غزل

دل کی جلن خیال میں جب جگمگا گئی

سینے  کے داغ کو مہِ کامل بناگئی

شازیب شہاب

دل کی جلن خیال میں جب جگمگا گئی
سینے   کے   داغ   کو   مہِ  کامل  بناگئی

سر  پھوڑ  کر  کنارے  پہ سفّاک موج کا
بےجان  ریت  زیست  کا مطلب بتا  گئی

دستِ ہوا نے چھین لی پھر تابِ شاخِ گل
پھر  اک  کلی  بہار  کی  قیمت چکا گئی

سورج کے ابتسام سے  روشن ہو  کائنات
غم  دھوپ  کا  بھلا کےسحر مسکرا گئی

کس طرح رکھتے روح کو جذبات سے الگ
دل  پر   پڑی   نظر  تو   نظر  لڑکھڑا  گئی

یہ  دردِ ہجرِ یار  کی لذت بھی  خوب  ہے
آنکھوں میں کیف لب پہ تبسم سجا گئی

یہ سوچ کر شہابؔ !میں حیران ہوں بہت
ننھی  سی  میری  فکر  انہیں  آزما  آگئی

*┄┅═══❁❁═══┅┄*

مزید دکھائیں

متعلقہ

Close