غزل

خواب آنکھوں میں ٹوٹ جانےسے

سالک ادیب بونتی

خواب آنکھوں میں ٹوٹ جانےسے
درد ہوتا ہے مسکرانے سے

کتنے مغرور ہوگئے تارے
ایک سورج کے ڈوب جانے سے

شہربھرمیں سیاہی پھیلی ہے
لوگ ڈرتےہیں سچ بتانےسے

آپ کاداغ کم نہیں ہوگا
آئینہ غیرکودِکھانےسے

جن کی فطرت میں ہوکجی اُن کو
فائدہ کیاہےآزمانےسے

ہم  نےتائیدِحق ادیب جوکی
دشمنی ہوگئی زمانےسے

مزید دکھائیں

متعلقہ

Close