غزل

 تُو رزم گاہ ِ تجسس میں دُو بدُو بھی نہیں

ادریس آزاد

 تُو رزم گاہ ِ تجسس میں دُو بدُو بھی نہیں
شکست خوردہ نہیں میں تو سرخرو بھی نہیں

اُسے تو عالم ِ لاھوت کہہ کے ٹال دیا
وہاں سے خاک ملے گی وہاں تو ’’ھُو‘‘ بھی نہیں

تجھے جہاں کے پس و پیش میں تلاش کیا
تو جابہ جا بھی نہیں ہے، تو رُو بَرُو بھی نہیں

خیال و خواب میں بستے ہیں تُو بھی، میں بھی مگر
جہاں میں، میں بھی نہیں ہوں، جہاں میں تُو بھی نہیں

سِرے سے کچھ بھی نہیں ہے کہ جو حقیقت ہو
یہ سنگ و خشت خیالی ہیں ان کو چھُو بھی نہیں

کہیں ثبوت نہیں ہے وجود کا کوئی
جو میرے دِل میں نہیں ہے وہ چارسُو بھی نہیں

یہ سوزو ساز، یہ درد و الم، یہ رقص و سرود
یہ دل بھی، آنکھ بھی، طوفان بھی، لہوبھی نہیں

میرا یہ غم کہ کبھی کامیاب ہونہ سکا
تری خوشی کے ترے رُو برو عدو بھی نہیں

نہیں نہیں کوئی باطل نہیں، کوئی بھی نہیں
کسی شریر میں جب سرکشی کی خُو بھی نہیں

تمام لفظ ہمیشہ سے بے معانی ہیں
یہ اتنا سچ ہے کہ اب اس پہ گفتگو بھی نہیں

مجھے یقیں ہے کہ میں ہی نہیں کہیں موجود
تو اس کے بعد مجھے تیری جستجو بھی نہیں

میں خود کو سارے زمانے میں دیکھ آیا ہوں
میں در بدر بھی نہیں ہوں ، میں کُو بہ کُو بھی نہیں

مزید دکھائیں

ادریس آزاد

ادریس آزاد (7 اگست 1969ء) پاکستان کے معروف لکھاری، شاعر، ناول نگار، فلسفی، ڈراما نگار اورکالم نگار ہیں۔ انہوں نے فکشن، صحافت، تنقید، شاعری، فلسفہ، تصوف اور فنون لطیفہ پر بہت کچھ تحریر کیا ہے۔ ان کا اصل نام ادریس احمد ہے تاہم اپنے قلمی نام ادریس آزاد سے جانے جاتے ہیں۔ بطور شاعر انہوں نے بے شمار نظمیں تحریر کی ہیں جو روایتی مذہبی شدت پسندی کے برعکس روشن خیالی کی غماز ہیں۔ ان کی مشہور کتب ’عورت، ابلیس اور خدا، ’اسلام مغرب کے کٹہرے میں‘ اور ’تصوف، سائنس اور اقبالؒ‘ ان کے مسلم نشاۃ ثانیہ کے جذبے کی عکاسی کرتی ہیں۔ روزنامہ دن، ’آزادانہ‘ کے عنوان سے ان کے کالم شائع کرتا ہے ۔

متعلقہ

Back to top button
Close