ادبغزل

شریف النفس کو اس کی شرافت مارڈالے گی

احمد علی برقی اعظمی

تجھے اے دل تری موجودہ حالت مارڈالے گی

ضرورت سے زیادہ ہے جو چاہت مارڈالے

بسر ہوگی یونہی گُھٹ گُھٹ کے کیسے زندگی اپنی

مجھے خاموش رہنے کی یہ عادت مارڈالے گی

کروں گا میں وہی جو ہے تقاضا عصرِ حاضر کا

مجھے میری روایت سے بغاوت مارڈالے گی

مجھے خدشہ ہے اس کا میری حق گوئی و بیباکی

جو ہے اُس کے لئے بارِ سماعت مار ڈالے گی

کبھی کرتے نہیں سودا جو خوئے بے نیازی کا

انھیں اب عہدِ حاضر کی سیاست مار ڈالے گی

ضرورت ہے ہمیشہ اب تجھے محتاط رہنے کی

ہے مارِ آستیں سے جو عداوت مارڈالے گی

سبھی ہیں مصلحت اندیش اے احمد علی برقیؔ

شریف النفس کو اُس کے شرافت مار ڈالے گی

مزید دکھائیں

احمد علی برقی اعظمی

ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی اعظم گڑھ کے ایک ادبی خانوادے سے تعلق رکھتے ہیں۔ آپ کے والد ماجد جناب رحمت الہی برقؔ دبستان داغ دہلوی سے وابستہ تھے اور ایک باکمال استاد شاعر تھے۔ برقیؔ اعظمی ان دنوں آل آنڈیا ریڈیو میں شعبہ فارسی کے عہدے سے سبکدوش ہونے کے بعد اب بھی عارضی طور سے اسی شعبے سے وابستہ ہیں۔۔ فی البدیہہ اور موضوعاتی شاعری میں آپ کو ملکہ حاصل ہے۔ آپ کی خاص دل چسپیاں جدید سائنس اور ٹکنالوجی خصوصاً اردو کی ویب سائٹس میں ہے۔ اردو و فارسی میں یکساں قدرت رکھتے ہیں۔ روحِ سخن آپ کا پہلا مجموعہ کلام ہے۔

متعلقہ

Close