وصفِ لازوال

امجد علی سرور

زباں پہ شکر ترا ، ذہن میں خیال ترا
ہے قبضہ دل پہ مرے ربِّ ذوالجلال ترا

کہاں کی عقل ،کہاں کی خرد ، کہاں کا ہنر؟
اگر کمال ہے مجھ میں ، تو ہے کمال ترا

یہ رنگ و نور کی دنیا ، فسوں اثر منظر
ہیں بے ثبات سبھی ، وصف لازوال ترا

نجوم و شمس و قمر ، آبشار ، پھول ، دھنک
کسی میں نور ، کسی میں عیاں جمال ترا

نہ ہوتی کیسے ترے دیں کی معترف دنیا
تو بے مثال ، محمدؐ بھی بے مثال ترا

ہمارے فیصلے تقدیم و التواء کے شکار
مگر ہے فیصلہ ہر ایک حسبِ حال ترا

ترے وجود کی وسعت ہر اک جہاں پہ محیط
نگہ میں کیسے بنے نقشِ خدّ و خال ترا

اسی کی حمد و ثنا صبح و شام کر سرورؔ
کرم کاجس کے ہے مقروض بال بال ترا



⋆ امجد علی سرور

امجد علی سرور