ادبغزل

کس پہ روئیں کہ خود ہی جہانِ ادب

ناظم ظفؔر

کس  پہ روئیں  کہ خود  ہی جہانِ ادب

اجنبی     ہو     گیا      درمیانِ     ادب

خود  کو   کہتے   ہیں   جو   پاسبانِ  ادب

درحقیقت    وہ    ہیں   دشمنانِ   ادب

شاعری  ،  شعریت   سے   جدا   ہوگئی

ہر   جگہ     بچھ  گئی   ہے  دکانِ  ادب

جس  نے  کاغذ پہ  چھِڑکا  ہو دل کا لہو

کوئی   اظؔہر   سا   ہے   ترجمانِ   ادب ؟

ایسے      استاد      کی     سرپرستی    ملے

 مجھ  کو حاصل ہو جس سے کمانِ ادب

ایسا    ماحول   برپا   ہو   اس   شہر   میں

ہوں    نہ   محروم   پھر   طالِبان   ادب

کی، غزل کی طلب ، آج عشاق نے

ہم  نے  پھر  چھیڑ دی داستانِ ادب

 شعر ہے حسرتوں کے  سلگنے  کا  نام

دم جو اوروں  کا لے کھینچ،جانِ ادب

بحرِِ الفاظ    میں    ،  فکر  !  کشتی   نما

اور   اردو     مری   ،   بادبانِ   ادب

ٹوٹی  پھوٹی  غزل ، شوقِ اصلاح  میں

لے  کے  حاضر  ہے یہ نوجوانِ ادب

شعر  ہے  لفظ میں  درد سازی  کا فن

اور   غزلیں    ظفؔر    کی    بیانِ  ادب

مزید دکھائیں

متعلقہ

Close