غزل

وقت کیساتھ ساتھ مسکرانا بھول گیا ہوں

خالد راہی

وقت کیساتھ ساتھ مسکرانا بھول گیا ہوں

شائد اس کو یاد جو آنا بھول گیا ہوں

۔۔

یہ بات بھی اسکو بتانا بھول گیا ہوں

اب میں روٹھنا منانا بھول گیا ہوں

۔۔

زمانے بیت گئے ہوں خود سے ملاقات کئے

بھیج کر کہیں خود کو بلانا بھول گیا ہوں

۔۔

گستاخ کہہ کر بزم سے نکالا جا رہا ہوں

شائد نظروں کو جھکانا بھول گیا ہوں

۔۔

بہت خوفزدہ، سہمی سی آئی تھی نیند

آنکھوں میں اسکو بسانا بھول گیا ہوں

۔۔

ملاقات کا وعدہ کر کہ تو آگیا ہوں

نا ملنے کا بہانا بنانا بھول گیا ہوں

۔۔

گمنام راستوں میں کوئی بھٹکتا ہے

رستہ جسکو بتانا بھول گیا ہوں

۔۔

ڈوبنے سے مجھکو روک رہا ہے خالد

جسے گھر چھوڑ کے آنا بھول گیا ہوں

مزید دکھائیں

متعلقہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

اسے بھی ملاحظہ فرمائیں

Close
Close