن گیا تھا اور قبر کے گڈھے کو لڑکیوں کی سسرال مانا جانے لگا تھا۔
حقیقت بھی یہی تھی کہ جوشخص اپنی بچیوں کو زندہ درگور نہ کرتا،اسے زندگی بھر ذلت کے ساتھ لوگوں کے طعن وتشنیع سہناپڑتے تھے۔بڑی مشکل سے اگر لڑکیوں کا رشتہ کہیں ہوجاتا ہے تو وقتِ رخصتی بیٹی کے لیے باپ کی دعا یہی ہوتی تھی کہ ’’اللہ تمہیں توانگری میں رکھے اور تمہارے بطن سے لڑکے پیدا ہوں،لڑکیاں نہ ہوں اور اللہ تعالیٰ تمہاری بدولت تمہارے خاندان کی تعداد،عزت اور قوت میں اضافہ فرمائے۔‘‘یہ دعا اس وقت مانگی جاتی تھی جب کہ لڑکی کی شادی کہیں قریبی رشتہ داری میں ہوئی ہو،اور اگر ایسا نہیں ہے تو دعا یہ ہوتی تھی کہ’’ نہ توآسانیوں میں رہے اور نہ ہی تجھ سے لڑکوں کی ولادت ہو،کیونکہ تیری وجہ سے دور دراز والوں سے قرابت بڑھانی پڑتی ہے اور تیرے بچے بھی ہماری قوم کے لیے اجنبی ہوتے ہیں۔‘‘(واقعہ کی تفصیل کے لیے دیکھیں:کتاب المحبر،ابن حبیبؒ :ص310)
حضرت سلیمہ خزاعیہ کی دانست میں اِس عرب معاشرے میں محمدؐ کا یہ رویہ حیرت ناک تھا۔انھوں نے دل سے تمنا کی کہ کاش دنیا کے تمام باپ۔بشمول ان کے اپنے شوہر کے۔محمدؐ کی طرح ہوتے۔دراصل حضرت سلیمہ خزاعیہؓ کو اس وقت تک نہیں معلوم تھا کہ آج کا ’’الصادق الامینؐ‘‘ مستقبل میں پوری انسانیت کے لیے رحمتِ الٰہی بننے والا ہے۔اگر مان لیں کہ اس وقت ان کی نگاہوں سے غیب کی چادر ہٹا دی جاتی،تو وہ دیکھ سکتیں کہ الصادق الامین محمدؐ کو منصبِ رسالت تفویض کیا گیاہے اور وہ ایسادینِ حق لے کر آئے ہیں جس میں بچیوں کو زندہ درگورکرنا حرام ہے اورجس میں صنفِ نازک کو اکرام واحترام کا مقام بخشا گیا ہے۔
اس دین کی کتابِ منشور ودستور میں صاف لکھا ہے کہ مرد اور عورت دونوں ایک اصل سے متفرع اور ایک مصدر سے مستفاد ہیں۔(یَا أَیُّہَا النَّاسُ اتَّقُواْ رَبَّکُمُ الَّذِیْ خَلَقَکُم مِّن نَّفْسٍ وَاحِدَۃٍ وَخَلَقَ مِنْہَا زَوْجَہَا وَبَثَّ مِنْہُمَا رِجَالاً کَثِیْراً وَنِسَاء وَاتَّقُواْ اللّہَ الَّذِیْ تَسَاء لُونَ بِہِ وَالأَرْحَامَ إِنَّ اللّہَ کَانَ عَلَیْْکُمْ رَقِیْبا)(نساء،1)’’لوگو!اپنے رب سے ڈرو جس نے تم کو ایک جان سے پیدا کیا اور اسی جان سے اس کا جوڑا بنایا اور اِن دونوں سے بہت مرد عورت دنیا میں پھیلا دیے۔اس خدا سے ڈرو جس کا واسطہ دے کرتم ایک دوسرے سے اپنا حق مانگتے ہو،اور رشتہ وقرابت کے تعلقات کو بگاڑنے سے پرہیز کرو۔یقین جانو کہ اللہ تم پر نگرانی کر رہا ہے۔‘‘دینِ اسلام ایسی جامع ومانع شریعت لے کر آیا ہے جو سماج میں عورت کے مقام ومرتبہ کا صحیح تعین کرتی ہے اور زندگی کے تمام مراحل میں عورت کو ایک باعزت بیٹی،بہن،بیوی اور ماں کا درجہ دیتی ہے۔
لڑکیوں کی ولادت کے بارے میں اللہ کے رسولﷺ کا موقف وہی تھا جو کسی دردمند انسانی باپ کا ہونا چاہیے۔ آپﷺ بیٹیوں کی پیدائش کا نہایت خوشی وشادمانی سے خیر مقدم کرتے تھے۔ دنیا کے تمام قسی القلب اور رحمت سے خالی والدین کے لیے آپﷺکا رویہ ایک عملی سبق ہے،جو یاد دلاتاہے کہ بیٹی کی شکل میں جنت کا پھول ان کی گود میں اس لیے ڈالا گیا ہے کہ اس کے سبب دلوں میں مامتا ابھر آئے اور والدین اس کی اچھی تعلیم وتربیت کو اپنے لیے وسیلۂ مغفرت وخوشنودیِ رب بنالیں۔
اس وقت کے عرب معاشرے میں عورت کی حالت کیا تھی اس کا اندازہ ارشادِ باری سے کیجئے:(وَإِذَا بُشِّرَ أَحَدُہُمْ بِالأُنثَی ظَلَّ وَجْہُہُ مُسْوَدّاً وَہُوَ کَظِیْم*یَتَوَارَی مِنَ الْقَوْمِ مِن سُوءِ مَا بُشِّرَ بِہِ أَیُمْسِکُہُ عَلَی ہُونٍ أَمْ یَدُسُّہُ فِیْ التُّرَابِ أَلاَ سَاء مَا یَحْکُمُون)(نحل،58۔59)’’جب ان میں سے کسی کو بیٹی کے پیدا ہونے کی خوش خبری دی جاتی ہے تو اُس کے چہرے پر کلونس چھاجاتی ہے اور وہ بس خون کا گھونٹ پی کر رہ جاتا ہے۔لوگوں سے چھپتا پھرتا ہے کہ اس بری خبر کے بعدکیا کسی کو منھ دکھائے۔سوچتا ہے کہ ذلت کے ساتھ بیٹی کو لیے رہے یا مٹی میں دبا دے؟دیکھو کیسے برے حکم ہیں جو یہ خدا کے بارے میں لگاتے ہیں۔‘‘
ایسے عورت بیزار سماج میں آپﷺ کا طرزِ عمل خود اس بات کی دلیل ہے کہ آپﷺ اللہ کے سچے رسول تھے اور بے پایاں خدائی رحمت وعنایت کے عظیم الشان مظہر۔ارشادِ ربانی ہے:(وَمَا أَرْسَلْنَاکَ إِلَّا رَحْمَۃً لِّلْعَالَمِیْنَ) (انبیاء،107)’’اے محمدؐ ہم نے جو تم کو بھیجا ہے تو یہ دراصل دنیا والوں کے حق میں ہماری رحمت ہے۔‘‘
نورِ نظرولختِ جگر بیٹیاں:
