غزل

مجھ پہ یہ تیرا کرم اور عنایت کیسی

آج   امڈی  ہے   تِرے  دل  میں   محبت  کیسی

جہانگیر نایاب

مجھ    پہ  یہ   تیرا   کرم  اور   عنایت  کیسی

آج   امڈی  ہے   تِرے  دل  میں   محبت  کیسی

خواب آنکھوں میں سجارکھےتھے ہم نے کیاکیا

سامنے   آئی  ہے  تعبیر   کی   صورت    کیسی

ہم تو رہتے ہیں ہر اک حال میں راضی بہ رضا

رنج   کہتے   ہیں  کسے   اور   مصیبت  کیسی

راستے   میں  تُو   اگر   لطفِ   سفر   چاہتا  ہے

پھر ہے  منزل سے گلے  ملنے  کی عجلت کیسی

مطلبی   ہو   گیا  ہے   جب    یہ   زمانہ   سارا

اب  اگر  تم  بھی  بدل جاؤ  تو  حیرت  کیسی

کوئی شے حسن سے خالی نہیں اس دنیا  میں

منحصر اس پہ ہےاب کس کی بصیرت  کیسی

تم  تو  پربت سے  بھی اونچے  ہو تمہارے آگے

میں تو رائی بھی نہیں ہوں مِری قامت کیسی

میں  نہ کہتا تھا  اکڑ  ٹھیک  نہیں   ہے  بھائی

اب  اگر  ٹوٹ   گئے   ہو  تو   یہ  خفّت  کیسی

پاکے  منزل کو  بھی آسودہء  منزل نہیں  میں

جسم  سے  لپٹی  ہے  یہ  گرد  مسافت  کیسی

اپنے  ہی خول میں  سمٹے نظر  آتے ہیں جناب

آپ    نے   پائی   ہے   نایاب   طبیعت    کیسی

مزید دکھائیں

جہاں گیر نایاب

جہا ں گیر نایاب کا اصل نام محمد جہانگیر عالم ہے۔ آپ درس و تدریس کے پیشے سے وابستہ ہیں اور سنجیدہ شاعری کے ساتھ ساتھ طنزیہ و مزاحیہ شاعری کے لیے بھی معروف ہیں۔

متعلقہ

Close