غزل

شدتِ شوق میں تجدیِد گماں چاہتا ہے

قلبِ صد وہم چراغوں سے دھواں چاہتا ہے

شازیب شہاب

 شدتِ شوق میں تجدیِد گماں چاہتا ہے
قلبِ صد وہم چراغوں سے دھواں چاہتا ہے

کیا دھنک رنگ جنوں بھی ہے پرستارِ خرد
دستِ وحشت جو کفِ سود و زیاں چاہتا ہے

چشمِ دزدیدہ سمجھ جائے غمِ قلب تپاں
گیسوئے ماہِ منور یہ کہاں چاہتا ہے

جگ میں مشہور تھی توحیدِ محبت جس کی
اب وہی حسنِ حرم عشقِ بتاں چاہتا ہے

زندگی نقشِ کفِ پا کے بنا کچھ بھی نہیں
راستہ عمر کا ہر گام نشاں چاہتا ہے

چشمِ تر زلفِ پریشاں کا نہیں میں طالب
دل مرا سوز دروں دردِ نہاں چاہتا ہے

سازِ جذبات تخیّل میں نہ یوں چھیڑ شہابؔ
تارِ احساس خیالوں سے زباں چاہتا ہے

مزید دکھائیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ

Close