اللہ تعالیٰ نے اپنے رسولﷺ کو حضرت خدیجہؓ الکبری کے واسطے سے چار بیٹیوں سے نوازا تھا۔ان کے اسمائے گرامی بالترتیب زینبؓ،رقیہؓ،ام کلثومؓ اور فاطمہؓ الزہرا ہیں۔یہ چاروں بیٹیاں اللہ کے رسول ﷺکی شفقت ومحبت کے سائے میں اور حضرت خدیجہؓ کی مادرانہ توجہ واہتمام کے ساتھ بڑی ہوئی تھیں۔ گھر کا ماحول پاکیزہ وپرجلال اورخانگی فضا شرافت وبزرگی سے معطر تھی۔
بڑی بیٹی کی شادی خالہ زاد بھائی حضرت ابو العاص بن الربیع سے ہوئی،دوسری اور تیسری بیٹی کی شادی اللہ کے رسولﷺ کے چچا ابو لہب کے دونوں بیٹوں عتبہ اور عتیبہ سے ہوئی تھی۔حضرت فاطمہؓ صغرِ سنی کی وجہ سے گھر ہی میں مقیم تھیں۔ آپﷺ کی بعثت ونبوت کے بعد حضرت خدیجہؓ اور چاروں بیٹیاں ایمان کی دولت سے بہرہ ور ہوگئیں۔اللہ کے رسولﷺ لوگوں کو اسلام کی دعوت دیتے تھے،لیکن قریش اس کونہ ماننے پربضد اور حتی الوسع کوشش کر کے اس دعوت کو روکنے کے لیے سرگرداں تھے۔اسی سلسلے میں صلاح ومشورے کے لیے قریش کے سربراہوں کی مجلسیں ہوتی رہتی تھیں۔ ایک روزدورانِ مشورہ کسی شرپسند نے کہا:’’دراصل تم نے محمدؐکو خانگی جھمیلوں سے چھٹکار دے رکھا ہے،اس لیے اسے آزادی ملی ہوئی ہے کہ سکون واطمئنان کے ساتھ اپنی دعوت پھیلاتا رہے۔اگر ایساہوجائے کہ اس کی بڑی بیٹی زینبؓ کو ابوالعاص طلاق دے اور رقیہؓ وامِ کلثومؓ کو عتبہ اور عتیبہ چھوڑ دیں،تو محمدؐ اپنے خانگی مسائل میں الجھ کر اس نئی بدعت کو چھوڑنے پر مجبور ہوجائے گا۔‘‘
مشورہ سے اس تجویز کو پاس کر لیا گیااور آپﷺ کے تینوں دامادوں سے اس کے متعلق بات کی گئی۔تینوں دامادوں کو اس پنچایتی حکم کی تعمیل میں تردد تھاکہ ہر ایک اپنی شریکِ حیات کی خوبیوں کا معترف اور ان سے محبت رکھتا تھا۔انھیں معلوم تھا کہ ان کی بیویوں کا نعم البدل ملنا ناممکن ہے،نیزیہ کہ اُن کا ضمیر کسی دوسری بیوی کا تصور بھی نہیں کرسکتا۔اس موقع پرابولہب کی کافر وملعون بیوی نے حسد وکینہ دکھاتے ہوئے زعمائے قریش کے اس حکم کی تعمیل کے لیے دونوں بیٹوں کو مجبور کرنا شروع کر دیا۔
اس بدبخت کی دھمکی تھی کہ میرادودھ تمہارے سر حرام ہے اگر تم محمدؐ کی دونوں بیٹیوں کو طلاق دے کر واپس اس کے گھرنہیں بھیجتے۔ماں باپ اور قبیلہ کے دباؤ میں ابولہب کے دونوں بیٹوں نے اپنی بیویوں کو طلاق دے دی اور حضرت رقیہؓ اور حضرت امِ کلثومؓ واپس اپنے میکے تشریف لے آئیں۔قریش کے چلائے اس تیر سے آپﷺ کا شفیق ورحیم دل کس درجہ لہولہان ہوا ہوگا،سمجھا جاسکتا ہے۔ بارگاہِ ایزدی سے جلد ہی فیصلہ ہوااور دونوں دختران زیادہ دنوں تک میکے میں بیٹھی نہ رہیں۔
حضرت رقیہؓ کا نکاح بہت جلد حضرت عثمانؓ غنی سے ہوگیا۔حضرت عثمانؓ کے مناقب وفضائل کا بیان ایک طویل کتاب کا طالب ہے۔یہاں اتنا جان لیجئے کہ آپ قبیلۂ قریش کے نہایت عالی نسب اور متمول خاندان سے تھے۔آپؓ سب سے پہلے آٹھ اسلام لانے والوں میں سے ہیں اور جن دس صحابہؓ کو دنیا میں رہتے ہوئے جنتی ہونے کی بشارت ملی ہے، آپ ان میں سے ایک ہیں۔سیرت کی کتابوں میں آپ کو دوہجرتوں والا(ذو الہجرتین) بھی کہا جاتا ہے کہ آپﷺ نے قریش کے مظالم سے تنگ آکر اپنی زوجہ حضرت رقیہؓکے ساتھ ملکِ حبشہ ہجرت کی تھی۔اس طرح سے زوجین کا یہ جوڑا سب سے پہلے تاریخِ اسلام میں ہجرت کرنے والا جوڑا بن گیا۔مدینہ منورہ کے دار الہجرت قرار پاجانے کے بعد حضرت عثمانؓ اور ان کی اہلیہؓ نے وہاں بھی ہجرت کی۔اس طرح آپؓ کے حصہ میں دو ہجرتوں کا اجراورمنزلت جمع ہوگئے تھے۔مدینہ منورہ ہجرت کے بعد حضرت رقیہؓشدید بیمار ہوگئیں اور اسی مرض میں آپ کی وفات بھی ہوئی۔ مورخین کہتے ہیں کہ آپ کی وفات خاص اسی دن واقع ہوئی جس دن معرکۂ بدر میں مسلمانوں کی فتح مندی کی خبر لانے والاقاصد مدینہ منورہ پہونچا تھا۔(السیرۃ النبویۃ،ابن ہشامؒ :2/285)
حضرت عثمانؓ اپنی پیاری شریکِ حیات کا صدمہ برداشت نہیں کر پارہے تھے۔ان کی دانست میں اب اللہ کے رسولﷺ سے دامادی و قرابت کا رشتہ منقطع ہوگیا تھا۔آپﷺ نے اُن کی دگرگوں حالت کو دیکھتے ہوئے خیریت پوچھی توفرمایا:جو مجھ پر گزری ہے ،کیا وہ کسی اور پر بھی گزری ہے؟اللہ کے رسولﷺ کی بیٹی میرے عقد میں تھیں، وفات پاگئیں جس سے میری کمر ٹوٹ گئی ہے،مزید یہ کہ اب رسولِ خداﷺ سے قرابتِ دامادی کا رشتہ بھی ختم ہوگیا۔‘‘
