غزل

درمیاں اس  نے حیا کی جو ردا تانی ہے

ذیشان الٰہی

درمیاں   اس  نے  حیا  کی  جو  ردا   تانی   ہے

سامنے    میرے    یہی    ایک    پریشانی     ہے

۔

کاسۂ   دل   میں   زرِ    غم   کی   فراوانی   ہے

درد   سینے  میں جو  تھا  اب  سرِ   پیشانی ہے

۔

منکشف  حسن   ترا  مجھ  پہ  ہوا   پہلے   بھی

بحرِ   جذبات  میں  پر   اب کے جو  طغیانی ہے

۔

میرا پیغام  اُسے  پہنچانے  کی جلدی  میں, صبا

بات  سنتی  نہیں   چل   پڑتی   ہے,  دیوانی ہے

۔

زخم   پر   زخم    لگاتا    ہوں   بدن   پر    اپنے

کہ    میسر     یہی    اک   پوششِ    عریانی ہے

۔

ابر  بھی  گزرے   اِدھر  سے  تو  بپھر  جاتا  ہوں

سرِ  صحرا    یوں  ہی  قائم  نہیں   سلطانی  ہے

۔

میرا  اصرار   فقط   وصل   پہ   موقوف   نہیں

اور اک بات بھی ہے  تجھ  سے  جو  منوانی  ہے

۔

سیکھ لی اس نے بھی ذیشان اشاروں کی زباں

بات   کرنے   میں   ہمیں   اب  ذرا   آسانی   ہے

مزید دکھائیں

ذیشان الہی

276۔۔۔۔ ذیشان الہٰیذیشان الہٰی 2 اگست 1990 کو ٹانڈہ امبیڈکر نگر(فیض آباد) یو.پی ، بھارت میں پیدا ہوئے۔ میٹرک 2005 میں قومی انٹر کالج ٹانڈہ فیض آباد سے کی۔ انٹرمیڈیٹ 2008 میں قومی انٹر کالج ٹانڈہ سے کی۔ بسلسۂ روز گار سعودی عرب میں مقیم ہیں۔ شاعری کا باقاعدہ آغاز 2010 میں فیس بک کے ادبی تنقیدی گروپ اردو انجمن اور انحراف پر آنے کے بعد کیا۔

متعلقہ

Close