غزل – درد  الفت  بساؤ  سینے  میں 

32

عتیق انظر

درد  الفت  بساؤ  سینے  میں
پھول سبزہ  اگاؤ  سینے میں

وہ   بتاؤ    جو  آنکھ کہتی  ہے
سچ کو اب مت چھپاؤ سینے میں

جس  سے  رکھو خلوص  کا  رشتہ
اس کے غم بھی  بساؤ  سینے میں

خواہشیں خیمہ زن ہوئیں جب سے
جل   رہا   ہے   الاؤ   سینے   میں

دوستی     رہبری     وفا داری
کیسے  کیسے  ہیں گھاؤ  سینے  میں

مسکرا  کر   ملا   میں  دنیا  سے
رکھ   لیا   ہر   تناؤ   سینے   میں

تبصرے