غزل

یاد آئی ہے وہ اک زمانے  کے بعد

 چھپ  گئی تھی نظر  جو  ملانے کے  بعد

محمد نعمت اللہ برہاروی

یاد  آ ئی   ہے   وہ   اک   زمانے   کے  بعد
چھپ  گئی تھی نظر  جو  ملانے کے  بعد

چل  پڑی  ہے  وہ  پلکیں  بھگوتے  ہوئے
دل  پہ  بجلی  مرے  وہ  گرانے  کے  بعد

سارے  ارمان  دل  میں  دھرے  رہ  گئے
آنکھ  نم  ہو  گئی  تیرے  جانے  کے  بعد

دردِ   فرقت   سے   دو  چار   ہونے   لگا
بس ترے عشق میں چوٹ کھانے کے بعد

ہے  مرا  دل بھی بس میں کہاں  دوستو
اُس کی قربت کی خواہش جگانے کے بعد

غم  کی  چادر  سے  لپٹا  ہوا  بزم  میں
آ کے بیٹھا ہوں میں اُس کے جانے کے بعد

ہو  کے   مجبور   نعمتؔ  یہ   کہنا   پڑا
کیوں ہے تو در بدر چوٹ کھانے کے بعد

مزید دکھائیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close