ادبنظم

یہ گولیاں کیوں چلائی جاتی ہیں؟

خالد راہیَ

یہ گولیاں کیوں چلائی جاتی ہیں

یہ کتنا شور مچاتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صفِ ماتم بچھاتی ہیں

ہنستے بستے آنگن اجاڑ دیتی ہیں

کوئی دشمن نہیں انکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نہ کوئی دوست ہوتا ہے

کوئی بتائے ان آگ اگلتی مشینوں کو

تم میں سے جو عجب آگ نکلتی ہے

یہ چراغِ زندگی کو گل کرتی ہے

یہ آگ احساس سے عاری ہوتی ہے

جو نہ تیری ہوتی ہیں

نہ میری ہوتی ہیں

اور ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جب بچھڑ جاتا ہے

کوئی بہت پیارا اپنا

کتنا کہرام مچتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی زارو قطار روتا ہے

معصوم بچوں کہ سر سے سایہ چھین لیتی ہیں

دنیا جنہیں یتیم کہتی ہے

ماں کا لختِ جگر دفن ہوجاتا ہے

ایک عورت پاگل سی دکھتی ہے

سفید لبادے میں ملبوس ہوتی ہے

وہ بیوہ کہلاتی ہے

ساتھ جینے مرنے کہ وعدے

جب اس بیوہ کو یاد آتے ہیں

کسی کو کیا معلوم دل پر کتنے نشتر چل جاتے ہیں

سب ٹوٹ جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔زمانہ جیسے روٹھ جاتا ہے

سب قصے پرانے ہوتے جاتے ہیں

مگر ایک سوال ہے جو سب اٹھاتے ہیں

یہ گولیاں کیوں چلائی جاتی ہیں

یہ کتنا شور مچاتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔صفِ ماتم بچھاتی ہیں ۔

مزید دکھائیں

متعلقہ

Close