ادبغزل

شاعر مشرق علامہ اقبال اور احمد علی برقی اعظمی


کلام علامہ اقبال

اٹھو میری دنیا کے غریبوں کو جگا دو
کاخِ امراء کے در و دیوار ہلا دو

گرماؤ غلاموں کا لہو سوزِ یقیں سے
کنجشک فرومایہ کو شاہیں سے لڑا دو

میں ناخوش و بیزار ہوں مرمر کی سلوں سے
میرے لئے مٹی کا حرم اور بنا دو

جس کھیت سے دہقاں کو میسر نہ ہو روزی
اس کھیت کے ہر خوشہٴ گندم کو جلا دو

کلام احمد علی برقی اعظمی

اقبالؔ سے ہے تم کو عقیدت تو جَتا دو

احساسِ زیاں ملتِ بیضا کوکرا دو

فرصت نہیں سونے سے جنہیں اُن کو جگا دو

اقبال کی یہ بانگِ درا اُن کو سنادو

اعمال سے خود اپنے ہی خود کو نہ سزا دو

آپس کے گِلے شکوے ہیں جو ان کو مِٹا دو

کب تک یونہی تم مہرۂ شطرنج رہو گے

اوقات ہے کیا اُس کی زمانے کو بتادو

جل جائے نہ اب اپنا ہی گھر دیکھ لو اِس سے

اب اور نہ اس شعلۂ نفرت کو ہَوا دو

ایسا نہ ہو بجھ جائے کہیں وقت سے پہلے

لَو شمعِ محبت کی ذرا اور بڑھا دو

جینا ہے اگر امن و سکوں سے تمہیں برقیؔ

ہے باہمی نفرت کی جو دیوار گرا دو

مزید دکھائیں

احمد علی برقی اعظمی

ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی اعظم گڑھ کے ایک ادبی خانوادے سے تعلق رکھتے ہیں۔ آپ کے والد ماجد جناب رحمت الہی برقؔ دبستان داغ دہلوی سے وابستہ تھے اور ایک باکمال استاد شاعر تھے۔ برقیؔ اعظمی ان دنوں آل آنڈیا ریڈیو میں شعبہ فارسی کے عہدے سے سبکدوش ہونے کے بعد اب بھی عارضی طور سے اسی شعبے سے وابستہ ہیں۔۔ فی البدیہہ اور موضوعاتی شاعری میں آپ کو ملکہ حاصل ہے۔ آپ کی خاص دل چسپیاں جدید سائنس اور ٹکنالوجی خصوصاً اردو کی ویب سائٹس میں ہے۔ اردو و فارسی میں یکساں قدرت رکھتے ہیں۔ روحِ سخن آپ کا پہلا مجموعہ کلام ہے۔

متعلقہ

Close