غزل

کتنی آنکھوں میں جل گیا پانی

خواب کتنے کُچل گیا پانی

سالک ادؔیب بونتی

کتنی آنکھوں میں جل گیاپانی
خواب کتنے     کُچل گیا   پانی

کب سےٹھہراتھامیری پلکوں پر
اُن سے مل کرپھسل  گیا    پانی

کچھ توحالات بھی مخالف تھے
کچھ تودِل میں ہی دَل  گیاپانی

کوڑےکرکٹ  کو   تیرتے   دیکھا
اور   کلیاں   مسل   گیا      پانی

بس  روانی ہی تھم گئی   ہوگی
یہ نہ سمجھو سنبھل  گیا  پانی

جس نےدعویٰ   کِیا  خدائی   کا
اُس کو پَل  میں  نگل   گیا پانی

بھیڑمیں   راستہ   بناکے    ادؔیب
آگےسب   سے   نکل    گیا   پانی

مزید دکھائیں

متعلقہ

Close