ادبغزل

بے وجہہ تجھ سے پیار کریں اور کیوں کریں

احمد علی برقیؔ اعظمی

بے وجہہ تجھ سے پیارکریں اور کیوں کریں

سر پر تجھے سوار کریں اور کیوں کریں

دامن کو تار تار کریں اور کیوں کریں

یہ کام بار بار کریں اور کیوں کریں

پہلے ہی تیری وعدہ خلافی سے تنگ ہیں

پھر تیرا انتظار کریں اور کیوں کریں

سوز دروں سے جان ہے اپنی عذاب میں

خود کو ذلیل و خوار کریں اور کیوں کریں

تو اپنی دیکھ، چھوڑ ہمیں اپنے حال پر

آنکھوں کو اشکبار کریں اور کیوں کریں

دیوانہ وار تجھ پہ فدا ہوکے کیا مِلا

دل اپنا بیقرارکریں اور کیوں کریں

ہم خود کو بے گناہ سمجھتے ہیں اس لئے

اپنی خطا شمار کریں اور کیوں کریں

پل کر ہوئے ہیں موجِ حوادث میں ہم جواں

اپنی قبول ہار کریں اور کیوں کریں

جب خود امیرِ شہر کو اس کا نہیں خیال

ماحول سازگار کریں اور کیوں کریں

جو آزمودہ ہے اسے کیوں آزمائیں ہم

’’پھر تجھ کو تاجدار کریں اور کیوں کریں‘‘

برقیؔ کو اپنی عزت و حُرمت عزیز ہے

ہم خود کو شرمسار کریں اور کیوں کریں

مزید دکھائیں

احمد علی برقی اعظمی

ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی اعظم گڑھ کے ایک ادبی خانوادے سے تعلق رکھتے ہیں۔ آپ کے والد ماجد جناب رحمت الہی برقؔ دبستان داغ دہلوی سے وابستہ تھے اور ایک باکمال استاد شاعر تھے۔ برقیؔ اعظمی ان دنوں آل آنڈیا ریڈیو میں شعبہ فارسی کے عہدے سے سبکدوش ہونے کے بعد اب بھی عارضی طور سے اسی شعبے سے وابستہ ہیں۔۔ فی البدیہہ اور موضوعاتی شاعری میں آپ کو ملکہ حاصل ہے۔ آپ کی خاص دل چسپیاں جدید سائنس اور ٹکنالوجی خصوصاً اردو کی ویب سائٹس میں ہے۔ اردو و فارسی میں یکساں قدرت رکھتے ہیں۔ روحِ سخن آپ کا پہلا مجموعہ کلام ہے۔

متعلقہ

Back to top button
Close