غزل

اداس لمحوں سے دل لگانا ہمیں نہ آیا

کوئی بھی غم  معتبر  بنانا ہمیں نہ آیا

ذیشان الہی

اداس   لمحوں   سے   دل     لگانا   ہمیں  نہ   آیا

کوئی   بھی   غم    معتبر     بنانا   ہمیں  نہ   آیا

ہمیں   نہ   آیا   کسی   کی  زلفوں  کو  شام  کہنا

کسی  کے   چہرے   کو   گُل   بتانا   ہمیں  نہ  آیا

کسی  سے  اک  عمر  کی  رفاقت  کا عہد  کر  کے

اکیلا    رستے    میں   چھوڑ   جانا   ہمیں  نہ  آیا

یہ شب  کسی دلربا کی یادوں سے مہکی شب  یہ

یہ    شب   لبِ   آب   جو     بتانا   ہمیں  نہ    آیا

یہ  ہم  جو  یادوں کا  دکھ مسلسل  اٹھا رہے ہیں

بھلانے    والوں   کو   بھول   جانا   ہمیں   نہ  آیا

زمانہ   آسودہ    حال   ہم   کو    سمجھ  رہا   ہے

وہ  یوں  کہ  حالِ   زبوں   دکھانا  ہمیں   نہ   آیا

یہ سچ ہے اپنا  ہی  باغ  اجڑتے  ہوئے  جو  دیکھا

پرائے   باغوں   میں   گل   کھلانا   ہمیں   نہ  آیا

کچھ اس  لئے بھی تمام  عالم  سے   کٹ گئے  ہم

فریب   کھا   کر    فریب   کھانا   ہمیں   نہ    آیا

سیاہ   شب  میں  دیا   میسر  نہ جب  کوئی  ہو

جنون  و  وحشت  میں گھر  جلانا   ہمیں نہ  آیا

لہو  میں  اپنے   ہیں  تر بتر  اس  لئے بھی شاید

کہ   خونِ   ناحق   کبھی     بہانا   ہمیں  نہ   آیا

حرم  سراؤں  میں  کچّی عمروں  کی  خادمائیں

کسی  سے  دکھ  ان  کا کہہ سنانا   ہمیں  نہ  آیا

ہمارے   سر    آ    گیا   جو    الزامِ    بے   وفائی

ہر   ایک   غم    کو     ترا     بتانا   ہمیں  نہ  آیا

کسی  کا  ذیشان  ذکر  شعروں میں کر کے اپنے

غزل   کسی   اور     کو     سنانا   ہمیں  نہ   آیا

مزید دکھائیں

ذیشان الہی

276۔۔۔۔ ذیشان الہٰی ذیشان الہٰی 2 اگست 1990 کو ٹانڈہ امبیڈکر نگر(فیض آباد) یو.پی ، بھارت میں پیدا ہوئے۔ میٹرک 2005 میں قومی انٹر کالج ٹانڈہ فیض آباد سے کی۔ انٹرمیڈیٹ 2008 میں قومی انٹر کالج ٹانڈہ سے کی۔ بسلسۂ روز گار سعودی عرب میں مقیم ہیں۔ شاعری کا باقاعدہ آغاز 2010 میں فیس بک کے ادبی تنقیدی گروپ اردو انجمن اور انحراف پر آنے کے بعد کیا۔

متعلقہ

Close