غزل

روحِ ایمان میں ابال کہاں

اس صدی میں حسیں مثال کہاں

سالک ادؔیب بونتی

روحِ ایمان    میں      ابال    کہاں
اس صدی میں حسیں مثال کہاں

چاک کردے جوپتھروں   کا  جگر
عصرِ نو!تجھ میں وہ کمال  کہاں

عشق  مانا  حسیں   نگر  ہے  مگر
لوٹ آنے  کی  کچھ   مجال   کہاں

جب سےتم بس گئےخیالوں  میں
ہم کواپنابھی کچھ  خیال   کہاں

ہم  کو  معلوم  ہے  عداوت    میں
پیار   کا    ہوگا    احتمال    کہاں

جستجو ان کی   رنگ    لائی   ہے
ہجرکا ان کو  کچھ    ملال  کہاں

یہ    قرینہ     ادؔیب     لازم      ہے
ہو خموشی کہاں   سوال     کہاں

مزید دکھائیں

متعلقہ

Close