غزل

یہ دانۂ ہوس تمھیں حرام کیوں نہیں رہا

عرفان وحید

یہ دانۂ ہوس تمھیں حرام کیوں نہیں رہا

اڑان کا وہ شوق زیرِ دام کیوں نہیں رہا

مسافتوں کا پھر وہ اہتمام کیوں نہیں رہا

سفر درونِ ذات بے قیام کیوں نہیں رہا

بکھر گئی ہے شب تو تیرگی کا راج کیوں نہیں

جو بام پر تھا وہ مہِ تمام کیوں نہیں رہا

ہمارے قتل پر اصولِ قتل گہ کا کچھ لحاظ!

صلیب و دار کا بھی اہتمام کیوں نہیں رہا

بھلا یہ کیسے مان لیں کہ دل کو صاف کرلیا

جو صلح ہو گئی تو پھر کلام کیوں نہیں رہا

جو شعبدے تھے تیرے پیر ِوقت اُن کا کیا ہوا

عطائے حسن و عشق پر دوام کیوں نہیں رہا

جو پیروۓ ہواۓ نفس و بندۂ ہوس ہوا

اسے یہ غم وہ وقت کا امام کیوں نہیں رہا

دلوں کو جیتنے کی جو کرامتیں تھیں کیا ہوئیں

نظر نظر جو فیض تھا وہ عام کیوں نہیں رہا

مزید دکھائیں

عرفان وحید

عرفان وحید کا تعلق پنجاب کے شہر مالیر کوٹلہ سے ہے۔ آپ پیشے سے انجینیر ہیں۔ عرفان نے اردو اور انگریزی میں قریباً ۲۰ کتابیں ترجمہ کی ہیں۔ آپ انگریزی ماہنامے 'دی کمپینیئن' اور انگریزی پورٹل 'ہیڈلائنز انڈیا' کے ایڈیٹر بھی رہ چکے ہیں۔

متعلقہ

Close