ادبغزل

ہے آفتِ جاں اپنے لئے مغربی تہذیب

احمد علی برقیؔ اعظمی

ہے آفتِ جاں اپنے لئے مغربی تہذیب
لوٹا دے مجھے اپنی کوئی مشرقی تہذیب

آغاز ہے اس کا ابھی کیا جانے ہو انجام
’’ لائے گی ابھی اور تباہی نئی تہذیب ‘‘

اسلاف سے ہے نسلِ جواں اپنے گریزاں
ہے رو بہ زوال اپنی وہ اچھی بھلی تہذیب

دیکھو جسے کرتا ہے روایت سے بغاوت
اچھائی پہ ہے آج مسلط بُری تہذیب

محفوظ نہیں آج بزرگوں کا تقدس
تھی پہلے جو موجود کہاں کھو گئی تہذیب

ہے مشرقی تہذیب رواداری کی مظہر
بے راہ روی کا ہے سبب مغربی تہذیب

اقدارِ کُہن میں تھی نہاں عظمتِ رفتہ
ہوگی نہ عیاں کیا وہ دوبارہ کبھی تہذیب

باز آئے ہم اس دور ترقی کی رَوِش سے
مطلوب ہے برقی ؔ ہمیں اپنی وہی تہذیب

مزید دکھائیں

احمد علی برقی اعظمی

ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی اعظم گڑھ کے ایک ادبی خانوادے سے تعلق رکھتے ہیں۔ آپ کے والد ماجد جناب رحمت الہی برقؔ دبستان داغ دہلوی سے وابستہ تھے اور ایک باکمال استاد شاعر تھے۔ برقیؔ اعظمی ان دنوں آل آنڈیا ریڈیو میں شعبہ فارسی کے عہدے سے سبکدوش ہونے کے بعد اب بھی عارضی طور سے اسی شعبے سے وابستہ ہیں۔۔ فی البدیہہ اور موضوعاتی شاعری میں آپ کو ملکہ حاصل ہے۔ آپ کی خاص دل چسپیاں جدید سائنس اور ٹکنالوجی خصوصاً اردو کی ویب سائٹس میں ہے۔ اردو و فارسی میں یکساں قدرت رکھتے ہیں۔ روحِ سخن آپ کا پہلا مجموعہ کلام ہے۔

متعلقہ

Close