ذاتِ جاوداں – خدائے عرش وہی ، خالقِ جہاں بھی وہی

امجد علی سرور

خدائے عرش وہی ، خالقِ جہاں بھی وہی
ازل ، ابد بھی وہی ، ذاتِ جاوداں بھی وہی

وہ اپنی ذات میں کامل بھی ، بے نشاں بھی وہی
میانِ خلق ہے پنہاں وہی ، عیاں بھی وہی

اسی کے حکم سے جاری ہے روشنی کا سفر
شعاعِ شمس و قمر ، نورِ کہکشاں بھی وہی

چمن میں یونہی نہیں دلکشی و رعنائی
جمالِ گل بھی وہی ، رنگِ گلستاں بھی وہی

وہی ہے منزلِ مقصود ، نقطۂ منزل
وہی شریکِ سفر ، میرِ کارواں بھی وہی

اسی کے فیض سے باغ و بہار ہے دنیا
بہار حسن وہی ، زینتِ جہاں بھی وہی

اسی کی حمد میں مصروف طائرانِ چمن
خیالِ حمد وہی ، لحنِ حمد خواں بھی وہی

اسی کے فیض سے قائم ہے میرا حسنِ شعور
ہے ذہن ساز وہی ، اور نکتہ داں بھی وہی



⋆ امجد علی سرور

امجد علی سرور