شانِ رحیمی – اِک مسلسل حمد خوانی ہے تری

امجد علی سرور

اِک مسلسل حمد خوانی ہے تری
ہر گھڑی رحمت برستی ہے تری

دے جسے ذلت ، جسے بخشے شرف
میرے مولیٰ بس یہ مرضی ہے تری

ہر نفس پر ہے ترا ہی اختیار
شہرِ دل پر حکمرانی ہے تری

کیا زمیں ، کیا آسماں ، عرشِ بریں
ہر جہاں میں بادشاہی ہے تری

جس نے تھامی ہے اسی کو ہے خبر
کس قدر مضبوط رسّی ہے تری

یا رحیم و یا کریم و یا محیط
’’بیکراں شانِ رحیمی ہے تری‘‘

چاند ، سورج ، کہکشاں ، قوسِ قزح
سب میں یارب ضو فشانی ہے تری

ہو گیا ہے گوشۂ دل عطر بیز
جب بھی دل میں یاد آئی ہے تری

بر زباں ہردم ہے تیرا اسمِ پاک
اور دل میں حمد خوانی ہے تری

عقل میں آ جائے تُو ، تو تُو نہیں
کتنی پُر اسرار ہستی ہے تری

سارا عالم ہے نگاہوں کا فریب
ذات برحق اور سچی ہے تری

اُسؐ پہ ، اسؐ کی آل پہ لاکھوں سلام
شمعِ حق جس نے جلائی ہے تری

جس طرف اٹھتی ہے سرورؔ کی نظر
ہر طرف جلوہ نمائی ہے تری



⋆ امجد علی سرور

امجد علی سرور