غزل

ہو دیدٔہ خوش خواب کی تعبیر کہاں تک

ہو دیدٔہ خوش خواب کی تعبیر کہاں تک
اے وقت ترے جبر کی توقیر کہاں تک

اے اہلِ صفا سچ کی زباں بند ہے تاچند
اے اہلِ جفا جھوٹ کی تشہیر کہاں تک

اب دوست بنانے کا ہنر بھی ذرا سیکھیں
کی جائے مہہ و نجم کی تسخیر کہاں تک

اے شہرِ انا تیرے فریبوں کے بھرم میں
آئینہ مثالوں کی ہو تحقیر کہاں تک

ہر آن کوئی مجھ میں نیا ٹوٹ رہا ہے
آخر کوئی خود کو کرے تعمیر کہاں تک

مزید دکھائیں

عرفان وحید

عرفان وحید کا تعلق پنجاب کے شہر مالیر کوٹلہ سے ہے۔ آپ پیشے سے انجینیر ہیں۔ عرفان نے اردو اور انگریزی میں قریباً ۲۰ کتابیں ترجمہ کی ہیں۔ آپ انگریزی ماہنامے 'دی کمپینیئن' اور انگریزی پورٹل 'ہیڈلائنز انڈیا' کے ایڈیٹر بھی رہ چکے ہیں۔

ایک تبصرہ

  1. عہدِ حاضر کے ایک جوانسال قلمکار اور ممتاز سخنور عرفان وحید کی ایک غزل کے تناظر میں ان کے شعور فکر و فن کا منظوم تجزیہ
    احمد علی برقی اعظمی
    شاعرِ خوش فکر و خوش گفتار ہیں عرفاں وحید
    اہلِ دانش کے معین و یار ہیں عرفاں وحید
    ان کی غزلوں سے عیاں ہے ندرتِ فکر و نظر
    اک نئے اسلوب کے فنکار ہیں عرفاں وحید
    میرے کہنے پر نہ جائیں آپ خود ہی دیکھ لیں
    سر بسر گنجینۂ افکار ہیں عرفاں وحید
    اس غزل سے ہے نمایاں ان کا ذہنی انتشار
    اک شکست و ریخت سے دوچار ہیں عرفاں وحید
    ہیں وہ میرے حلقۂ احباب میں سب سے الگ
    اپنے طرزِ فکر کے معمار ہیں عرفاں وحید
    ہے زمانے کی رگِ احساس ان کے ہاتھ میں
    فرض کے اپنے تئیں بیدار ہیں عرفاں وحید

متعلقہ

Back to top button
Close