غزل

گلستانِ زبوں 

نزہت قاسمی

   یہ چکاچوند نگر اور اسکی روش

   تھمتی ہی نہیں یہ سرابی کشش

   یہ گلستانِ زبوں اور اسکی خلش

   نہیں درماں نہ سنبھلنے کی تپش

   جاگے جو نئی تحریکِ بیدار کی پرسش

   نہیں دیر بدلنے میں حالات کی طرزش

   کوئی اٹھے اور اٹھائے تو ابھی ترکش

   ہمت جو بندھے تو نہیں کوئی بندش

   ایسا بھی نہیں ہے جو حصولِ عرش

   جوکہ ملتا ہی نہیں کہیں اسکا نقش

   منزل وہ ہے جو فقت ارضِ فرش

   ڈھونڈے جو اسے فطرتِ گردش

   کسی تہہ میں چھپی اسکی جنبش

   مل ہی جائے گی اگر نہ آئے لخزش

   بعید نہیں رحمت میں رگِ جوش

   آ بھی جائے گی خدائی بخشش

 ہر میں, میں ہو نزہت حق کی کاوش

 نہیں دور اب بامِ رفعت کی دانش

مزید دکھائیں

متعلقہ

Close