ادبغزل

میرؔ اقلیم سخن کے تھے حقیقی تاجدار

احمد علی برقیؔ اعظمی

شخصیت ہے میری کی دنیائے اردو کا وقار
اُن کی عصری معنویت آج بھی برقرار

ضوفگن ہے جس سے بزمِ علم و دانش آج تک
بحرِذخارِ ادب کی تھے وہ دُرِ شاہوار

تھا یہاں پر میرؔ جیسا صاحبِ فکر و نظر
اہلِ دہلی کے لئے ہے باعثِ صد افتخار

میرؔ کا رنگِ تغزل بن گیا ان کی کی شناخت
مرزاغالبؔ کو بھی تھا ان کے سخن پر اعتبار

میرؔ کا ثانی نہ تھا کوئی بھی ان کے دور میں
میرؔ اقلیمِ سخن کے تھے حقیقی تاجدار

ہیں نقوشِ جاوداں اُن کے خزاں ناآشنا
گلشنِ اردو میں ان کی ذات ہے مثلِ بہار

تھی کسی کو بھی نہیں تابِ سخن ان کے حضور
تھے معاصر ان کے اُن کے سامنے مثلِ غبار

صرف برقیؔ ہی نہیں ان کے سخن کا قدرداں
سب مشاہیرِ سخن میں کرتے ہیں اُن کا شمار

مزید دکھائیں

احمد علی برقی اعظمی

ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی اعظم گڑھ کے ایک ادبی خانوادے سے تعلق رکھتے ہیں۔ آپ کے والد ماجد جناب رحمت الہی برقؔ دبستان داغ دہلوی سے وابستہ تھے اور ایک باکمال استاد شاعر تھے۔ برقیؔ اعظمی ان دنوں آل آنڈیا ریڈیو میں شعبہ فارسی کے عہدے سے سبکدوش ہونے کے بعد اب بھی عارضی طور سے اسی شعبے سے وابستہ ہیں۔۔ فی البدیہہ اور موضوعاتی شاعری میں آپ کو ملکہ حاصل ہے۔ آپ کی خاص دل چسپیاں جدید سائنس اور ٹکنالوجی خصوصاً اردو کی ویب سائٹس میں ہے۔ اردو و فارسی میں یکساں قدرت رکھتے ہیں۔ روحِ سخن آپ کا پہلا مجموعہ کلام ہے۔

متعلقہ

Back to top button
Close