غزل

رنگ اورنگ سلیماں ہے کہاں میرے بعد

شاہدکمال

رنگ اورنگ سلیماں ہے کہاں میرے بعد
چشم خونناب ہے اک سیل رواں میرے بعد

سرمہ چشم غم جاں تھا مری آہوں کا
اب تو آوارہ وحشت ہے دھواں میرے بعد

جو مرا محرم اسرا نوا تھا اے دوست!
ہے وہی نغمہ شام گزراں میرے بعد

ہجر کے دشت میں اے میرے مسافر تنہا
کیسے گزرے گی شب کوہ گراں میرے بعد

ہاں اڑے گی وہ ترے قصر رعونت پر خاک
حسن ہوجاے گا صحرا کی اذاں میرے بعد

رونق کوچہ قاتل تو ہے آباد ابھی !
میری وحشت ہے نواسنج فغاں میرے بعد

میں ہوں خود اپنی ہی تہذیب سخن کاقاتل
کون سمجھے گا یہاں میری زباں میرے بعد

مجھ سے پوچھے ہے یہ آشفتہ بیانی میری
کون ہے شاہد شوریدہ بیاں میرے بعد

مزید دکھائیں

متعلقہ

Close