اللہ کے رسولﷺ نے یہ سن کر تسلی دی اور ان کا نکاح تیسری بیٹی حضرت امِ کلثومؓ سے کردیا۔حضرت امِ کلثومؓ بھی حضرت عثمانؓ کے عقد میں تازندگی باقی رہیں تاآنکہ چھ سال بعد سن9ھ میں آپ کی وفات بھی ہوگئی۔(ذو النورین عثمانؓ بن عفان،عباس محمود العقادؒ : ص78۔79)کہا جاتا ہے کہ حضرت عثمانؓ کو ذو النورین یعنی ’دونور والا‘ کہے جانے کی وجہ یہی ہے کہ اللہ کے رسولﷺ کے دوجگرگوشے پے درپے آپؓ کے عقد میں آئے تھے جبکہ تاریخ میں منقول نہیں ہے کہ کسی اور نے بھی کسی نبی کی دو بیٹیوں کی زوجیت پائی ہے۔ایک دوسرا قول یہ بھی ہے کہ ذو النورین آپؓ کو اس لیے کہاجاتا ہے کہ اللہ کے رسولﷺ نے ان کے بارے میں فرمایا تھا:اس انسان(حضرت عثمانؓ)کو آسمانوں میں دونور والا کہا جاتا ہے۔‘‘[ذاک امرء یدعیٰ فی السماء ذا النورین](السیرۃ النبویۃ، ابن ھشامؒ :2/219)شارحینِ حدیث کہتے ہیں کہ حضرت عثمانؓ کا معمول تھا کہ قیامِ لیل کرتے ہوئے روزانہ ایک قرآنِ کریم ختم فرماتے تھے۔چونکہ قرآنِ کریم نور ہے اور قیامِ لیل بھی نور ہے اس لیے آپ کو دو نور والا کہا جاتا ہے۔
پیچھے گزر چکا ہے کہ آپﷺ کے سب سے بڑے داماد۔حضرت زینبؓکے شوہر۔کا نام حضرت ابو العاص تھا۔ قریشی سرداروں نے انہیں بھی حضرت زینبؓ کو طلاق دینے کی فرمائش کی تھی اور بدلے میں کسی بھی قریشی خاندان کی کسی بھی لڑکی سے شادی کرانے کا لالچ دیا تھا۔ حضرت ابو العاص کاجواب نفی میں تھا اور انھوں نے فرمایاکہ خدا کی قسم! میں ایسا کبھی نہیں کرسکتا،میں سوچ بھی نہیں سکتاکہ اپنی بیوی کوچھوڑ کر قریش کی کسی عورت کو اپنے عقد میں لاؤں۔‘‘(الأفراد،دارقطنیؒ :3/82)
زمانہ تیزی سے گزرتا رہا اور آپﷺ کے مددگار چچا ابوطالب وفات پاگئے۔کچھ ہی عرصہ بعد ہر غم کی غمگسار شریکِ زندگی بھی داغِ فراق دے گئیں۔قریش کی ایذارسانی عروج کو پہونچی تو پردۂ غیب سے مدینہ منورہ کے حق میں فیصلہ ہوگیا کہ اب یہی شہرِ یثرب دعوتِ اسلام کا مرکزبنے گا۔آپﷺ ہجرت فرما کر مدینے میں ایک صاحبِ خانہ کی مانند اطمئنان وسکون سے اقامت گزیں ہوگئے۔کچھ دنوں بعد قریش کی چھیڑ چھاڑ کے نتیجے میں’’غزوۂ بدر‘‘ کا عظیم الشان معرکہ پیش آیا جس میں قریش کے بڑے بڑے سرغنہ اور شہسوار کام آئے اور بڑی تعداد میں قریشی جنگجوؤں کو قیدی بنا یا گیا۔
ان قریشی قیدیوں میں ایک نام حضرت ابو العاص کا بھی تھا جو ابھی تک اسلام نہیں لائے تھے اور جنگِ بدر میں کفارِ قریش کی جانب سے لڑنے آئے تھے۔قریش نے قیدیوں کا فدیہ دینا شروع کیاتوابو العاص کے بھائی بندوں نے بھی ان کے فدیہ کی رقم اکٹھا کرنے کی کوشش کی۔ایک قیدی کا فدیہ چار ہزار درہم منظور ہوا تھا۔حضرت ابو العاص کے فدیہ میں ان کی بیوی اور دخترِ رسولﷺ حضرت زینبؓ نے درہموں میں کمی کی وجہ سے ایک قیمتی ہار بھی بھیجا۔حضرت زینبؓ کے پاس حضرت خدیجہؓ کا ایک قیمتی گلے کا ہار تھا جوساس(حضرت خدیجہؓ) نے رخصتی سے کچھ پہلے اپنے داماد حضرت ابو العاص کو ہدیہ دیا تھا۔مورخ ابنِ اسحاقؒ کہتے ہیں:ابو العاص کے فدیہ میں آئے مال کے اندر جب آپﷺ کی نظر اس ہار پر پڑی تو آپﷺ پر شدید رقت طاری ہوگئی،اوراسی حالت میں صحابہؓ کرام سے فرمایا:’’اگر(میری خاطر) تمہاری رائے بنتی ہے کہ زینبؓ کے قیدی کو چھوڑ دو اور اس کا بھیجا مال اسے لوٹا دو تو ضرور کر دو۔‘‘صحابہ کرامؓ نے منشائے رسالتﷺ کی تعمیل کرتے ہوئے حضرت ابو العاص کو جانے دیا اور ان کے فدیہ کی رقم بھی واپس کردی۔(السیرۃ النوویۃ،ابن ہشامؒ :2/225)
حضرت ابو العاص کوآزاد کرتے ہوئے اللہ کے رسولﷺ نے یہ وعدہ لیا تھا کہ وہ حضرت زینبؓ کو مدینہ آنے دیں گے۔حضرت ابو العاص نے مکہ پہونچ کر اپنے بھائی ’’کنانہ‘‘ کی ہم رکابی میں علی الاعلان حضرت زینبؓ کومدینہ کے لیے روانہ کر دیا۔حضرت زینبؓ اونٹ کے اوپر ہودج میں تشریف فرما تھیں کہ قریش کے شیطان صفت سردار ’’ہبار بن الاسود‘‘ اور اس کے کچھ لوگوں نے راستہ روک لیا۔’’ہبار‘‘ کے ہاتھ میں نیزہ تھا جس سے وہ بار بار حضرت زینبؓ کو مارنے کی دھمکی دے رہا تھا۔اس وقت حضرت زینبؓ پیٹ سے تھیں،ہبار کی آپادھاپی میں آپ ہودج سے گر گئیں اور حمل ساقط ہوگیا۔ حضرت زینبؓ کے دیور ’’کنانہ‘‘ نے جب یہ ماجرا دیکھا،تو انہوں نے ترکش کے تیر نکال کر آگے رکھ لیے اور کہاکہ اب اگر کسی نے قریب آنے کی جرأت کی تو اس کے سینے میں تیر اتار دیں گے۔لوگ بات بڑھتی دیکھ کر چیخنے چلانے لگے۔ اسی اثنا میں اُس وقت قبیلۂ قریش کے سردار ’’ابوسفیان‘‘وہاں آگئے اور انھوں نے سرِ عام دن میں حضرت زینبؓ کو مدینہ لے جانے کے عمل کو غلط ٹھہرایا۔انھوں نے ’’کنانہ‘‘ سے گزارش کی کہ فی الوقت وہ گھر لوٹ جائیں اور جب ماحول پر سکون ہوجائے تو رات میں کسی پہر حضرت زینبؓ کو لے کر مدینہ کے لیے نکلیں۔پھر ایسا ہی کیا گیا۔
اللہ کے رسولﷺ کو جب اس حادثہ کی اطلاع ہوئی تو آپﷺ بیحد غضبناک ہوئے اور صحابہؓ کرام سے فرمایا کہ: ’’تم لوگ اگرکبھی ہبار اور اس کے ساتھیوں پر قابو پاجاؤ تو انہیں زندہ جلا دینا۔‘‘اس کے بعد اگلے دن آپﷺ نے فرمایا:’’میں نے کل کہا تھا کہ اگر تم ہبار اور اس کے ساتھیوں کو پکڑ لو تو انھیں زندہ جلا دینا،اب میری رائے بدل گئی ہے، کیونکہ آگ سے عذاب دینا سوائے خدا کے کسی اورکے لیے جائز نہیں۔اب اگر تم انھیں پاجاؤ تو صرف قتل کر دینا۔‘‘ (السیرۃ النبویۃ،ابن ہشامؒ :2/223)
