دل کے گھاؤ تمھیں کیا پتا

0

افتخار راغبؔ

دل کے گھاؤ تمھیں کیا پتا

مسکراؤ تمھیں کیا پتا

کیا پتا ٹوٹے پتّوں کا کرب

اے ہواؤ تمھیں کیا پتا

کتنا میٹھا ہے توبہ کا پھل

پارساؤ تمھیں کیا پتا

کیا ہے مفہومِ حرفِ وفا

بے وفاؤ تمھیں کیا پتا

کیا پتا عظمتِ انکسار

خود نماؤ تمھیں کیا پتا

کیوں چھڑکتا ہے کوئی نمک

میرے گھاؤ تمھیں کیا پتا

کس کے دم سے ہیں یہ رونقیں

تم نہ جاؤ تمھیں کیا پتا

شہرِ مہر و وفا کا چلن

کج اداؤ تمھیں کیا پتا

بزم آرائی کی زحمتیں

ہم نواؤ تمھیں کیا پتا

کیا کہا وہ ہیں میرے خلاف

جاؤ جاؤ تمھیں کیا پتا

تبصرے