ادبغزل

یہ کیسا دو ر لا یا جا رہا ہے!

خیرالدین اعظم   

   یہ  کیسا  دو ر  لا  یا  جا  ر  ہا  ہے

   ہمیں  ظا  لم  بتا  یا   جا  ر  ہا ہے

یہاں  رکھنا  قدم  دیکھو سنبھل کے

ا  ب  ہر  جا  خار  پا  یا جا  رہا ہے

چلی  ہے  مغربی  سازش کی آندھی

جو اب  مذہب  بھلا  یا  جا رہا ہے

جیسے  رہنا  تھا  اپنے گھر کے  اندر

اُ  سے  با  ہر  بلا  یا  جا  ر  ہا  ہے

جیسے  سمجھا  گیا  ما  لی  چمن  کا

وہی  د  شمن  بتا  یا  جا   ر  ہاہے

ہے جن کے دم سے گلشن کی بہاریں

و  ہی  آعظمؔ  ستا  یا  جا  ر  ہاہے

مزید دکھائیں

خیرالدین اعظم

کہاں لے کر مجھے جائیگی اب یہ گردش دوراں نہ رہبر ھے، نہ رستہ ھے، نہ منزل کی نشانی ھے خیرالدین اعظم

متعلقہ

Close