غزل

کرتے ہو تم جو باتیں نشیب و فراز کی

آتی  نہیں سمجھ  میں  کبھی  وہ  فراز  کی

سرفراز حسین فراز

 (پیپل سانہ مرادآباد یو۔ پی)

کرتے   ہو   تم  جو  باتیں  نشیب  و فراز کی

آتی  نہیں سمجھ  میں  کبھی  وہ  فراز  کی

حق  با ت  سب  کے سا منے  کہتا ہے  بر  ملا

عادت   یوں   ہی بری  ہے  میاں  سرفراز کی

پڑ ھ کر  غزل  ہماری  وہ  حیرت سے کہ اٹھے

یہ   ہے  غز ل  تمھا ر ی  یا  ا حمد  فراز  کی

منھ چوم کرہمیشہ ہی کہتی تھی میری ماں

ہر   بات    ہی   نر ا لی  ہے  میر ے  فراز  کی

ہے   ہر   ورق   پہ   نا م  ا سی  کا  لکھا  ہوا

د یکھو   کتا ب   کو ئی   اٹھا   کر  فراز  کی

شعر و  سخن  پہ  دادجو ملتی ہے بس  وہی

دادِ  سخن  ہے  د و  ستو   د و لت   فراز کی

آ تا   گیا   خیا ل   تمہا ر ا   ا ے   جا نِ  من

ہو  تی   گئی   حسین   غزل   سرفراز  کی

آتا   ہے   دور   اچھا  برا  اس  میں  دیکھیے

ہے    زند  گی    کہا نی، نشیب  و  فراز کی

مزید دکھائیں

متعلقہ

Close