غزل

ہم نے اس راہ سے اوروں کو گزرنے نہ دیا

زخمِ فرقت کو تری یاد نے بھرنے نہ دیا
غمِ تنہائی مگر رخ پہ ابھرنے نہ دیا

آج بھی نقش ہیں دل پر تری آہٹ کے نشاں
ہم نے اس راہ سے اوروں کو گزرنے نہ دیا

تونے جس روز سے چھوڑا اسے خالی رکّھا
میں نے خوشیوں کو بھی اس دل میں ٹھہرنے نہ دیا

ربط جو تجھ سے بنایا سو بنائے رکّھا
تو ہی کیا تیرا تصوّر بھی بکھرنے نہ دیا

تجھ کو دل میں رکھا بے عمر غموں کی مانند
اشک بن کر کبھی پلکوں پہ ابھرنے نہ دیا

ضبط اتنا کہ چراغوں سے ہوئے محوِ کلام
یاد اتنی کہ تجھے دل سے اترنے نہ دیا

آئینے توڑ دیئے جو بھی نظر سے گذرے
کسی مَہ رُو کو ترے بعد سنورنے نہ دیا

ہر گھڑ ی یاد تری ساتھ ہی رکھا ہمدم
تیرے سائے پہ بھی تنہائی پسرنے نہ دیا

مہ جبیں لاکھ حسیں ہو کوئی پر ابنِ چمنؔ
دیدنی شکل ترے جیسی نظر نے نہ دیا

مزید دکھائیں

اشہد بلال ابن چمن

نام ۔ اشہدبلال چمن ابن افضال احمد چمن. تاریخ پیدائش ۔ ۲۶نومبر۱۹۸۰ء. تعلق ۔ محلہ چمن نگر،قصبہ بلریاگنج،ضلع اعظم گڑھ. تعلیم ۔ ۲۰۰۳ء میں جامعۃ الفلاح بلریاگنج سے عالمیت سے فراغت حاصل کی. ۱۹۹۵ء سے اپنے شعری سفر کا آغاز کیا اوراپنے والد کا تخلص چمنؔ کی مناسبت سے اپنا تخلص ابنِ چمنؔ رکھا. مقیم حال ۔ ابوظبی , متحدہ عرب امارات.

متعلقہ

Close