غزل

شکایت ہے مجھے ان نو جوانوں سے

مجاہد ہادؔی ایلولوی

شکایت ہے مجھے ان نو جوانوں سے
بہت مرعوب ہیں جو بے زبانوں سے

.

ہوس  نے کردیا  برباد انساں  کو
زمیں پر  آگیے سب  آسمانوں سے

.

حفاظت دین کی کرتے رہیں گے ہم
بھلے ہی ہاتھ ہم دھو بیٹھے  جانوں سے

.

جو دنیا میں مسافر بن کے جیتے ہیں
سدا وہ دور رہتے ہیں خزانوں سے

.

ہے وہ سب سے بڑا شیطان دنیا میں
جسے تکلیف ہوتی ہے اذانوں سے

.

کہیں دنیا میں تم دل مت لگا لینا
سبق سیکھو وفا کی داستانوں سے

.

ثریا تک پہنچ سکتے ہیں وہ ہادؔی
ارادے پختہ ہوں جن کے چٹانوں سے

مزید دکھائیں

مجاہد ہادؔی ایلولوی

تخلیقِ کارِ کلامِ دل پزیر شعر و سخن کا نیا ابھرتا ستارہ جناب مجاہد ہادؔی ایلولوی صاحب کا تعلق ہندوستان کے صوبہ گجرات سے ہیں, آپ پیشے سے عالمِ دین ہیں آپ نے اپنی ابتدائی تعلیم اپنے آبائی وطن ایلول میں حاصل کی اس کے بعد مزید عربی اردو اور فارسی کی تعلیم کے حصول کے لئے اپنے علاقہ کا معروف ادارہ ( جامعہ اسلامیہ امداد العلوم وڈالی) کا رخ کیا اور وہی سے 2016 میں سند فضیلت حاصل کی اور اس کے بعد سے اب تک احمدآباد کے قریب شہر بوٹاد میں مقیم ہیں آپ کا تعلیق گجرات کے ضلع سابرکانٹھا کے ایک علمی خاندان سے ہیں آپ کے والد محترم کا اسمِ گرامی عمر ابن محمد پشوا ہیں وہ بھی پیشے سے عالمِ دین ہیں, آپ افق شعر و سخن کا ایک چمکتا ستارہ ہیں اور نئی نسل کے فعال ترین شعراء میں سے ایک ہیں

متعلقہ

Close