بعد میں ایک موقع پر جب حضرت ابو العاص ایک قافلہ کو لے کر مکہ تشریف لا رہے تھے تو ان کی مٹھ بھیڑ حضرت زیدؓ بن حارثہ کے زیرِ قیادت بھیجی ہوئی ایک اسلامی ٹکڑی سے ہوگئی۔اسلامی سریہ کے افراد نے شام سے آرہے اس قافلہ پر قبضہ کر لیا۔حضرت ابو العاص کسی طرح اپنی جان بچا کر مدینہ میں حضرت زینبؓ کے پاس پہونچ گئے اور ان کی پناہ طلب کی۔حضرت زینب نے اپنے مشرک شوہر کی حالت کو دیکھا اور مسجد نبوی تشریف لائیں۔اس وقت مسجد میں آپﷺ نماز کی تکبیریں کہہ رہے تھے اور لوگ بھی ایسا ہی کرتے جاتے تھے۔حضرت زینبؓنے یہاں بلند آوازمیں چیخ کر کہا: ’’اے مسلمانوں! میں نے ابو العاص بن الربیع کو امان دی ہے۔‘‘
جب اللہ کے رسولﷺ نے نماز سے سلام پھیرا تو فرمایا:کیا تم لوگوں نے وہی سنا ہے جو میں نے سنا؟لوگوں نے اثبات میں جواب دیا تو آپﷺ نے فرمایا: ’’قسم اس معبودِ برحق کی جس کے ہاتھ میں محمدؐ کی جان ہے،تمہارے اور میرے اِس سننے سے پہلے مجھے ماجرے کا قطعی علم نہ تھااور بیشک مسلمانوں کا ادنیٰ سے ادنیٰ فرد بھی پوری جماعت کی طرف سے کسی کو امان یاپناہ دے سکتا ہے۔‘‘پھر اللہ کے رسولﷺ وہاں سے ہٹ کراپنی بیٹی زینبؓ کے پاس تشریف لائے اور فرمایا: ’’میری بیٹی!اچھی طرح اس کی مہمان نوازی کرنا،مگر یاد رہے تم اس کے لیے حلال نہیں ہو اس لیے وہ تم سے کسی قسم کا تعلق نہ بنا پائے۔‘‘(السیرۃ النبویۃ،ابن ہشامؒ :2/234)
عام مسلمانوں نے بھی حضور رسالت مآبﷺکے پاسِ خاطر میں ابو العاص کا سامانِ تجارت انھیں واپس لوٹا دیا۔ ابو العاص اموالِ تجارت کو لے کر مکہ لوٹ آئے اور آتے ہی ہر صاحبِ حق کو اس کا حق ادا کرنا شروع کر دیا۔سب کی امانتیں اور حقوق ادا کرنے کے بعد انھوں نے قریش کے سامنے کلمۂ شہادت پڑھا اور کہا: ’’مدینہ میں رہتے ہوئے مجھے قبولِ اسلام سے جو چیز روکے ہوئے تھی وہ یہ کہ تم میرے تئیں بدگمانی نہ کرنے لگو اور کہتے پھرو کہ ابو العاصؓ کے قبولِ ایمان کا مقصد یہ تھا کہ وہ ہمارا تجارتی مال ہڑپ کرناچاہتاتھا۔اب میں نے تمہارے اموال اورسامانِ تجارت تمہیں لوٹا دیا ہے اور فارغ ہوں،تو اب میں اسلام لے آیا ہوں۔‘‘
اس کے بعد انھوں نے سیدھا مدینہ منورہ کا رخ کیااور وہاں پہونچ کر اللہ کے رسولﷺ کو اپنے اسلام لانے کی خبر دی۔آپﷺ نے سن کر خوشی کا اظہار کیا اور تعریف فرمائی اور بیٹی زینبؓ کوجو پہلے سے اُن کے نکاح میں تھیں حوالے کر دیا۔اس واقعہ کے ٹھیک ایک سال بعد حضرت زینبؓ کی وفات ہوئی اورپسماندگان میں اپنے شوہر کے علاوہ ایک بیٹے علی اور ایک بیٹی امامہ کوچھوڑا۔یہ دو بچے ایک وفا شعار بیوی کی طرف سے اپنے محبوب شوہر کے لیے سامانِ تسلی تھے۔کہا جاتا ہے کہ ان کی بیٹی’’امامہ‘‘ہوبہو اپنی والدہ ماجدہ پر تھیں اور اللہ کے رسولﷺ بھی اپنے لختِ جگر کے غم کو امامہ کی محبت وموانست کے ذریعہ ہی کم کرتے تھے۔آپ ﷺاپنی نواسی امامہ سے محبت وشفقت کا امتیازی معاملہ فرماتے۔ صحیحین میں مروی ہے کہ آپﷺ امامہ کو کاندھوں پر بٹھاتے اور اسی حالت میں نمازیں پڑھ لیا کرتے۔جب سجدے کی حالت میں پہونچتے تو انھیں اتار کر ایک طرف رکھ دیتے اور دوبارہ کھڑے ہوتے وقت انھیں پھر گود میں اٹھا لیتے۔[کان یحملھا علیٰ عاتقہ ویصلی بھا فاذا سجد وضعھا حتی یقضی صلاتہ ثم یعود فیحملھا](صحیح بخاریؒ :5650۔صحیح مسلمؒ :1241)
اللہ کے رسولﷺ کی چوتھی بیٹی حضرت فاطمہؓ الزہراء ہیں جن کے بارے میں ام المومنین حضرت عائشہؓ کا تبصرہ ہے کہ ’’میں نے فاطمہؓ سے افضل کسی کو نہ پایا،البتہ فاطمہؓ کے والدﷺ اس سے مستثنیٰ ہیں۔‘‘(معجم اوسط،طبرانیؒ :137۔ مسندابویعلیؒ :153) پھر انہی کے بارے زبانِ رسالتﷺ سے صادر ہوا ہے کہ: ’’فاطمہؓ جنت کی عورتوں کی سردار ہیں۔‘‘ [فاطمۃ سیدۃ نساء أھل الجنۃ](صحیح بخاریؒ ،باب مناقب فاطمہؓ:5928۔صحیح مسلمؒ :6467)اور یہ کہ: ’’فاطمہ میرے جسم کا ایک ٹکڑا ہے،لہٰذا جس نے انھیں ناراض کیا اس نے مجھے ناراض کیا۔‘‘[فاطمۃ بضعۃ منی فمن أغضبھا فقد أغضبنی](صحیح بخاریؒ :3510۔صحیح مسلمؒ :6461)
