غزل

ہر  خطا اس کی ہمیشہ درگزر کرتی ہوئی

جہاں گیرنایاب

ہر  خطا   اس  کی  ہمیشہ  درگزر   کرتی  ہوئی

فاصلوں کو دل کی چاہت  مختصر  کرتی ہوئی

ذہن و دل  کی  روشنی  کو  تیز  تر کرتی  ہوئی

گفتگو   سیدھے   تِری   دل  پر  اثر  کرتی  ہوئی

میرے جذبوں کے فسوں  میں قید  وہ ہوتا  ہوا

اس کے لہجے کی کھنک مجھ پر اثر کرتی ہوئی

زندگی   کی   تیزگامی   اور   دولت   کی  ہوس

آنے   والے  کل  سے  ہم  کو  بے  خبر کرتی ہوئی

حوصلہ  دیتا   ہوا  سا   مجھ   کو  میرا  اعتماد

بے  یقینی  دل  میں  پیدا  ڈر پہ  ڈر کرتی ہوئی

بھولاپن  اور  سادگی پر  اس کی  میں  مٹتا ہوا

ایک صورت موہنی سی دل میں گھر کرتی ہوئی

کس کو  یہ معلوم  اے نایاب  نسبت کس کی ہے

میرے  ہر   نقشِ  قدم   کو   معتبر  کرتی   ہوئی

مزید دکھائیں

جہاں گیر نایاب

جہا ں گیر نایاب کا اصل نام محمد جہانگیر عالم ہے۔ آپ درس و تدریس کے پیشے سے وابستہ ہیں اور سنجیدہ شاعری کے ساتھ ساتھ طنزیہ و مزاحیہ شاعری کے لیے بھی معروف ہیں۔

متعلقہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

اسے بھی ملاحظہ فرمائیں

Close
Close