غزل

جدا زمانے سے کچھ بھی اگر بنایا جائے

جنونِ   شوق   کو ،  شوریدہ   سر   بنایا  جائے

جہاں گیر نایاب

جدا   زمانے   سے  کچھ  بھی  اگر   بنایا  جائے

جنونِ   شوق   کو ،  شوریدہ   سر   بنایا  جائے

بگڑ   نہ  جائیں  کہیں  خد و خال  پھر   میرے

مجھے سلیقے  سے   اب   کوزہ گر ، بنایا  جائے

اگر   دکھانا   ہے   مقصود  خوں   چکاں   منظر

تو  کیا  ضروری  ہے  نیزے  پہ  سر  بنایا  جائے

بہت    طویل    ہے    یہ   عرصئہ   فراق   اسے

جو   ہو  سکے  تو   ذرا    مختصر   بنایا  جائے

دیا  ہے   حکمِ سفر   جب    مجھے   سمندر  کا

ہر  ایک   موج  کو   پہلے   بھنور   بنایا   جائے

بنا کے  خود  کو  کبھی  ایک سیپ  کی صورت

خمیرِ  عشق  سے  اس  میں   گہر   بنایا  جائے

اک عمر  کٹ  گئی  اس  دل کو  دل  بنانے میں

مزہ  تو   جب  ہے  کہ  حُسنِ  نظر ، بنایا  جائے

وہ جسکی لوسے اندھیروں کی روح کانپتی ہے

اسی    دیے     کو    نویدِ   سحر    بنایا    جائے

بہاتے  رہتے  ہیں  جن   کو   فضول  ہم   نایاب

ان  آنسوؤں   کو   کبھی  آبِ زر    بنایا    جائے

مزید دکھائیں

جہاں گیر نایاب

جہا ں گیر نایاب کا اصل نام محمد جہانگیر عالم ہے۔ آپ درس و تدریس کے پیشے سے وابستہ ہیں اور سنجیدہ شاعری کے ساتھ ساتھ طنزیہ و مزاحیہ شاعری کے لیے بھی معروف ہیں۔

متعلقہ

Close