حضرت عائشہؓ فرماتی ہیں:جب فاطمہؓ اللہ کے رسولﷺ کی خدمت میں حاضر ہوتی تھیں تو آپﷺ اٹھ کر استقبال کرتے،بوسہ لیتے اور اپنے پاس بٹھاتے،اور اگر اللہ کے رسولﷺ اُن کے پاس تشریف لے جاتے تو فاطمہؓ کھڑی ہوکر خیر مقدم کرتیں،پیشانی چومتیں اور اپنے قریب بیٹھنے کو کہتی تھیں۔(سنن ترمذیؒ :2376۔سنن ابو داؤدؒ :1423) حضرت عائشہؓ ہی سے مروی ہے کہ ایک مرتبہ حضرت فاطمہؓگھر تشریف لائیں تو ان کے چلنے کا انداز بالکل ان کے والدﷺ جیسا تھا۔اللہ کے رسولﷺنے انھیں دیکھ کرخیر مقدم کیا اور اپنے داہنے بٹھایا اور پھر کان میں کچھ سرگوشی کی جسے سن کر فاطمہؓ روپڑیں۔ آپﷺ نے دوبارہ ان کے کان میں کچھ کہا جسے سن کر وہ ہنسنے لگیں۔میں(حضرت عائشہؓ)نے دل میں کہا کہ آج تک اتنی جلدی غمگین ہونے پھر خوش ہوجانے کا معاملہ نہیں دیکھا۔بعد ازاں میں نے حضرت فاطمہؓ سے ان سرگوشیوں کے بارے میں پوچھا تو انھوں نے فرمایا کہ میں اللہ کے رسولﷺ کا راز افشاں نہیں کرسکتی۔ جب اللہ کے رسولﷺ کی وفات ہوگئی تو میں نے دوبارہ اس بارے میں حضرت فاطمہؓ سے پوچھا تب انھوں نے کہا:آپﷺ نے مجھ سے کہا تھا کہ ’’حضرت جبریلؑ ہر سال میرے ساتھ ایک بار قرآن کا دور کرتے تھے لیکن انھوں نے اس سال دوبار کیا ہے،جس سے مجھے لگتا ہے کہ میری وفات کا وقت قریب ہے۔تم میرے اہلِ خانہ میں سب سے پہلے مجھ سے آملوگی اور میں تمہارے لیے بہترین سلف بن کر تمہارا منتظر رہوں گا۔‘‘میں یہ سن کر روپڑی تھی۔پھر آپﷺ نے مجھ سے کہا کہ کیاتم راضی نہیں ہو کہ تم تمام جہانوں میں عورتوں کی سردار بن جاؤ؟میں یہ سن کر ہنس پڑی تھی۔(صحیح بخاریؒ :5928۔صحیح مسلمؒ :6467)
حضرت فاطمہؓ کی ولادت خاص اسی دن ہوئی،جس دن آپﷺ نے تعمیرِ کعبہ کے مسئلہ میں تحکیم وثالثی فرمائی تھی۔ دراصل قریش آپﷺ کی نبوت سے پہلے خانۂ کعبہ کی ازسرِ نو تعمیر کرنا چاہتے تھے۔لیکن جب تعمیر اس مرحلہ میں پہونچی کہ دیوارِ کعبہ میں حجرِ اسود نصب کردیا جائے،تو قریشی خاندانوں میں اختلاف پیدا ہوگیا۔قریب تھا کہ یہ اختلاف ایک ہمہ گیر خانگی جنگ کا پیش خیمہ بن جائے،لیکن ایک بزرگ کے مشورہ سے سب نے اتفاق کر لیا کہ جو سب سے پہلے مسجد میں داخل ہوگا اس کا فیصلہ مان لیا جائے گا۔بارے نصیب کہ سب سے پہلے آپﷺ تشریف لائے۔ آپﷺ کو دیکھتے ہی سارا مجمع بول اٹھا کہ یہ’’ الامین‘‘ ہیں ہم ان کے فیصل بننے سے راضی ہیں۔اللہ کے رسولﷺ نے اس قضیے کا نپٹارا اس طورکیا کہ ایک دراز چادر بچھا ئی اور اس میں حجرِ اسود رکھ دیا اور ہر خاندان کے ایک نمائندے کو اس چادر کاکنارہ پکڑلینے کو کہا۔جب سب نے چادر کے کناروں کو پکڑ کر حجرِ اسود کو مطلوبہ جگہ تک بلند کر دیا تو آپﷺ نے اپنے دستِ مبارک سے حجرِ اسود کو اٹھا کر اس کی جگہ نصب فرما دیا۔اس طرح آپﷺ کی فراست ودانش مندی سے ایک بڑافتنہ پیدا ہونے سے رک گیا۔
ماہ وسال اسی طرح گزرتے رہے اور محمدؐ زندگی کی چالیسویں دہلیز پار کر گئے۔اب غیب کا اشارہ ہوا کہ اللہ کا نور اور اس کی وحی محمدؐ کے قلب پر نازل کی جائے۔اللہ کے رسولﷺ نے ابتدائے دعوت میں قریبی رشتہ داروں اور عزیز دوستوں کو اسلام کی طرف مخفی دعوت دینا شروع کر دی اوراسی حالت میں تین سال گزر گئے۔اس کے بعد اسلام کی دعوت کو ظاہر کرنے کا حکم نازل ہو گیا۔آپﷺ نے جہری دعوت کا آغاز کرتے ہوئے ایک مختصر سی کھانے کی نشست کا پروگرام رکھا۔کھانے سے فارغ ہونے کے بعد آپﷺ نے جملہ اقارب واعزہ کے سامنے اپنے رب کا پیغام کھول کھول کر بیان کردیا۔آپﷺ اپنے خاندان میں سے ایک ایک کا نام لے کر پکارتے اور فرماتے تھے:اے بنو عبدِ مناف میں اللہ کے مقابلے میں تمہاری کوئی مدد نہ کر سکوں گا۔اے چچا عباسؓ بن عبدالمطلب،اے پھوپھی صفیہؓ بنت عبد المطلب، اے فاطمہؓ بنتِ محمدؐ میں تم میں سے کسی کو بھی اللہ کے مقابلے کوئی فائدہ نہ پہونچا سکوں گا۔‘‘(السیرۃ النبویۃ،ابن ہشامؒ :2/247)
حضرت فاطمہؓ نے اپنے بچپن میں قریش کی ظالمانہ حرکتوں اور تکلیف دہ اذیتوں کو بیحد انگیز کیا ہے۔ مسلمانوں کے اجتماعی مقاطعہ اور سوشل بائیکاٹ کے بعد جب سارے مسلمان’’ شعبِ ابو طالب‘‘ میں محصور ہوگئے تھے تب بھی حضرت فاطمہؓ آپﷺ کے ساتھ ہی تھیں۔انھوں نے اپنی آنکھوں سے دیکھا تھا کہ کعبہ کے سائے میں مشرکین وکفار چیخ چیخ کر آپﷺ سے مجادلہ کر رہے ہیں اور کہہ رہے ہیں کہ :کیا تو ہی ہے جو ہمارے معبودوں کے بارے میں ایسا ایسا کہتا ہے؟اور اللہ کے رسولﷺ پیکرِ صبر وعزیمت بنے کہتے ہیں کہ ہاں میں ہی ہوں جو ایسا ایسا کہتا ہے۔‘‘(سنن ترمذیؒ :3349) حضرت فاطمہؓ نے وہ وقت بھی دیکھا تھا جب کسی شقی القلب بد بخت نے آپﷺ کی چادر کوگردن میں بل دے کر گلا گھونٹنا چاہا تھا اور خوں آشام درندوں کے غول کی طرح قریشی سردار اس کی ہمت بڑھا رہے تھے۔اسی اثناء میں حضرت ابوبکرؓ آتے ہیں اور انھیں اللہ کے رسولﷺ سے دور ہٹاتے ہیں اور کہتے جاتے ہیں کہ کیا تم کسی کو اس لیے قتل کرنا چاہتے ہو کہ وہ اللہ تعالیٰ کو اپنا رب بتاتا ہے۔‘‘(صحیح السیرۃ النبویۃ،ابراہیم علی:ص96)
