غزل

دیکھ رہے ہیں!

سالک ادؔیب بونتی

ہاتھوں پہ  دھرے  ہاتھ  کدِھر  دیکھ رہے  ہیں

چپ  چاپ    کھڑے  جلتا  نگر  دیکھ  رہے   ہیں

۔

منظر  لہو   لہو   ہے  مسلماں    کی   ذات    کا

ہم   لوگ    چائے   پیتے  خبر  دیکھ  رہے   ہیں

۔

چھائی ہوئی ہے بدلی بلاؤں  کی   ہر  طرف

اور  اہلِ    نظر   صرف نظر   دیکھ   رہے   ہیں

۔

کچھ لو گ ظالموں کی حمایت میں کھڑےہیں

انسان   پہ  ہم    موت  کا   ڈر  دیکھ  رہے  ہیں

۔

جاتی    نہیں    ہے   اپنی  صدا   آسمان     تک

سب    اپنے   گناہوں   کا   اثر   دیکھ   رہے ہیں

۔

جذبےہیں سرد منھ پہ   ہیں  تالے  لگے  ہوئے

جلتا   ہُوا   ہم     اپنا  ہی  گھر   دیکھ  رہے  ہیں

۔

حد   ہو گئی    ادؔیب   ستم  جھیلتے   ہیں  سب

کیوں بولتے نہیں   ہیں    اگر  دیکھ  رہے   ہیں  

مزید دکھائیں

متعلقہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close