مراسلات

سارے جہاں سے اچھا ہندوستاں ہمارا

عظمت علی

آج پوری کائنات میں تقریبا  ۱۹۶؍ممالک پائے جاتے ہیں ۔ہر ایک کی الگ الگ خاصیت ہوتی ہے ۔جن کی وجہ سے وہ جانے پہچانے جاتے ہیں ۔انہیں میں سے ایک ہندوستان بھی ہے ۔یہ ملک ۱۹۴۷ء میں تقسیم ہونے کے باوجود دنیا کی دوسری سب بڑی تعدا دکا مالک شمار ہوتا ہے ۔اس میں کچھ ایسی امتیازی خاصتیں پائی جاتی ہیں جو دیگر ممالک میں نہیں ہیں ۔اس وقت بہت سے ایسے چھوٹے چھوٹے ممالک ہیں جہاں امن و امان کا کوئی گزربسر نہیں ہے ۔بلکہ دہشت گردی اور معصوم انسانوں کوقتل عام ہوتا رہتاہے اور حکومت تماشائی بنی رہتی ہے ۔جبکہ ہمارے یہاں کثیر تعداد ہونے کے ساتھ ساتھ ہر جگہ چین و سکون کی فضا نظر آتی ہے ۔جہاں امیر اپنے دولت کدہ میں رات گزارتا ہے وہیں ایک فقیر اور فاقہ کش بھی آسمان تلے سڑک کنارے بے خوف سوجاتا ہے ۔

 ہمارے پیارے وطن میں جہاں کثیر تعداد ہے وہیں مختلف اقوام ومذاہب بھی وجود رکھتے ہیں اور آئین ہند کے مطابق ہر مذہب کو اپنے رسومات اداکرنے کی مکمل اجازت حاصل ہے ۔مسلمان، ہندو، سیکھ اورعیسائی اپنے اپنے مذہبی فرائض کو بخوشی انجام دیتے ہیں ۔جبکہ دنیا میں بہت سے ایسے ممالک ہیں جہاں اقلیتوں کو اپنے مذہب اور دینی رسومات کو آزادانہ انجام دینے کی اجازت نہیں ہے۔

 جس طرح عرب مہان نوازی میں مشہور زمانہ ہیں اسی طرح ہمارے یہاں بھی مہمان حضرات کو بہت ہی عزت واکرام سے نوازا جاتا ہے ۔بلکہ بعض لوگ تو انہیں دیوتا اور بھگوان کے مثل مانتے ہیں ۔حالانکہ اس وقت روئے زمین پر ایسا ملک بھی وجود رکھتا ہے جہاں کی چوکھٹ پر ہی باعزت مہمانوں کی عز ت کی کھلواڑ کیاجاتاہے۔

  ہمارے ہندوستان کی سب سے اہم خاصیت یہ ہے کہ یہاں ہر قسم کے افرادکا گزر بسر ہے ۔غریب سو روپیہ بھی کمائے تو وہ شکم سیر ہوکر اطمینان کی نیند سوجاتاہے۔اور امیر ہزاروں روپیہ حاصل کرے تو وہ بھی خوشحالی سے شب گزارلیتاہے ۔اس کے برخلاف فی الوقت ایسے ممالک بھی موجود ہیں جہاں غریبو کی زندگی مشکل سے کٹ رہی ہے تو رئیس افراد کی پوری زندگی ایک کاش پر ختم ہوجاتی ہے کہ اے کاش ! کوئی دن سرور کا بھی گزر جائے !

جہاں بھارت اپنے دامن میں اتنے سارے کمالات سموئے ہوئے ہے وہیں کچھ برائیاں بھی ہیں منجملہ رشوت خوری، کالادھن اور سب سے اہم اہل علم وفن کی ناقدری ہے ۔۔۔جس کے باعث اہل فن کی ایک بھاری تعداد ترک وطن کرکے دیگر ممالک میں پناہ لے رہی ہے اور وہ اپنی لیاقت سے ان ممالک کے نام پر چار چاند لگارہے ہیں ۔اور پھر یہ ہوتاہے کہ خون پسنیہ کسی اور کا اور طمغہ کسی اور کے نا م !

اگر رشوت خوری اور کالادھن جیسے عظیم جرائم پر سر کار وک تھام لاگادے تو ہر ہندوستانی کے دل کی یہی آواز ہوگی:

سارے جہاں سے اچھا ہندوستاں ہمارا

ہم بلبل ہیں اس کی یہ گلستاں ہمارا

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

4 تبصرے

  1. اگر رشوت خوری اور کالادھن جیسے عظیم جرائم پر سر کار وک تھام لاگادے تو ہر ہندوستانی کے دل کی یہی آواز ہوگی:

    سارے جہاں سے اچھا ہندوستاں ہمارا
    ماشاءاللہ ، ہندوستان کے حالات پر بہترین روشنی ڈالی ہے.
    اللہ کرے زور قلم اور بھی زیادہ…!

  2. اگر رشوت خوری اور کالادھن جیسے عظیم جرائم پر سر کار وک تھام لاگادے تو ہر ہندوستانی کے دل کی یہی آواز ہوگی:

    سارے جہاں سے اچھا ہندوستاں ہمارا
    ماشاءاللہ ، ہندوستان کے حالات پر بہترین روشنی ڈالی ہے.
    اللہ کرے زور قلم اور بھی زیادہ…!

  3. بہت عمدہ فکر ہے
    لکھتے رہو ہمیشہ اپنی یہی دعا ہے

  4. ماشاالله جناب عظمت صاحب بہت ہی اچھا لکھا ہے خدا آپکی توفیقات میں اور اضافہ فرمائں

متعلقہ

Back to top button
Close