حضرت فاطمہؓ ان سب واقعات کی عینی شاہد تھیں۔یہ واقعات ان کے معصوم دل پر کیا ستم ڈھاتے رہے ہوں گے اندازہ کیا جاسکتا ہے۔آپ ان واقعات کو دیکھ پھوٹ پھوٹ کر روتی تھیں اور اللہ کے رسولﷺ ان کو دلاسے دیتے تھے۔ آپ نے وہ دن بھی دیکھا تھا جب عقبہ بن ابی معیط نامی ایک شیطان نے مردار اونٹ کی اوجھڑی لاکر عین سجدے کی حالت میںآپﷺ کے اوپر ڈال دی تھی۔یہ منظر دیکھ کر کم عمر بیٹی سے رہا نہ گیا اور وہ کچھ پرواہ نہ کرتے ہوئے آگے بڑھیں اور اپنے ہاتھوں سے اونٹ کی یہ اوجھڑی کمرِ مبارک سے ہٹا دی۔اُن کی زبان سے ان شیطانوں کے لیے بددعائیں نکل رہی تھیں کہ اللہ کے رسولﷺ نے چہرۂ انور اٹھا کربددعا دی اور فرمایا:اے اللہ تیرے حوالے کیا قریش کے سرداروں کو،ابوجہل،عتبہ،شیبہ،عقبہ بن ابی معیط،ولید بن عتبہ اور امیہ بن خلف کو۔‘‘(صحیح بخاریؒ :520۔صحیح مسلمؒ :1794)
حضرت فاطمہؓ کی عمر اٹھارہ سال ہوئی تو حضرت ابوبکرؓ نے خدمتِ رسالت میں حاضر ہوکر پیغام نکاح دیا جس پر فرمایا گیا کہ ابھی فاطمہؓ کی تقدیر کا انتظار باقی ہے۔‘‘اس کے بعد حضرت عمرؓ آئے اور یہی مدعا رکھا جس پر یہی جواب دیا گیا۔اس کے بعد حضرت علیؓ شرماتے ہوئے پیغامِ نکاح دینے تشریف لائے۔وہ فرماتے ہیں کہ جب میں اللہ کے رسولﷺ کی خدمت میں حاضر ہوا تو بولنے کی ہمت نہ ہوسکی۔مجھے چپ دیکھ کر اللہ کے رسولﷺ نے خود ہی پوچھا کہ کیوں آئے ہو؟کیا کوئی ضرورت ہے؟میں پھر بھی خاموش رہا تو آپﷺ نے فرمایا:شاید تم فاطمہؓ کا رشتہ لائے ہو؟ میں نے اثبات میں جواب دیا۔بس پھر اس کے بعد اللہ کے رسولﷺ نے حضرت فاطمہؓ کی شادی حضرت علیؓسے کردی۔
جس رات حضرت فاطمہؓ کی شادی حضرت علیؓسے ہوئی اللہ کے رسولﷺ نے پانی مانگ کر وضو فرمایا اور استعمال شدہ پانی کو حضرت فاطمہؓ کے اوپر انڈیل دیا اور فرمایا: ’’اے اللہ !ان دونوں میں برکت دے اور ان دونوں پر برکت رکھ اور ان دونوں کی ذریت میں بھی برکت فرما۔‘‘[اللھم بارک فیھما وبارک علیھما وبارک لھما فی نسلھما] (طبقات ابن سعدؒ :5/142۔145)حضرت علیؓ کہتے ہیں کہ ایک بار میں نے اللہ کے رسولﷺ سے پوچھاکہ آپﷺ کو زیادہ محبوب کون ہے،میں یا فاطمہؓ؟آپﷺ نے فرمایا:فاطمہؓ مجھے تم سے زیادہ محبوب ہے اور تم مجھے فاطمہؓ سے زیادہ عزیز ہو۔‘‘(معجم اوسط،طبرانیؒ :7675)
حضرت فاطمہؓ سے آپﷺ کا تعلقِ خاطر اور پدرانہ شفقت اس واقعہ سے بھی ظاہر ہوتی ہے کہ جب آپﷺ کو معلوم ہوا کہ حضرت علیؓ نے اللہ اور اس کے رسولﷺ کے دشمن ابوجہل کی بیٹی سے شادی کرنے کا ارادہ ظاہر کیا ہے تو آپ ﷺمسجدِ نبوی تشریف لائے اور غضب کی حالت میں منبر پر کھڑے ہو گئے۔آپﷺ نے صحابہؓ کرام کو خطاب کرتے ہوئے فرمایا: ’’ہشام بن مغیرہ کے خانوادے نے مجھ سے اجازت مانگی ہے کہ وہ اپنی بیٹی کا نکاح علیؓ بن ابی طالب سے کرنا چاہتے ہیں۔وہ سن لیں کہ میں اس کی اجازت نہیں دیتا،نہیں دیتا ،نہیں دیتا،مگر اس صورت میں کہ ابو طالب کا بیٹا میری بیٹی کو طلاق دے کر اُن کی بیٹی کو بیاہے۔ میری بیٹی میرے دل کا ٹکڑا ہے جو چیز اسے اندیشوں میں ڈال دے وہ مجھے بھی ڈالتی ہے اور جو چیز اس کو اذیت دے وہ مجھ کو بھی دیتی ہے،مجھے ڈر ہے کہ یہ شادی اس کے دین کا فتنہ بن جائے گی۔‘‘
اس موقع پر آپﷺ نے اپنے بڑے داماد حضرت ابو العاصؓ بن الربیع کا ذکرِ خیر کیا اور تعریف فرمائی نیز کہاکہ ’’وہ میراایساداماد تھا کہ جب جب مجھ سے کچھ کہا توسچ کہا،جب وعدہ کیا تو پورا کیا۔یقیناًمیں یہاں کسی حرام کو حلال یا حلال کو حرام نہیں کررہا ہوں،لیکن ناممکن ہے کہ اللہ تعالیٰ اپنے رسولﷺ کی بیٹی اور دشمنِ خدا کی بیٹی کو ایک گھر میں جمع کر دے۔‘‘ (صحیح بخاریؒ :538/29۔صحیح مسلمؒ :44/14۔سنن ابوداؤدؒ :کتاب12۔سنن ترمذیؒ :کتاب 46۔سنن ابنِ ماجہؒ :9/56۔مسند احمدؒ :4/326۔328)
سنن ترمذیؒ کی روایت میں منقول ہے کہ حضرت عائشہؓ سے پوچھا گیا کہ اللہ کے رسولﷺ کو سب سے زیادہ محبت کس سے تھی؟ انھوں نے کہا:حضرت فاطمہؓ سے۔سائل نے پھر کہا کہ مردوں میں کس سے تھی؟انھوں نے جواب دیا کہ فاطمہؓ کے شوہر حضرت علیؓ سے کہ وہ میرے علم کی حد تک روزہ دار وعبادت گذار آدمی تھے۔‘‘(مصنف ابن ابی شیبہؒ :12748)
