غزل

جو  دل  پہ  گراں  گزرے  وہ  ناز بدل ڈالو

غصؔے   کا  صنم   اپنے   انداز   بد ل   ڈالو

سرفراز حسین فراز

جو  دل  پہ  گراں  گزرے  وہ  ناز بدل ڈالو

غصؔے   کا  صنم   اپنے   انداز   بد ل   ڈالو

جو بات بھی کہنی ہے نرمی سے کہو ہمدم

چھوڑو   یہ  تنک   لہجہ   آواز   بد ل  ڈالو

دستورِ  زمانہ  کو  ملحو ظِ  نظر  ر کھ کر

ہر   بات   کو   کہنے   کا   انداز   بدل  ڈالو

ایسے  نہ چلو  جاناں  پاٶں نہ پھسل جائے

اس   عمرِ   گزشتہ   میں  اغماز  بدل  ڈالو

تاریخ  کیا  بدلو  گے  ہممت  ہے اگر تم میں

جو  تاج  کے  دل  میں  ہے  ممتاز بدل ڈالو

رکؔھو نہ قریں اس کوہرگز بھی کبھی اپنے

جو  راز  عیا ں  کر  د ے  ہمراز  بد ل  ڈالو

شیشے سےبھی نازک ہےمارو نہ صنم پتھر

تم  دل  سے  بھلے  کھیلو  انداز  بدل  ڈالو

ناپوگےچھتیں کب تک اڑنا ہےفلک پر بھی

چھو نی  ہے  بلند ی  تو  پر واز  بدل  ڈالو

مشکل  ہے اثر ڈالے ا س دور کے انساں پر

نغمو ں  کا  فراز  اپنے  تم  ساز  بدل  ڈالو

مزید دکھائیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ

Close