ادبنظم

السلام  اے  جان حیدر  تاجدارِ کربلا

حاجی  شفیع  اللہ  شفیعؔ بہرائچی

السلام  اے میرے سرور نامدار کربلا

السلام  اے  ماہِ انور  صد  کربلا

السلام  اے  بندہ  پرور  ذی  وقار

  السلام اے دین کے رہبر سوارِ کربلا

   السلام  اے  جان حیدر  تاجدار ِ کربلا

  السلا م اے حق کے  دلبر جان  نثارِ کربلا

کربلا کی دونوں عالم میں جو  عظمت  ہوگئی

کس کے دم سے  تاابد صد شہرت ہوگئی

جانتا  ہوں جسکے قدموں کی بدولت  ہوگئی

فیض تھا یہ آپکا  اتنی  جو  عزت  ہوگئی

السلام  اے  جان حیدر  تاجدار ِ کربلا

السلام اے حق کے  دلبر جان  نثارِ کربلا

زخم کھا کر تن پہ پھر بھی موت سے کھیلا کئے

  تین دن بے آب و دانہ رن میں لاکھوں سے لڑے

آفریں صد آفریں ہرہر  ستم  جھیلا  کئے

نور چشم مصطفیٰﷺ زہرہ  کے  پیارے  لاڈلے

السلام  اے  جان حیدر  تاجدار ِ کربلا

   السلام اے حق کے  دلبر جان  نثارِ کربلا

مدعا  آیئنہ  بڑھتے  ہو ئے  ہر گام پر

جان گو  جاتی رہے  آئے  نہ  حرف  اسلام  پر

صبر کا  دامن  نہ چھوڑا  ہر غم  و آلام  پر

  واہ  رہی  ہمت  لٹایا  گھر  کو  حق کے  نام پر

  السلام  اے  جان حیدر  تاجدار ِ کربلا

السلام اے حق کے  دلبر جان  نثارِ کربلا

آپ کے  نانا کی اُمت  اور حیرانی میں ہو

ہر نفس  ہر  لمحہ  ہر ساعت  پر یشانی  میں  ہو

آپ  جسکے  ناخدا  کشتی وہ طغیانی میں ہو

    آپکے  ہوتے   تو  قف فضل ربانی  میں  ہو

السلام  اے  جان حیدر  تاجدار ِ کربلا

السلام اے حق کے  دلبر جان  نثارِ کربلا

آرزو  شام و سحر میری یہی ہے  یا  امام

روضئہ  پُر  نور  پر  بلوائے  بہر  سلام

کیجئے  اپنے شفیع  ؔ زار کو  بھی شاد  کام

حاضر  دربار ہو کر  لب پر لائے  یہ کلام

السلام  اے  جان حیدر  تاجدار ِ کربلا

  السلام اے حق کے  دلبر جان  نثارِ کربلا

مزید دکھائیں

ایک تبصرہ

  1. مسئلہ محبت کا ہو یا عقیدت کا ہمارے ہاں غلو سے مملو جذبات سے لبریز شاعری کی بہتات رہی ہے۔ ایسی ہی شاعری کا ایک نمائندہ شعر ہے کہ
    قتلِ حسین اصل میں مرگِ یزید ہے
    اسلام زندہ ہوتا ہے ہر کربلا کے بعد
    جذبات اور عقیدت کا معاملہ ایک طرف لیکن اگر حقیقت دیکھی جائے تو ہر کربلا کے بعد ہم نے اسلام کو پہلے سے زیادہ مصیبت میں ہی دیکھا ہے۔ بس رسوم کی بات الگ ہے کہ وہ ہماری نفسیات کی مجبوری ہیں مگر زندگی کو مثبت انداز میں بدلنے سے سراسر معذور۔

متعلقہ

Close