حضرت فاطمہؓ کے بطن سے دوبیٹے حضرت حسنؓ اور حضرت حسینؓاور دو بیٹیاں زینبؓ اور امِ کلثومؓ تولد پذیر ہوئے تھے۔ اللہ کے رسولؓ کو چاروں بچوں سے بڑی محبت تھی جو ان کے ساتھ آپﷺ کے تعامل سے ہویدا تھی۔تاہم آپﷺ کو خصوصی محبت حسنؓاور حسینؓسے تھی۔آپﷺ اکثر ان کو گود میں لے کر فرماتے تھے: ’’اے اللہ !میں ان دونوں سے محبت کرتا ہوں،تو بھی ان کو اپنا محبوب بنا لے۔‘‘(سنن ترمذیؒ فی المناقب:3769)ایک روایت میں الفاظ یہ ہیں: ’’اے اللہ! میں ان دونوں سے محبت رکھتا ہوں،تو بھی انہیں اپنا محبوب بنالے اورجو ان سے نفرت وبغض رکھے انھیں مبغوض بنالے۔‘‘(معجم کبیر،طبرانیؒ :2646)ابن ماجہ کی روایت کے الفاظ یہ ہیں کہ جو انسان بھی حسنؓ اور حسینؓ سے محبت رکھتا ہے وہ مجھ سے محبت رکھتا ہے اور جو ان دونوں سے بغض رکھتا ہے وہ مجھ سے بغض رکھتا ہے۔‘‘[من احب الحسن الحسین فقد احبنی ومن ابغضھما فقد ابغضنی](سنن ابن ماجہؒ :143مع تحسینِ البانیؒ )
روایات میں آتا ہے کہ ایک روز اللہ کے رسولﷺ تشریف لائے اور آپﷺ کے ساتھ حضرت علیؓ،حضرت حسنؓ اور حضرت حسینؓ بھی تھے۔ہر ایک نے دوسرے کا ہاتھ پکڑا ہوا تھا۔آپﷺ نے حضرت علیؓ وفاطمہؓ کو قریب کر لیا اور حسنؓ وحسینؓ کو اپنی گود میں بٹھالیا۔پھر ان دونوں کو اپنی چادر میں ڈھانپ لیا اور آیتِ کریمہ تلاوت فرمائی:(إِنَّمَا یُرِیْدُ اللَّہُ لِیُذْہِبَ عَنکُمُ الرِّجْسَ أَہْلَ الْبَیْْتِ وَیُطَہِّرَکُمْ تَطْہِیْرا)(احزاب،33)’’اللہ تو یہ چاہتا ہے کہ تم اہلِ بیتِ نبیؐ سے گندگی کو دور کر ے اور تمہیں پوری طرح پاک کردے۔‘‘پھر فرمایا:اے اللہ یہ میرے اہلِ بیت واہلِ نسبت ہیں،تو ان سے گندگی کو دور کردے۔‘‘ (صحیح مسلمؒ :6414۔سنن ترمذیؒ :3205)
ایک اورموقع پر آپﷺ کی پدرانہ محبت وشفقت کی عکاسی ہوتی ہے۔ایک مرتبہ آپﷺ اپنے ایک نواسے کوشانوں پر بٹھائے مسجد تشریف لائے اور اسی طرح نماز کے لیے کھڑے ہوگئے۔نماز کے دوران سجدے میں آپﷺ انھیںآہستہ سے اپنے برابر میں رکھ دیتے تھے۔اس طرح سے آپﷺ نے لوگوں کی امامت کی تو صحابہؓ کرام کو اس پر تعجب ہوا کہ دورانِ نماز آپﷺ نے سجدے بڑے طویل فرمائے۔نماز پوری کرنے کے بعد لوگوں نے اس بارے میں پوچھا کہ اے اللہ کے رسولﷺ! ہمیں لگتا ہے کہ یا تو آپﷺ کو کچھ ہوگیا ہے یا سجدے لمبے کرنے کے بارے میں کوئی وحی آپﷺ پر نازل ہوئی ہے۔اللہ کے رسولﷺنے سن کر فرمایا:ایسا کچھ نہیں ہے،بس سجدے کے دوران میرا یہ بیٹا میرے اوپر سوار ہوگیا تھااور میرا دل نہ مانا کہ میں اس کا جی بھرنے سے پہلے اوپر سے اتار دوں۔‘‘ (سنن نسائیؒ :2476۔مسند احمدؒ :14050)
لوگوں کے مشاہدہ میں یہ بھی آیاہے کہ آپﷺ حضرت حسینؓ کے شانوں کو پکڑے ہوتے اور ان کے پیروں کو اپنے پیروں پر رکھائے فرماتے:اوپر چڑھو،اور اوپر چڑھو۔‘‘نواسہ اسی طرح کوشش کرکے ناناکے بدن پر چڑھتا جاتاتاآنکہ اس کے پیر اللہ کے رسولﷺ کے سینے پر پہونچ جاتے۔اس کے بعد اللہ کے رسولﷺ ان کا منھ کھلواکر بوسہ لیتے اور کہتے جاتے : ’’اے اللہ میں اس سے محبت کرتا ہوں تو آپ بھی اس سے محبت کیجئے اور جو اس سے محبت کرے اس سے محبت کیجئے۔‘‘(صحیح مسلمؒ ،کتاب الفضائل:4/1882)
ایک بدوی شخص نے دیکھا کہ آپﷺ اپنے نواسہ کو بوسے لے رہے ہیں تو اس نے تعجب کا اظہار کرتے ہوئے کہا: ’’میرے دس بیٹے ہیں لیکن میں نے کبھی کسی کو بوسہ نہیں لیا۔‘‘یہ سن کر سرکارِ رسالتﷺ نے فرمایا: ’’جو رحمت سے محروم ہوتا ہے اس کے ساتھ رحمت کا معاملہ نہیں کیا جاتا۔‘‘(صحیح بخاریؒ :5651۔صحیح مسلمؒ :6170)
مرض الوفات میں جب آپﷺ کی تکلیف بیحد بڑھ گئی تھی،توتکلیف کی شدت کو دیکھتے ہوئے حضرت فاطمہؓ کے منھ سے بے اختیار نکل گیا کہ ہائے میرے اباجان کی تکلیف!۔یہ سن کر اللہ کے رسولﷺ نے فرمایا کہ:’’بیٹا! تمہارے والد کو آج کے بعد کوئی تکلیف نہیں ہوگی۔‘‘وفات کے بعد حضرت فاطمہؓ روتے ہوئے کہتی تھیں کہ: ’’میرے اباجان نے اپنے رب کی دعوت پر لبیک کہا،جنت الفردوس ہی اب آپﷺ کا ٹھکانہ ہے،آج ان کی خبرِ وفات ہم جبریلؑ کو سناتے ہیں۔‘‘ آپﷺ کی تجہیز وتکفین کے وقت حضرت فاطمہؓ کہہ رہی تھیں کہ: کیاتم لوگوں کو گواراہے کہ اپنے رسولﷺ کے رخِ انور پر مٹی ڈالو…؟(صحیح بخاریؒ :4193)
اللہ کے رسولﷺکے اس دارِ فانی سے رحلت کرنے کے ٹھیک چھ ماہ بعد حضرت فاطمہؓ کا بلاوا بھی آگیا۔اس طرح آپ خانوادۂ رسولﷺ میں سب سے پہلے اپنے والد سے ملنے والی بن گئیں۔(صحیح بخاریؒ :2926)
آنکھوں کی ٹھنڈک بیٹے
حضرت خدیجہ کے بطن سے اللہ کے رسولﷺ کو دو بیٹے بھی تولد ہوئے جن کا نام قاسم اور عبد اللہ تھا۔پہلے بیٹے کی طرف نسبت کرتے ہوئے آپﷺ کی کنیت ابو القاسم تھی جب کہ دوسرے بیٹے کی ولادت نبوت کے بعد ہونے کی وجہ سے اس کا لقب الطاہر اور الطیب پڑگیاتھا۔(الروض الانف،سھیلیؒ : 1/123۔ الاصابۃ:8/61۔السیرۃالنبویۃ:1/202) دونوں بیٹے چھوٹی عمر ہی میں وفات پاگئے۔کہا جاتا ہے کہ حضرت قاسم چلنے لگے تھے لیکن ان کی مدتِ رضاعت پوری نہیں ہو پائی تھی کہ وفات ہوگئی۔امام سہیلیؒ ذکر کرتے ہیں کہ: اللہ کے رسولﷺ نبوت کے بعد کسی موقع پر حضرت خدیجہؓ کے پاس تشریف لائے تو دیکھا کہ آبدیدہ ہیں۔پوچھنے پر انھوں نے بتایا کہ یہ آنسوں حضرت قاسم کے لیے ہیں کہ ان کو اتنی مہلتِ حیات بھی نہ مل سکی کہ اپنی شیرخواری مکمل کر پاتے۔آپﷺ نے سن کر فرمایا: ’’ان کے لیے جنت میں ایک دودھ پلانے والی دائی مقرر کردی گئی ہے جو ان کی مدتِ رضاعت کی تکمیل کرے گی۔‘‘
