ادبغزل

ان کے عشق میں جب سے گرفتار ہم ہوئے

رسوائے عام  پھر سر  بازار  ہم  ہوئے

قاری نسیم منگلوری

ان کے عشق میں جب سے گرفتار ہم ہوئے

رسوائے  عام   پھر   سر  بازار   ہم    ہوئے

وہ   آئے   یا  نہ  آئے مگر اس کے  واسطے

شب   و    روز   دیدئہ   بیدار   ہم   ہوئے

کیا ہوگا   کوئی حادثہ اس سے شدید تر
جب   قید  زندگی  میں گرفتار  ہم ہوئے

دل  پارہ  پارہ  اور  جگر  لخت  لخت ہے
کچھ ایسے زیستِ شوق میں بیزار ہم ہوئے

دنیا  ہمارے  نام  سے  اکتائی جاتی  ہے
مرے   خدا  زمین  پہ کیا  بار  ہم ہوئے

جب سے ہوئے چمن میں شگفتہ نسیمِ گل
اس دن سے بلبلوں کے پرستار  ہم   ہوئے

مزید دکھائیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ

Close