ادبغزل

اپنا رستہ بنا رہا ہوں میں

خودکو چلنا سکھا رہاہوں میں

سالک ادؔیب بونتی

اپنا     رستہ    بنا   رہاہوں    میں

خودکو چلنا سکھا   رہاہوں   میں

لوگ کہتےہیں   جو  کہیں    لیکن

فرض    اپنا   نبھا   رہاہوں    میں

ایک  کا   غذپہ    روشنائی    سے

 نقشہ  کَل  کابنا    رہاہوں     میں

کوئی    آیاہے     اب  تصور    میں

حال     دل      کا    سنا   رہا ہوں

ایک  دنیا  ہے  روٹھ    جاتی    ہے

اور   پاگل     منارہا    ہوں     میں

چھوٹےقدموں سےاپنی منزل  سے

روز    دوری   مٹا    رہاہوں    میں

وہ   سفر   پر   ادؔیب   نکلے    ہیں

ہاتھ ہوا   میں  ہلا   رہاہوں    میں

مزید دکھائیں

متعلقہ

Close