ان کے علاوہ ام المومنین حضرت ماریہؓ قبطیہ کے بطن سے آپﷺ کے یہاں حضرت ابراہیم پیدا ہوئے۔ابراہیم کو اپنے والدِ محترمﷺ سے بڑی مشابہت تھی اور مرورِ ایام کے ساتھ یہ مشابہت ومماثلت بڑھتی جارہی تھی۔اللہ کے رسولﷺ کو بھی ان سے نہایت تعلقِ خاطرتھا،جس کا ایک بہ ظاہر سبب یہ ہوسکتا ہے کہ ابراہیم کی ولادت،باستثنائے فاطمہؓ آپﷺ کے تمام بچوں کی موت کے بعد ہوئی تھی۔لیکن اللہ کے رسولﷺ کی ابراہیم کے ساتھ محبت ومودت کا یہ سلسلہ زیادہ ایام تک نہ چل سکا اور وہ سخت مرض میں مبتلا ہوگئے۔جاں کنی کے عالم میں اللہ کے رسول ﷺ کوآخری دیدارکے لیے بلایا گیا تو شدتِ تاسف والم کی وجہ سے آپﷺ اپنے آپ کھڑے نہ ہو سکے۔حضرت عبد الرحمنؓ بن عوف نے آپﷺ کو سہارا دیا اور نخلستان تک لائے جس میں حضرت ابراہیم کو رکھا گیا تھا۔آپﷺ نے ابراہیم کو دیکھا کہ اپنی ماں کی گود میں آخری سانسیں لے رہے ہیں تو آپﷺ نے انھیں اٹھا کر اپنی گود میں لٹا لیا۔
مارے غم کے آپﷺ کا کلیجہ چھلنی تھا اور چہرے کے خد وخال ضبطِ غم کی وجہ سے متاثر ہوگئے تھے۔اس وقت آپﷺ کی زبان سے نکلا کہ:’’اے ابراہیم! ہم تمہارے بدلے میں اللہ سے کچھ اور نہیں چاہتے۔‘‘اس کے بعد آپﷺ پر خاموشی طاری ہوگئی اور آنکھیں بہنے لگیں۔ابراہیم نے آخری ہچکی لی اورطائرِ روح قفسِ عنصری سے پرواز کر گیا۔ والدہ ماجدہ حضرت ماریہؓ اور خالائیں چیخیں مار کر رونے لگیں،لیکن اللہ کے رسولﷺ نے انھیں منع نہیں فرمایا۔ (حیاۃ محمدﷺ،محمد حسین ھیکلؒ :ص464)
جب زندگی سے خالی ابراہیم کے جسدِ خاکی کو تدفین کے لیے لایا گیا تو آپﷺ کی آنکھیں بے تحاشا برسنے لگیں۔ آپﷺ روتے جاتے اور فرماتے: ’’اے ابراہیم! اگر موت کا معاملہ حق اور حتمی وعدہ نہ ہوتا اورہمیں نہ معلوم ہوتا کہ ہمارے اول وآخر ایک روز مل جائیں گے،تو یقیناًہمارا غم اس سے کہیں زیادہ ہوتا۔‘‘اتنا کہہ کرآپﷺ چند لمحات کے لیے خاموش ہوئے پھر فرمایا: ’’بیشک آنکھیں اشک بار ہیں،دل سوگوار ہے،مگر ہم تو وہی کہیں گے جو ہمارے رب کو راضی رکھے،لیکن ابراہیم!سچی بات یہ ہے کہ ہم تمہاری جدائی پربیحد غمگین ہیں۔‘‘(صحیح بخاریؒ 1076:صحیح مسلمؒ :6167)
ایک مرتبہ آپﷺ حضرت سعد بن عبادہؓ کی عیادت کے لیے تشریف لے گئے تو دیکھا کہ اُن کے اہلِ خانہ واقارب انھیں گھیرے ہوئے ہیں۔یہ منظر دیکھ کر آپﷺ کی آنکھوں سے آنسوں رواں ہوگئے اور آپ کو روتا دیکھ، تمام حاضرین بھی رونے لگے۔اللہ کے رسولﷺ نے یہ دیکھ کر فرمایا:کیا تم سنتے نہیں ہو؟بیشک اللہ تعالیٰ آنکھ کے آنسوں پر عذاب نہیں دیتا اور نہ دل کی افسردگی پر،البتہ وہ زبان سے نکلنے والے اقوال پر عذاب دیتا ہے یا رحمت فرماتا ہے۔‘‘ (صحیح بخاریؒ :1242)
فرزندِ رسولﷺ حضرت ابراہیم کی وفات کے دن سورج گرہن ہوگیاتھا۔ عام مسلمانوں نے اس کو ایک معجزہ خیال کیا اور کہنے لگے کہ یہ آفتاب گرہن فرزندِ رسولﷺ ابراہیم کے مرنے کی وجہ سے ہوا ہے۔ایک سچے نبی کی طرح آپﷺ کو یہ بات ناگوار گزری اور آپﷺ نے مجمعِ عام میں خطاب فرماتے ہوئے کہاکہ:’’یہ سورج اور چاند اللہ تعالیٰ کی بہت سی نشانیوں میں سے دو نشانیاں ہیں،یہ کسی متنفس کی موت وحیات کی وجہ سے گرہن نہیں ہوتے۔چنانچہ جب تم ایساہوتے دیکھو تو تیزی کے ساتھ اللہ تعالیٰ کے ذکر اور نماز کی طرف بھاگو۔‘‘(صحیح بخاری:994۔صحیح مسلمؒ :2129)
غور کیجئے کیا اس عملی موقف سے بڑھ کر بھی کوئی موقف ہوسکتا ہے؟یہ عظمت وصداقت کی کونسی چوٹی تھی کہ اللہ کے رسولﷺزندگی کے مشکل ترین لمحات میں بھی اپنے منصبِ رسالت کو فراموش نہیں کرتے اور حق وصداقت کو بیان کرنے سے پیچھے نہیں ہٹتے۔بلکہ اس سے ایک قدم اور آگے بڑھ کر آپﷺاپنے ذاتی صدمے کوبرطرف رکھ کر، امت کے غلط تصورات وتوہمات کی تصحیح واصلاح کا کام انجام دیتے ہیں۔یقیناًاللہ کے رسولﷺ کو اپنے تمام بچوں سے بیحد وحساب محبت وانس تھا،لیکن آپﷺاپنے پیغام اور رسالت کی خاطر کسی بھی محبت ومنفعت کو بارِ خاطر نہ لاتے تھے۔
وصلی اللہ تعالیٰ علی خیر خلقہ محمد وعلی آلہ وصحبہ اجمعین،وآخر دعوانا ان الحمد للہ رب العالمین۔

مزید دکھائیں

ذکی الرحمن فلاحی مدنی

مضمون نگار معروف اسلامی اسکالر ہیں۔ ایک درجن سے زائد کتابوں کے مصنف اور متعدد کتابوں کے مترجم ہیں

متعلقہ

Close