غزل

ترے روبرو آئینہ چاہتا ہوں

احمد نثار

تِرے نام کی ابتداء چاہتا ہوں

تِرے نام کی انتہا چاہتا ہوں

وفا کے صلہ میں وفا چاہتا ہوں

مِری سادگی دیکھ کیا چاہتا ہوں

فنا کر چکا میں جسے تیری خاطر

میں اس زندگی کی بقا چاہتا ہوں

محبت کی ہر سو جو برسائے بارش

خدایا میں ایسی گھٹا چاہتا ہوں

تجھے دیکھ کر میرے لب سل گئے ہیں

یہ سچ ہے کہ کچھ بولنا چاہتا ہوں

تمنائے دل آرزوئے محبت

لیے دل میں کچھ پوچھنا چاہتا ہوں

تجھے جان کر خود کو پہچان پایا

تِرے نام کا اب نشہ چاہتا ہوں

میں دنیا کی دلدل سے باہر نکل کر

تِرے عشق میں ڈوبنا چاہتا ہوں

یہ تجھ سے نثارؔ آئینہ کہہ رہا ہے

تِرے روبرو آئینہ چاہتا ہوں

مزید دکھائیں

احمد نثار

نام سید نثار احمد، قلمی نام احمد نثار۔ جائے پیدائش شہر مدنپلی ضلع چتور آندھرا پردیش۔ درس و تدریس سے رضاکار موظف۔ اردو ادب، شاعری، تحقیق، ٹرائننگ اہم دلچسپیاں۔ انگریزی، ہندی تیلگو اور اردو زبانوں میں مہارت۔ کمیونکیشن اسکلز ایکسپرٹ۔ شعری مجموعہ روحِ کائنات، کہکشانِ عقیدت (نعتیہ مجموعہ) سکوتِ شام (زیرِ ترتیب)، تصنیف مواصلاتی مہارات برائے بی یو یم یس طلباء (Communication Skills for BUMS Students) ۔ ویکی پیڈین و ویکی میڈین۔ فی الحال رہائش پونے/ممبئی، مہاراشٹر۔

متعلقہ

Close